உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پولیس کا سسنی خیز دعویٰ- پاکستان کے رابطے میں تھے پی ایف آئی اراکین، فون سے ملے 50 سے زیادہ پاکستانی نمبر

    بھوپال میں آج پی ایف آئی کے اس دفتر پر ایم پی پولیس اے ٹی ایس نے چھاپہ مارا۔

    بھوپال میں آج پی ایف آئی کے اس دفتر پر ایم پی پولیس اے ٹی ایس نے چھاپہ مارا۔

    Action Against PFI: ایم پی اے ٹی ایس نے آج ریاست کے 8 اضلاع میں چھاپہ ماری کرکے 21 مشتبہ ملزمین کو حراست میں لیا ہے۔ بھوپال کے شاہجہاں آباد علاقے میں ایس ڈی پی آئی کے دفتر پر چھاپہ مار کر ایک شخص کو حراست میں لیا گیا۔ 

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Bhopal, India
    • Share this:
      بھوپال: پورے ملک میں پاپولر فرنٹ آف انڈیا (پی ایف آئی) کے اراکین کے خلاف بڑے پیمانے پر کارروائی جاری ہے۔ مدھیہ پردیش پولیس کی جانب سے بھی اسی ضمن میں کارروائی چل رہی ہے۔ پولیس کے مطابق، اب پی ایف آئی کا پاکستان کنکشن ملا ہے۔ پولیس نے دعویٰ کیا ہےکہ گرفتار کئے گئے ملزمین کے موبائل فون میں 50 سے زیادہ پاکستانی نمبر ملے ہیں۔ کئی بار ملزم پاکستان جاچکے ہیں۔ اس لئے پولیس اب ٹیرر فنڈنگ کے ثبوت جمع کر رہی ہے۔

      حال ہی پی ایف آئی کے عبدالکریم (ریاستی صدر)، محمد جاوید (ریاستی خازن)، جمیل شیخ (ریاستی سکریٹری) اور عبدالخالد (جنرل سکریٹری) کو گرفتار کیا گیا تھا۔ سبھی ملزمین سے ایم پی اے ٹی ایس پوچھ گچھ کر رہی ہے۔ عدالت نے ملزمین کو 30 ستمبر تک پولیس ریمانڈ دیا ہے۔ ملزمین کے موبائل فون، لیپ ٹاپ اور دوسری الیکٹرانک ڈیوائس کی پڑتال کی گئی ہے۔ پولیس کا دعویٰ ہے کہ ان کے پاکستان کنکشن نکل کرسامنے آئے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      راجناتھ سنگھ نے کہا- 1971 کی جنگ کے دوران ہی ہوجانا چاہئے تھا پاک مقبوضہ کشمیرکا فیصلہ 

      یہ بھی پڑھیں۔

      راجستھان بحران: سونیا گاندھی کو رپورٹ سونپیں گے آبزرور، گہلوت حامیوں پر گر سکتی ہے گاج

      ایم پی اے ٹی ایس نے آج ریاست کے 8 اضلاع میں چھاپہ ماری کرکے 21 مشتبہ ملزمین کو حراست میں لیا ہے۔ بھوپال کے شاہجہاں آباد علاقے میں ایس ڈی پی آئی کے دفتر پر چھاپہ مار کر ایک شخص کو حراست میں لیا گیا۔ اب کچھ مقامی لوگوں کی طرف سے الزام لگایا جا رہا ہے کہ بھوپال میں پی ایف آئی کے ایس ڈی پی آئی آفس میں جہادی میٹنگ کی جاتی ہے۔ اس دفتر میں ایک ساتھ 20 انجان لوگ میٹنگ کرتے تھے اور دفتر میں انجان لوگوں کی آمدورفت رہتی تھی۔ اس دفتر کو کرایے پرلیا گیا تھا۔ باہری حصے میں سی سی ٹی وی کیمرے بھی لگائے گئے۔ اسے سیاسی پارٹی کا دفتر بتایا جاتا تھا۔

      پولیس کا موبائل سے متعلق بڑا دعویٰ

      پولیس کا دعویٰ ہے کہ گرفتار کئے گئے عبدالخالد کے موبائل فون نے کئی راز اگلے ہیں۔ خالد کے موبائل فون میں 50 سے زیادہ پاکستانی نمبر ملے ہیں۔ یہی نہیں پولیس کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ عبدالخالد کا بھائی محمد محمود بھی 6 بار پاکستان جاچکا ہے۔ جانچ ایجنسی محمد محمود کی تلاش کر رہی ہے۔ ابھی وہ پولیس کی گرفت سے دور ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: