بی ایچ یو: مسلم پروفیسر ڈاکٹر فیروز کی حمایت میں آئے بی جے پی کے سابق ایم پی پریش راول، کہی یہ بڑی بات

Nov 21, 2019 01:15 PM IST | Updated on: Nov 21, 2019 01:56 PM IST
بی ایچ یو: مسلم پروفیسر ڈاکٹر فیروز کی حمایت میں آئے بی جے پی کے سابق ایم پی پریش راول، کہی یہ بڑی بات

بی ایچ یو: فائل فوٹو

وارانسی۔ بنارس ہندو یونیورسیٹی ( بی ایچ یو) کے سنسکرت ودیا دھرم سائنس فیکلٹی کے شعبہ ادب میں اسسٹنٹ پروفیسر کے عہدے پر ڈاکٹر فیروز خان کی تقرری کی مخالفت تھمنے کا نام نہیں لے رہی ہے۔ احتجاجی طلبہ نے جہاں اب عدالت جانے کا اعلان کیا ہے تو وہیں بی ایچ یو کے کچھ طلبہ نے فیروز خان کی حمایت بھی کی ہے۔ اس طرح یونیورسیٹی کے طلبہ میں اس مسئلہ پر اختلاف رائے ہو گیا ہے۔ طلبہ کے درمیان نظریات کی اس لڑائی کے بیچ بالی ووڈ اداکار اور بی جے پی کے سابق رکن پارلیمنٹ پریش راول نے ٹویٹ کر کے فیروز خان کی حمایت کی ہے۔

Loading...

بالی ووڈ اداکار اور بی جے پی کے سابق رکن پارلیمنٹ پریش راول نے ٹویٹ کر کے اس پر اپنا ردعمل ظاہر کیا۔ انہوں نے لکھا ’’ بی ایچ یو میں سنسکرت کے لئے پروفیسر کے عہدے پر ڈاکٹر فیروز خان کی تقرری پر ہو رہی مخالفت سے حیران ہوں۔ زبان کا مذہب سے کیا مطلب ہے؟ المیہ ہے کہ فیروز خان نے اپنی پی ایچ ڈی سنسکرت سے کی ہے۔ بھگوان کے لئے یہ بے تکی باتیں کرنا بند کیجئے‘‘۔ 

ایک دیگر ٹویٹ میں بالی ووڈ اداکار نے لکھا’’ فیروز خان کی تقرری کو لے کر جو دلیل دی جا رہی ہے اسی دلیل کو مان لیا جائے تو گلوکار محمد رفیع کو کوئی بھجن نہیں گانا چاہئے تھا اور نوشاد صاحب کو کوئی بھجن نہیں لکھنا چاہئے تھا‘‘۔

دراصل، 7 نومبر سے طلبہ سنسکرت ودیا دھرم سائنس فیکلٹی کے شعبہ ادب میں اسسٹنٹ پروفیسر کے عہدے پر ڈاکٹر فیروز خان کی تقرری کے خلاف دھرنے پر بیٹھے ہیں۔ طلبہ بدھ کے روز بھی دھرنے پر رہے۔ احتجاجی طلبہ نے اب عدالت جانے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کی لڑائی فیروز خان سے نہیں، بلکہ بی ایچ یو انتظامیہ سے ہے۔  

 

Loading...