உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Accidental Firing of Brahmos : براہموس مس فائر معاملہ میں بڑی کارروائی، ایئرفورس کے تین افسران برخاست، پاکستان میں جاگری تھی میزائل

    Accidental Firing of Brahmos Missile: براہموس مس فائر معاملہ میں بڑی کارروائی، ایئرفورس کے تین افسر برخاست، پاکستان میں جاگری تھی میزائل ۔ فائل فوٹو ۔

    Accidental Firing of Brahmos Missile: براہموس مس فائر معاملہ میں بڑی کارروائی، ایئرفورس کے تین افسر برخاست، پاکستان میں جاگری تھی میزائل ۔ فائل فوٹو ۔

    Accidental Firing of Brahmos Missile : نو مارچ 2022 کو براہموس میزائل مس فائرنگ واقعہ کیلئے تین افسران کو ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے ۔ مرکزی حکومت کے ذریعہ ان کے خدمات کو فوری اثر سے ختم کردیا گیا ہے ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | New Delhi | New Delhi
    • Share this:
      نئی دہلی : نو مارچ 2022 کو براہموس میزائل مس فائرنگ واقعہ کیلئے تین افسران کو ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے ۔ مرکزی حکومت کے ذریعہ ان کے خدمات کو فوری اثر سے ختم کردیا گیا ہے ۔ افسران کو آج 23 اگست کو برخاستگی کے احکام دئے گئے ہیں ۔ ہندوستانی فضائیہ نے یہ جانکاری دی ہے ۔ انڈین ایئرفورس کے اہلکار نے بتایا کہ جن افسران کو برخاست کیا گیا ہے ، ان میں ایک گروپ کیپٹن ، ایک ونگ کمانڈر اور ایک اسکواڈرن لیڈر شامل ہیں ۔ قصوروار افسران معیاری آپریٹنگ طریقہ کار سے بھٹک گئے تھے، جس کی وجہ سے میزائل حادثاتی طور پر فائر ہوگیا تھا ۔

       

      یہ بھی پڑھئے : منی لانڈرنگ کیس میں ستیندر جین کی اہلیہ پونم کو دہلی کورٹ سے ملی ضمانت


      پاکستان میں گری میزائل سے کسی طرح کے کوئی جان و مال کا نقصان نہیں ہوا تھا ۔ بتادیں کہ اس واقعہ کے بعد پاکستان میں کھلبلی مچ گئی تھی ۔ وہیں اس حادثہ کے معاملہ کو راجیہ سبھا میں مرکزی وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے اٹھایا تھا ۔ اس دوران انہوں نے کہا تھا کہ نو مارچ کو غلطی سے ایک میزائل لانچ کی گئی تھی ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: جموں وکشمیر: سابق CM مفتی محمد سعید کی بیٹی کے خلاف عدالت نے جاری کیا وارنٹ


      انہوں نے کہا تھا کہ یہ واقعہ ایک معمول کے معائنہ کے دوران ہوا تھا ۔ ہمیں بعد میں پتہ چلا کہ یہ پاکستان میں جاکر گر گئی تھی ۔ سرکار نے اس واقعہ کو سنجیدگی سے لیا تھا اور بعد میں اعلی سطحی جانچ کا حکم دیا تھا ۔

      انڈین ایئرفورس ہیڈکوارٹر نے کہا کہ ایسے واقعات دوبارہ نہ پیش آئیں اور ڈیوٹی کے دوران سبھی اہلکار کے ذریعہ سبھی معیاری آپریٹنگ طریقہ کار پر عمل کیا جائے ۔ بتادیں کہ میزائل کے گرنے کے بعد پاکستان نے اس واقعہ پر اپنا سخت اعتراض درج کرایا تھا ، لیکن اس سے پہلے ہی ہندوستان کی حکومت نے جانچ کے احکامات دے دئے تھے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: