உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Bihar: کٹیہار میں رام نومی جلوس کے دوران دیکھنے کو ملی فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی مثال، مسجد کی حفاظت کیلئے اکثریتی طبقہ کے لوگوں نے بنائی انسانی زنجیر

    Bihar: رام نومی جلوس کے دوران دیکھنے کو ملی فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی مثال، مسجد کی حفاظت کیلئے اکثریتی طبقہ کے لوگوں نے بنائی انسانی زنجیر ۔ تصویر : ٹویٹر ۔

    Bihar: رام نومی جلوس کے دوران دیکھنے کو ملی فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی مثال، مسجد کی حفاظت کیلئے اکثریتی طبقہ کے لوگوں نے بنائی انسانی زنجیر ۔ تصویر : ٹویٹر ۔

    بہار کے کٹیہار ضلع میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی ایک مثال دیکھنے کو ملی ، جہاں پر ہندو طبقہ کے لوگ ایک مسجد کے سامنے انسانی زنجیر بنائے نظر آئے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : گزشتہ دنوں ملک بھر میں رام نومی منائی گئی اور مذہبی جلوس نکالے گئے ۔ اس دوران ملک کے مختلف حصوں میں تشدد کے واقعات بھی پیش آئے ۔ مدھیہ پردیش، جھارکھنڈ ، راجستھان اور گجرات سمیت کئی ریاستوں میں پرتشدد واقعات رونما ہوئے ۔ تاہم اس درمیان کئی مقامات پر فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی مثالیں بھی دیکھنے کو ملیں ۔

       

      یہ بھی پڑھئے : بیوی کو غیر مرد سے جسمانی تعلقات بنانے کیلئے مجبور کرتا تھا شوہر، ایک دن ہوا ایسا، اڑ گئے ہوش!


      فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی ایک ایسی ہی مثال بہار کے کٹیہار ضلع میں دیکھنے کو ملی ، جہاں پر ہندو طبقہ کے لوگ ایک مسجد کے سامنے انسانی زنجیر بنائے نظر آئے ۔ اویس سلطان خان نام کے ایک ٹویٹر یوزر نے ایک تصویر ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا کہ بہار کے کٹیہار میں رام نومی جلوس کے دوران اکثریتی طبقہ کے لوگوں نے جامع مسجد کے سامنے انسانی زنجیر بناکر اس کی حفاظت کا کام کیا ۔


      یہ بھی پڑھئے : تین بچوں کی ماں سے عشق کر بیٹھا نوجوان، رات میں دونوں کررہے تھے یہ کام، تبھی پہنچ گیا شوہر اور پھر....


      علاوہ ازیں مہاراشٹر کے اورنگ آباد میں بھی کچھ ایسی ہی فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی مثال دیکھنے کو ملی ۔ اورنگ آباد میں رام نومی کا جلوس نکالا جارہا تھا ، مگر جب یہ جلوس ایک مسجد کے سامنے سے گزرا نے تو مذہبی جذبات کا خیال رکھتے ہوئے جلوس میں بج رہے ڈی جے کو بند کردیا گیا ۔


      فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے ان واقعات کی لوگ جم کر تعریف کررہے ہیں اور سوشل میڈیا پر اس کو لے کر ٹویٹ بھی کئے جارہے ہیں اور اس قدم کی سراہنا کی جارہی ہے ۔

      قابل ذکر ہے کہ کورونا کی وجہ سے گزشتہ دو سالوں سے رام نومی جلوس نہیں نکالے جارہے تھے ، مگر اس سال جلوس نکالے گئے ۔ جلوس کے دوران ملک کی مختلف ریاستوں میں پرتشدد واقعات بھی پیش آئے ، جس میں درجنوں افراد زخمی بھی ہوگئے تھے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: