ہائی کورٹ کے فیصلہ کے بعد سیاست تیز ، ہریش راوت نے سچائی کی فتح بتایا ، تو بی جے پی نے کیا یہ دعوی

دہرادون: اتراکھنڈ کے سابق وزیر اعلی ہریش راوت نےریاست میں نافذ کئے گئے صدر راج کو منسوخ کرنے کے نینی تال ہائی کورٹ کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے اسے سچائی کی جیت قرار دیا ہے۔

Apr 21, 2016 06:19 PM IST | Updated on: Apr 21, 2016 06:19 PM IST
ہائی کورٹ کے فیصلہ کے بعد سیاست تیز ، ہریش راوت نے سچائی کی فتح بتایا ، تو بی جے پی نے کیا یہ دعوی

دہرادون: اتراکھنڈ کے سابق وزیر اعلی ہریش راوت نےریاست میں نافذ کئے گئے صدر راج کو منسوخ کرنے کے نینی تال ہائی کورٹ کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے اسے سچائی کی جیت قرار دیا ہے۔ مسٹر راوت نے عدالت کا فیصلہ آنے پر ٹوئٹ کیا کہ آخر سچائی کی فتح ہوئی، ہم عدالت کے فیصلے کا احترام کرتے ہیں۔

ادھر بھارتیہ جنتا پارٹی نے کہا ہے کہ ہائی کورٹ کے فیصلے پر اسے کوئی تعجب نہیں ہے اور پارٹی اس کا مطالعہ کرکے آگے کی حکمت عملی طے کرے گی۔ بی جے پی کے جنرل سکریٹری کیلاش وجے ورگيہ نے کہا کہ ہریش راوت حکومت ریاست میں اقلیت میں آ گئی تھی، اب بھی وہ اقلیت میں ہے اور 29 اپریل کو ہم ثابت کر دیں گے کہ وہ اقلیت میں ہی ہے۔ پارٹی کو کسی بھی طرح کی کوئی فکر نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ پارٹی آگے کی اپنی حکمت عملی طے کر رہی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ عدالت نے ریاست میں صدر راج ہٹانے، 18 مارچ کی صورت حال بحال کرنے اور مسٹر راوت کو 29 اپریل کو اسمبلی میں اعتماد کا تحریک لانے کی ہدایت دی ہے۔ ایک سوال پر بی جے پی کے سکریٹری جنرل نے کہا کہ ہائی کورٹ میں اس معاملے کی سماعت کے دوران پہلے دن سے ہی جج جس طرح کے تبصرے کر رہے تھے، اس کے پیش نظر صدر راج ختم کرنے پر انہیں تعجب نہیں ہوا ہے۔ دریں اثنا پارٹی کے لیڈر سبرامنیم سوامی نے کہا ہے کہ ہائی کورٹ کے فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کیا جائے گا۔ انہوں نے ہائی کورٹ میں مرکزی حکومت کی جانب سے پیروی کرنے گئے اٹارنی جنرل اور سولسٹر جنرل کو ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے۔

Loading...

Loading...