کیجریوال پر منوج تیواری کا جوابی حملہ، کہا : آئی آر ایس افسر کو نہیں معلوم این آر سی کیا ہے ؟

دہلی میں این آر سی کو لے کر وزیر اعلی اروند کیجریوال اور بھارتیہ جنتا پارٹی کے ریاستی صدر منوج تیواری کے مابین زبانی جنگ شروع ہوگئی ہے۔

Sep 25, 2019 08:45 PM IST | Updated on: Sep 25, 2019 10:20 PM IST
کیجریوال پر منوج تیواری کا جوابی حملہ، کہا : آئی آر ایس افسر کو نہیں معلوم این آر سی کیا ہے ؟

کیجریوال پر منوج تیواری کا پلٹ وار ، کہا : آئی آر ایس افسر کو نہیں معلوم این آر سی کیا ہے ؟

دہلی میں قومی شہری رجسٹر ( این آر سی ) کے سلسلے میں د ہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال اور بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ریاستی صدر منوج تیواری کے مابین زبانی جنگ شروع ہوگئی ہے۔ وزیر اعلی کیجریوال نے کرایہ داروں کے لئے پری پیڈ بجلی میٹر کی سہولت شروع کرنے کے بارے میں آگاہ کرنے کے لئے بدھ کے روز منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں ایک سوال کے جواب میں کہا کہ دہلی میں این آر سی کے نفاذ کے بعد منوج تیواری کو بھی یہاں سے روانہ ہونا پڑے گا۔

وزیر اعلی کے اس بیان پر منوج تیواری نے کہا کہ کیجریوال ملک کے لوگوں کو دہلی کا نہیں مانتے ہیں۔ انہوں نے سوال کیا کہ دہلی میں رہنے والی دوسری ریاستوں کے لوگوں کو راجدھانی چھوڑنی چاہئے؟ ۔ انہوں نے کیجریوال کے بیان کو پوروانچل سے مربوط کرتے ہوئے کہا  کہ کیا وزیر اعلی یہ کہنا چاہتے ہیں کہ پورانچل کے لوگ درانداز ہیں؟ ۔ کیا دہلی میں مقیم دیگر ریاستوں کے لوگوں کو وزیر اعلی غیر ملکی سمجھتے ہیں؟ میرے خیال میں اس کا ذہنی توازن ٹھیک نہیں ہے ۔ انڈین ریونیو سروس کے سابق افسر کو یہ بھی معلوم نہیں کہ این آر سی کیا ہے۔

دوسری طرف این آر سی کے سلسلے میں اروند کیجریوال اور منوج تیواری کے درمیان زبانی جنگ میں عام آدمی پارٹی کے لیڈر اور ایم ایل اے سوربھ بھاردواج بھی ٹویٹر کے ذریعہ شامل ہوگئے۔ انہوں نے لکھا  کہ اتر پردیش ، راجستھان ، اڈیشہ اور بہار سے لوگ ملازمت کے لئے دہلی آتے ہیں ، وہ دہلی کی ترقی میں برابر کے شریک ہیں ۔ وہ چور نہیں ہیں۔ اگر دہلی میں این آر سی کا اطلاق ہوتا ہے ، تو ان سب کو دہلی چھوڑنا پڑے گا ۔ آپ ان کے خلاف کیوں ہیں؟

NRC लागू हुई तो मनोज तिवारी को छोड़नी पड़ेगी दिल्‍ली: CM केजरीवाल

این آر سی تنازع میں وزیر اعلی کے سابق ​​قریبی ساتھی کپل مشرا نے اروند کیجریوال پر حملہ کیا اور کہا کہ وہ غلط فہمی کے شکار شخص کی طرح بات کرتے ہیں۔ انہوں نے الزام لگایا کہ اروند کیجریوال اترپردیش اور بہار کے عوام پر اس طرح کے الزامات لگاتے ہیں تاکہ وہ اپنا ووٹ بینک بچاسکیں جو بنگلہ دیشی اور روہنگیا کی شکل میں ہیں۔

Loading...