اتحادی جماعتوں کومنانے میں مصروف ہوئی بی جے پی، ادھو ٹھاکرے سے ملنے ماتوشری جائیں گے امت شاہ

ضمنی الیکشن میں خراب نتائج کے تقریباً ایک ہفتہ کے بعد بی جے پی نے ناراض چل رہے اپنے معاونین کو منانے کی قواعد شروع کردی ہے۔ اسی سلسلے میں بی جے پی کے قومی صدر امت شاہ ممبئی جاکر شیو سینا سربراہ ادھو ٹھاکرے سے ملاقات کریں گے۔

Jun 05, 2018 12:23 PM IST | Updated on: Jun 05, 2018 12:24 PM IST
اتحادی جماعتوں کومنانے میں مصروف ہوئی بی جے پی، ادھو ٹھاکرے سے ملنے ماتوشری جائیں گے امت شاہ

نئی دہلی: ضمنی الیکشن میں خراب نتائج کے تقریباً ایک ہفتہ کے بعد بی جے پی نے ناراض چل رہے اپنے معاونین کو منانے کی قواعد شروع کردی ہے۔ اسی سلسلے میں بی جے پی کے قومی صدر امت شاہ ممبئی جاکر شیو سینا سربراہ ادھو ٹھاکرے سے ملاقات کریں گے۔ شیو سینا سے منسلک ذرائع  نے کہا کہ امت شاہ اور ادھو ٹھاکرے کے درمیان جمعرات شام 6 بجے ماتوشری میں ملاقات ہوگی۔

دراصل  مہاراشٹر کے پال گھر لوک سبھا سیٹ پر ہوئے ضمنی الیکشن میں دونوں معاون پارٹیوں کے درمیان زبردست الزام تراشی کا دور دیکھنے کو ملا۔ پال گھر سیٹ پر بی جے پی نے جیت ضرور حاصل کی، لیکن جیت کے فرق نے ریاست اور مرکز کی برسراقتدار پارٹی کو محتاط کردیا۔ مرکز اور ریاستی سطح پر کئی بی جے پی مخالف پارٹیاں متحد ہوتی ہوئی نظرآرہی ہیں۔ اسی کا نتیجہ رہا کہ بھنڈارا گوندیا سیٹ پر این سی پی اور کانگریس نے مل کر الیکشن لڑتے ہوئے بی جے پی کو یہاں شکست دی۔

Loading...

پال گھر ضمنی الیکشن کے دوران شیو سینا نے ای وی ایم اور وی وی پیغ مشینوں میں خرابی کو لے کر بی جے پی اور الیکشن کمیشن پر بھی نشانہ سادھا۔ پارٹی نے الزام لگایا کہ برسراقتدار پارٹی نے اپنے فائدہ کے لئے ای وی ایم میں چھیڑخانی کی ہے۔

این ڈی اے کے چھوٹی معاون پارٹیوں کو مبینہ طور پر نظرانداز کئے جانے کو لے کر شیو سینا مسلسل ہی بی جے پی پر حملہ آور رہی ہے۔ شیو سینا ممبرپارلیمنٹ سنجے راوت نے تو اپنی پارٹی کو بی جے پی کا سب سے بڑا سیاسی مخالف تک قرار دے دیا۔ انہوں نے کہا کہ ملک وزیراعظم نریندر مودی اور بی جے پی صدر امت شاہ دونوں کو نہیں چاہتا ہے، لیکن کانگریس یا جے ڈی ایس لیڈر ایچ ڈی دیوے گوڑا کو قبول کرسکتا ہے۔

امت شاہ کی ادھو ٹھاکرے سے یہ ملاقات ایسے وقت ہونے جارہی ہے جب بہار میں جوکی ہاٹ اسمبلی سیٹ پر آرجے ڈی امیدوار سے ہار کے بعد جے ڈی یو نے لوک سبھا الیکشن کے لئے سیٹ تقسیم کو لے کر بی جے پی پر دباو بڑھانا شروع کردیا ہے۔

جے ڈی یو ریاست کی 40 لوک سبھا سیٹوں میں سے اپنے لئے 25 سیٹیں مانگ رہی ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ وہ ریاست میں اتحاد کی بڑی پارٹی ہے اور ایسے میں یہاں لوک سبھا الیکشن وزیراعلیٰ نتیش کمار کی قیادت میں لڑی جانی چاہئے۔

وہیں بی جے پی کی طرف سے بھی اس پر فوراً ہی جواب آیا کہ نتیش کمار بہار میں این ڈی اے حکومت کا چہرہ ہیں، لیکن لوک سبھا کا الیکشن وزیراعظم نریندر مودی کی قیادت میں لڑا جائے گا۔

بہار میں جے ڈی یو اور بی جے پی میں لوک سبھا الیکشن سے قبل جاری اس رسہ کشی کے درمیان یہاں جمعرات کو این ڈی اے کی میٹنگ ہونے والی ہے۔ آرجے ڈی کا ساتھ چھوڑ کر بی جے پی سے مل کر نتیش کمار کے حکومت بنانے کے بعد این ڈی اے کی یہ پہلی میٹنگ ہوگی۔

 

 

Loading...