உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بامبے ہائی کورٹ کا بڑا فیصلہ، ٹھاکرے گروپ کو ملی شیوا جی پارک میں ریلی کرنے کی اجازت

    ٹھاکرے گروپ کو ملی شیوا جی پارک میں ریلی کرنے کی اجازت

    ٹھاکرے گروپ کو ملی شیوا جی پارک میں ریلی کرنے کی اجازت

    Eknath Shinde Vs Uddhav Thackeray: بامبے ہائی کورٹ نے ممبئی کا سب سے متنازعہ مسئلہ حل کردیا ہے۔ ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ ٹھاکرے گروپ شیواجی پارک میں دشہرہ ریلی کا انعقاد کر سکتا ہے۔ عدالت کے اس حکم سے شندے گروپ کو زبردست جھٹکا لگا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ شیوا جی پارک کا موضوع دونوں گروپوں کے لئے وقار کا سوال تھا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Mumbai, India
    • Share this:
      ممبئی: بامبے ہائی کورٹ نے ممبئی کا سب سے متنازعہ مسئلہ حل کردیا ہے۔ ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ ٹھاکرے گروپ شیواجی پارک میں دشہرہ ریلی کا انعقاد کر سکتا ہے۔ عدالت کے اس حکم سے شندے گروپ کو زبردست جھٹکا لگا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ شیوا جی پارک کا موضوع دونوں گروپوں کے لئے وقار کا سوال تھا۔ بامبے ہائی کورٹ نے ادھو ٹھاکرے گروپ کو راحت دیتے ہوئے شیوا جی پارک میں ریلی کرنے کی اجازت دے کر بڑا فیصلہ سنایا ہے۔

      واضح رہے کہ شیو سینا کے دونوں گروپ (ادھو اور شندے گروپ)  دونوں نے بی ایم سی سے شیوا جی پارک میں ریلی کرنے کی اجازت مانگی تھی، لیکن بی ایم سی نےدونوں گروپ کو ریلی کی اجازت نہیں دی تھی۔ بی ایم سی نے یہ ترک دیتے ہوئے ریلی کی اجازت نہیں دی تھی کہ اس سے لا اینڈ آرڈر پر اثر پڑ سکتا ہے۔ اس کے بعد ٹھاکرے گروپ نے بی ایم سی کے فیصلے کے خلاف ہائی کورٹ چلا گیا تھا۔

      واضح رہے کہ جب ادھو ٹھاکرے گروپ ہائی کورٹ گیا تو شندے گروپ نے بھی عرضی لگائی۔ شندے گروپ نے ہائی کورٹ میں عرضی لگاکر کہا کہ ٹھاکرے گروپ کو شیواجی پارک میں دشہرہ ریلی کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔ عرضی میں کہا گیا کہ اگر ٹھاکرے گروپ کو شیواجی پارک میں دشہرہ ریلی کی اجازت ملتی ہے تو اس سے ‘اصل شیوسینا کون‘ ہے، پر اثر پڑسکتا ہے۔ شندے گروپ کے رکن اسمبلی سدا سرونکر کا کہنا ہے کہ اگر اس مسئلے پر ہائی کورٹ کوئی فیصلہ دیتا ہے تو شیو سینا پر حقداری سے متعلق چل رہے تنازعہ میں رکاوٹ پیدا ہوسکتی ہے۔ ہائی کورٹ نے شندے گروپ کی عرضی کو قبول کرتے ہوئے معاملے کی سماعت کی تھی۔

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: