ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

بڑی خبر: بکسر میں پرشانت کشور کے گھر پر چلا بلڈوزر، چہاردیواری توڑی

جنتا دل یونائیٹیڈ (جے ڈی یو) کے سابق لیڈر اور انتخابی پالیسی ساز کے طور پر مشہور پرشانت کشور (Prashant Kishore) کو جمعہ کو بڑا جھٹکا لگا۔ انتظامیہ نے ان کے بکسر واقع گھر کی چہار دیواری کو توڑ دیا ہے۔

  • Share this:
بڑی خبر: بکسر میں پرشانت کشور کے گھر پر چلا بلڈوزر، چہاردیواری توڑی
بکسر میں پرشانت کشور کے گھر پر چلا بلڈوزر، چہاردیواری توڑی

پٹنہ: جنتا دل یونائیٹیڈ (جے ڈی یو) کے سابق لیڈر اور انتخابی پالیسی ساز کے طور پر مشہور پرشانت کشور (Prashant Kishore) کو جمعہ کو بڑا جھٹکا لگا۔ انتظامیہ نے ان کے بکسر واقع گھر کی چہار دیواری کو توڑ دیا ہے۔ بتایا جارہا ہے کہ انتظامیہ کی یہ کارروائی ایکوائرکے سبب کی ہے۔ اطلاعات کے مطابق، چہار دیواری کے ساتھ ہی گھر کے برہم استھان کو بھی پوری طرح سے توڑ دیا گیا ہے۔ فی الحال پرشانت کشور (Prashant Kishore) کی طرف سے اس سے متعلق کوئی ردعمل نہیں آیا ہے۔


اطلاعات کے مطابق، این ایچ 84 کو فورلین کئے جانےکا کام کیا جا رہا ہے۔ اس کے سبب زمین ایکوائرکی گئی ہے۔ اسی کے تحت پرشانت کشور کے گھر کی چہار دیواری اور برہم استھان کو منہدم کیا گیا ہے۔


آس پاس کے لوگوں کی بھیڑ لگی


جیسے ہی انتظامی افسران کے ساتھ پرشانت کشور کے گھر کے باہر پہنچے تو لوگوں کی بھیڑ وہاں پر لگ گئی۔ انتظامیہ نے تیزی دکھاتے ہوئے کام کیا اور صرف 10 سے 15 منٹ ہی پرشانت کشور کے گھر کی چہار دیواری اور گیٹ کو توڑ دیا۔ اس دوران انتظامیہ کے اس کام کی کسی نے مخالفت نہیں کی۔ حالانکہ لوگوں کے درمیان یہ بحث ضرور رہی کہ آخر پرشانت کشور کے گھر کی دیوار کو کیوں توڑا گیا، لیکن بعد میں انتظامی افسران نے ایکوائر کی بات کو واضح کردیا۔

خاندانی مکان ہے

پرشانت کشور کا یہ خاندانی مکان ہے۔ اس کی تعمیر ان کے والد شری کانت پانڈے نے کروایا تھا، حالانکہ پرشانت کشور اب یہاں پر نہیں رہتے ہیں۔ انتظامیہ کے مطابق، این ایچ -84 کے فور لین کئے جانے کے دوران اس زمین کو ایکوائر کرلیا گیا تھا، لیکن پرشانت کشور نے اس کا معاوضہ ابھی تک نہیں لیا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ کبھی وزیر اعلیٰ نتیش کمار کے بے حد قریبی رہے پرشانت کشور کو ان کی پالیسی کے کردار کے لئے جانا جاتا ہے۔ وہ جے ڈی یو کے قومی نائب صدر بھی رہ چکے ہیں۔ بہار میں انہیں کابینی وزیر کا درجہ بھی دیا گیا تھا، لیکن این آرسی کے موضوع پر ان کے اور وزیر اعلیٰ کے درمیان اختلاف ہوگئے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Feb 12, 2021 09:27 PM IST