உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کیپٹن امریندرسنگھ کا اپنی پارٹی بنانے کا باضابطہ اعلان، بی جے پی سے ملانے کا خاکہ ہو رہا ہے تیار!

    کیپٹن امریندرسنگھ کا اپنی پارٹی بنانے کا باضابطہ اعلان، بی جے پی سے ملائیں ہاتھ!

    کیپٹن امریندرسنگھ کا اپنی پارٹی بنانے کا باضابطہ اعلان، بی جے پی سے ملائیں ہاتھ!

    پنجاب (Punjab) کے سابق وزیر اعلیٰ کیپٹن امریندر سنگھ (Captain Amarinder Singh) نے کہا ہے کہ وہ اپنی پارٹی بنانے کے عمل میں ہیں اور اس کا نام جلد ہی سامنے آئے گا۔ وہ اپنی پارٹی بنانے کے عمل میں ہیں اور ان کے وکلاء الیکشن کمیشن کے ساتھ بات چیت کر رہے ہیں۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      چنڈی گڑھ: پنجاب (Punjab) کے سابق وزیر اعلیٰ کیپٹن امریندر سنگھ (Captain Amarinder Singh) نے کہا ہے کہ وہ اپنی پارٹی بنانے کے عمل میں ہیں اور اس کا نام جلد ہی سامنے آئے گا۔ امریندر سنگھ نے بدھ کو ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ وہ اپنی پارٹی بنانے کے عمل میں ہیں اور ان کے وکلاء الیکشن کمیشن کے ساتھ بات چیت کر رہے ہیں۔ پارٹی کے نام اور نشان کا فیصلہ کیا جا رہا ہے، جس کا اعلان بعد میں کیا جائے گا۔ کیپٹن امریندر نے پاکستانی خاتون صحافی عروسہ عالم کے ساتھ اپنے تعلقات کے بارے میں دو ٹوک بات کی اور یہ بھی کہا کہ اگر ویزا پابندی ہٹا دی جاتی ہے تو وہ انہیں دوبارہ مدعو کریں گے۔

      سابق وزیر اعلیٰ کیپٹن امریندر سنگھ نے عروسہ عالم سے متعلق کہا کہ وہ ایک ذہین خاتون ہیں۔ پنجاب کے سرحدی علاقوں میں بارڈر سیکورٹی فورس (بی ایس ایف) کی تعیناتی پر انہوں نے کہا کہ یہ فورس پنجاب میں کسی بھی چیز کو اپنے کنٹرول میں نہیں لے گی۔ پنجاب حکومت ریاست کا کام دیکھے گی اور بی ایس ایف کو جہاں بھی ضرورت ہوگی پولیس کی مدد کرے گی۔ یہ پہلا موقع ہے جب امریندر سنگھ نے وزیر اعلیٰ عہدے سے مستعفی ہونے کے بعد میڈیا سے بات چیت کی ہے۔ وہ آئندہ روز یعنی جمعرات کو وزیر داخلہ امت شاہ سے ایک بار پھر ملاقات کریں گے۔
      کیپٹن امریندر سنگھ نے حکومت کے ان وزراء پر سخت نکتہ چینی کی، جنہوں نے کہا ہے کہ جب وہ ریاست کے وزیر اعلیٰ تھے تو ان کے ساڑھے چار سال کے دور میں کوئی کام نہیں ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب میں عوام سے کئے گئے وعدوں میں سے ساڑھے چار سال میں 92 فیصد کام مکمل ہو چکا ہے اور کچھ پر کام جاری ہے۔
      انہوں نے کہا کہ دہلی میں میٹنگ میں ملکارجن کھڑگے اور کانگریس صدر سونیا گاندھی نے مجھ سے میری حکومت کے بارے میں پوچھا تھا کہ آخر مسئلہ کیا ہے؟ تو اس وقت میں نے ان سے کہا کہ کوئی مسئلہ نہیں ہے۔ قابل غور ہے کہ امریندر سنگھ فی الحال مخالفین کے بجائے اپنی ہی پارٹی کے لیڈروں کے نشانے پر ہیں اور ریاستی کانگریس صدر نوجوت سنگھ سدھو کے ساتھ ان کی لڑائی سیاسی بحث کا موضوع بن گئی ہے۔ انہوں نے کئی بار یہ بھی کہا کہ جو آدمی 15 سال سے بھارتیہ جنتا پارٹی میں رہا ہو وہ کانگریس کا بھلا کیسے کر سکتا ہے۔
      امریندر سنگھ اور ان کی دوست پاکستانی صحافی عروسہ عالم کانگریس لیڈروں اور امریندر سنگھ کے درمیان جھگڑے سے سخت مایوس ہیں اور یہاں تک کہہ چکی ہیں کہ انہیں اس ساری پیش رفت سے بہت تکلیف ہوئی ہے اور وہ کبھی ہندوستان واپس نہیں آئیں گی۔ انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ کچھ لیڈروں نے اپنا معیار بہت نیچے گرا لیا ہے۔ عروسہ عالم نے پنجاب کے نائب وزیر اعلیٰ سکھجندر سنگھ رندھاوا، پنجاب کانگریس کے صدر نوجوت سنگھ سدھو اور ان کی اہلیہ نوجوت کور سدھو کو لکڑبگھا قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ کیپٹن امریندر کو نیچا دکھانے کے لئے ان کا نام (عروسہ) درمیان میں گھسیٹا جا رہا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: