صحافی جے ڈے قتل معاملہ میں عدالت نے چھوٹا راجن کو مجرم قرار دیا

ممبئی۔ تفتیشی صحافی جیوتیرمے ڈے (جے ڈے) قتل کیس میں ممبئی کی خصوصی عدالت نے مافیا سرغنہ چھوٹا راجن کو قصوروار قرار دیا ہے۔

May 02, 2018 12:36 PM IST | Updated on: May 02, 2018 01:30 PM IST
صحافی جے ڈے قتل معاملہ میں عدالت نے چھوٹا راجن کو مجرم قرار دیا

جے ڈے کے لئے انصاف کی مانگ کر رہے مظاہرین کی فائل فوٹو: فوٹو، اے ایف پی۔

ممبئی۔ تفتیشی صحافی جیوتیرمے ڈے (جے ڈے) قتل کیس میں ممبئی کی خصوصی عدالت کا فیصلہ آ گیا ہے۔ تقریبا سات سال پرانے اس کیس میں عدالت نے مافیا سرغنہ چھوٹا راجن کو قصوروار قرار دیا ہے۔ جبکہ دوسرے ملزم جگنا وورا اور جوسف پالسن کو بری کر دیا گیا ہے۔

اس معاملہ کی ابتدائی تحقیقات سب سے پہلے ممبئی پولیس نے کی تھی، پھر اسے سی بی آئی کو سونپ دیا گیا۔ معاملہ کی جانچ پڑتال کے بعد سی بی آئی نے مکوکا عدالت میں چارج شیٹ دائر کی تھی۔ مکوکا خصوصیعدالت کے جج سمیر ایس اڈکر نے آج اس معاملے پر فیصلہ سنایا۔

Loading...

سال 2015 میں انڈونیشیا کے بالی میں گرفتاری کے بعد جے ڈے قتل کیس پہلا ایسا معاملہ ہے، جس میں چھوٹا راجن کے خلاف مقدمہ چلا۔  مقدمے کی سماعت کے دوران چھوٹا راجن کو دہلی کے تہاڑ جیل میں رکھا گیا تھا۔  عدالت میں اس کی حاضری ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ ہوتی تھی۔ اس مقدمے کی سماعت 3 اپریل کو خصوصی عدالت میں پوری ہو گئی تھی۔ اس کے بعد جج سمیر اڈکر نے 2 مئی کو فیصلہ کی تاریخ مقرر کی تھی۔

اس سے قبل جے ڈے کی بہن لینا نے اپنے بھائی کے قتل میں ملوث ہونے والے تمام مجرموں کے خلاف پھانسی کی سزا دینے کا مطالبہ کیا تھا۔ لینا نے کہا تھا کہ ان کے بھائی کی روح کو تبھی سکون ملے گا جب ان کے قاتلوں کو پھانسی کی سزا ہو گی۔

کیا ہے جے ڈے قتل کیس؟

جیوترمے ڈے ممبئی میں ایک انگریزی اخبار کے لئے تفتیشی اور کرائم رپورٹنگ کرتے تھے۔ 11 جون، 2011 کی دوپہر ممبئی کے پوئی علاقے میں انڈرورلڈ کے شوٹروں نے ان کا قتل کر دیا تھا۔ جے ڈے کے سینے پر 5 گولیاں ماری گئی تھیں۔ واقعہ کے وقت وہ موٹر سائیکل سے کہیں جا رہے تھے۔ انہیں سنگین حالت میں اسپتال پہنچایا گیا جہاں ڈاکٹروں نے انہیں مردہ قرار دے دیا۔ ممبئی پولیس نے اس معاملے کی تحقیقات شروع کردی اور دوشوٹروں کو گرفتار کرلیا۔

چھوٹا راجن کے اشارے پر ہوا قتل

معاملہ میں چھوٹا راجن کا نام بھی سامنے آیا تھا۔ پراسکیوٹر کے مطابق، چھوٹا راجن کو یہ لگتا تھا کہ جے ڈے اس کے خلاف لکھتے تھے، جبکہ مطلوب ترین انڈرورلڈ ڈان داؤد ابراہیم کی تعریف کرتے تھے۔ راجن کو یہ بھی شک تھا کہ اس کا قتل کرانے کے لئے  جے ڈے ڈی کمپنی کی مدد کر رہے ہیں۔ کیونکہ جے ڈے کو لندن اور فلپائن میں ملنے کے لئے بلایا گیا تھا۔ صرف اسی وجہ سے چھوٹا راجن نے جے ڈے کا قتل کروایا تھا۔

 

Loading...