உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Birbhum Violence Case: سی بی آئی نے شروع کی جانچ، جائے حادثہ پر بھیجی ماہرین کی ٹیم، جانیں پوری تفصیل

     سی بی آئی نے شروع کی جانچ، جائے حادثہ پر بھیجی ماہرین کی ٹیم

    سی بی آئی نے شروع کی جانچ، جائے حادثہ پر بھیجی ماہرین کی ٹیم

    West Bengal, Birbhum violence: عدالت نے بدھ کو معاملے کا ازخود نوٹس لیا تھا۔ عدالت نے کہا حقائق اور حالات کا مطالبہ ہے کہ انصاف کے مفاد اور معاشرے میں اعتماد پیدا کرنے کے لئے جانچ سی بی آئی کو سونپی جائے۔ عدالت نے اپنے حکم میں کہا، ’ہم سی بی آئی کو حکم دیتے ہیں کہ وہ معاملے کی جانچ فوری طور پر اپنے ہاتھ میں لے اور سماعت کی اگلی تاریخ پر پیش رفت کی رپورٹ ہمارے سامنے پیش کرے‘۔ اس معاملے پر اب 7 اپریل کو سماعت ہوگی۔

    • Share this:
      نئی دہلی: مغربی بنگال کے بیر بھوم (Birbhum violence) ضلع کے بوگٹوئی گاوں میں پیر کی رات 10 افراد کو زندہ جلائے جانے کے معاملے کی جانچ کی ذمہ داری مرکزی جانچ ایجنسی سی بی آئی (CBI) کو سونپ دی گئی ہے۔ سی بی آئی نے اس حادثہ میں مختلف مجرمانہ دفعات کے تحت مقدمہ درج کرکے جانچ شروع کردی ہے۔ جانچ ایجنسی ہر اعتبار سے حادثہ کی تہہ تک جانے کی کوشش کر رہی ہے۔ ایجنسی نے سی ایف ایس ایل ماہرین اور افسران کی ایک ٹیم کو تشدد متاثرہ علاقے میں بھیجا ہے۔

      اطلاعات کے مطابق، سی بی آئی اس معاملے میں پولیس کے ذریعہ گرفتار کئے گئے لوگوں سے بھی پوچھ گچھ کرے گی۔ ذرائع کے مطابق، کلکتہ ہائی کورٹ سے سی بی آئی جانچ کے حکم ملنے کے بعد پولیس کے ذریعہ درج ایف آئی آر کی بنیاد پر مقدمہ درج کیا ہے۔ س کے ساتھ ہی جانچ ایجنسی نے جائے حادثہ سے ثبوت جمع کرنے کے لئے ماہرین کی ایک ٹیم بھیجی ہے۔

      واضح رہے کہ جمعرات کو وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے جائے حادثہ کا دورہ کیا تھا اور متاثرین کے اہل خانہ سے ملاقات کی تھی۔ اپنے دورے پر وزیر اعلیٰ نے پولیس افسران کو حادثہ میں کارروائی کرنے کے سخت احکامات دیئے تھے۔ وزیر اعلیٰ کے دورے کے بعد پولیس نے ٹی ایم سی لیڈر انوار الحسین سمیت کل 20 افرادکو گرفتار کیا تھا۔ انوارالحسن پر الزام تھا کہ اس نے اس بھیڑی کی قیادت کی تھی، جس نے گھروں میں آگ لگائی۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      او آئی سی میں Kashmir پربیان دے کرکیا غلطی کرگئے تھے چینی وزیرخارجہ؟

      ان سبھی لوگوں کی گرفتاری کے بعد پولیس نے انہیں کورٹ کے سامنے بھیجا تھا، جہاں سے 10 افراد کو پولیس حراست میں پوچھ گچھ کے لئے بھیج دیا گیا تھا۔ سی بی آئی کے ایک افسر کے مطابق، اب اس معاملے میں گرفتار سبھی ملزمین سے سی بی آئی کی ٹیم بھی ضرورت پڑنے پر پوچھ گچھ کرے گی۔

      آپ کو بتادیں کہ عدالت نے بدھ کو معاملے کا ازخود نوٹس لیا تھا۔ عدالت نے کہا حقائق اور حالات کا مطالبہ ہے کہ انصاف کے مفاد اور معاشرے میں اعتماد پیدا کرنے کے لئے جانچ سی بی آئی کو سونپی جائے۔ عدالت نے اپنے حکم میں کہا، ’ہم سی بی آئی کو حکم دیتے ہیں کہ وہ معاملے کی جانچ فوری طور پر اپنے ہاتھ میں لے اور سماعت کی اگلی تاریخ پر پیش رفت کی رپورٹ ہمارے سامنے پیش کرے‘۔ اس معاملے پر اب 7 اپریل کو سماعت ہوگی۔ چیف جج پرکاش شریواستو کی صدارت والی بینچ نے اس حادثہ کے ’ملک گیر اثر‘ کو دیکھتے ہوئے مغربی بنگال حکومت سے مرکزی ایجنسی کو مکمل تعاون دینے کو کہا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: