ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

سی ڈی ایس بپن راوت نے متنبہ کیا، فوج کو ’ناپاک حرکت‘ کا جواب دینے کے لئے ہر وقت تیار رہنا چاہئے

چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل بپن راوت (Bipin Rawat) نے ایک بار پھر ہندوستانی فوج (Indian Army) کو متنبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھلے ہی دونوں ممالک کے درمیان سرحد (Border) پر کشیدگی کرنے کی کوششیں جاری ہیں، اس کے باوجود ہندوستان کو ایل اے سی کی صورتحال کو ہلکے میں کبھی نہیں لینا چاہئے۔

  • Share this:
سی ڈی ایس بپن راوت نے متنبہ کیا، فوج کو ’ناپاک حرکت‘ کا جواب دینے کے لئے ہر وقت تیار رہنا چاہئے
سی ڈی ایس بپن راوت نے متنبہ کیا، فوج کو عداوت کا جواب دینے کے لئے ہر وقت تیار رہنا چاہئے

نئی دہلی: مشرقی لداخ (Eastern Ladakh) میں گزشتہ کئی ماہ سے چلی آرہی کشیدگی کو دیکھتے ہوئے چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل بپن راوت (Bipin Rawat) نے ایک بار پھر ہندوستانی فوج (Indian Army) کو متنبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھلے ہی دونوں ممالک کے درمیان سرحد (Border) پر کشیدگی کرنے کی کوششیں جاری ہیں، اس کے باوجود ہندوستان کو ایل اے سی کی صورتحال کو ہلکے میں کبھی نہیں لینا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں پڑوسی ملک کے کسی بھی غلط حرکت کا جواب دینے کے لئے تیار رہنا چاہئے۔


ایک پروگرام میں بولتے ہوئے چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل بپن راوت نے کہا، ’گزشتہ کچھ وقت سے جس طرح سے ہندوستانی فوج نے سرحد پر بدعنوانی کرنے والوں کو سبق سکھایا ہے، اسی طرح کا ردعمل ظاہر کرنے کی ضرورت ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میں یہی کہوں گا کہ اپنی نگرانی بڑھائیے اور ہر وقت تیار رہئے۔ انہوں نے کہا کہ سرحد پر کسی بھی چیز کو ہلکے میں لینے کی غلطی مت کیجئے۔ ہمیں ہر وقت دشمن کی حرکت پر نظر رکھنی ہے اور کسی بھی طرح کی غلط حرکت پر اس کا جواب دینا ہے۔ ہم نے ماضی میں جس طرح سے دشمنوں کو جواب دیا ہے، مستقبل میں بھی ایسا ہی کرنا ہے۔


چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل بپن راوت نے کہا، ’گزشتہ کچھ وقت سے جس طرح سے ہندوستانی فوج نے سرحد پر بدعنوانی کرنے والوں کو سبق سکھایا ہے، اسی طرح کا ردعمل ظاہر کرنے کی ضرورت ہے۔
چیف آف ڈیفنس اسٹاف جنرل بپن راوت نے کہا، ’گزشتہ کچھ وقت سے جس طرح سے ہندوستانی فوج نے سرحد پر بدعنوانی کرنے والوں کو سبق سکھایا ہے، اسی طرح کا ردعمل ظاہر کرنے کی ضرورت ہے۔


چین کے ساتھ گزشتہ کئی ماہ سے چلے آرہے تنازعہ پر بولتے ہوئے جنرل بپن راوت نے کہا، دونوں ممالک سیاسی، سفارتی اور فوجی سطح پر مسلسل بات کر رہے ہیں۔ اس معاملے کو حل کرنے میں ابھی وقت لگے گا۔ ہم سرحد پر ڈٹے رہنے کے اہل ہیں۔ کیونکہ اگر ہم نے ایسا نہیں کیا تو دشمن کے حوصلے مزید بڑھ جائیں گے۔ دونوں ممالک کو اس بارے میں پتہ ہے کہ اسٹیٹس کو کی بحالی علاقے میں امن وامان کے سب سے اعلیٰ مفاد میں ہے، جس کے لئے ہمارا ملک پابند عہد ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 03, 2021 08:57 AM IST