ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

اجین : زہریلی شراب پینے سے 14 لوگوں کی موت ، تھانہ انچارج سمیت چار پولیس اہلکار معطل

مدھیہ پردیش کے اجین میں زہریلی شراب پینے سے 14 افراد کی موت سے ہنگامہ مچ گیا ہے ۔ وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان نے اس معاملہ کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے جمعرات کو اس واقعہ کی ایس آئی ٹی کے ذریعہ جانچ کی ہدایت دی ہے ۔  

  • Share this:
اجین : زہریلی شراب پینے سے 14 لوگوں کی موت ، تھانہ انچارج سمیت چار پولیس اہلکار معطل
اجین : زہریلی شراب پینے سے 11 گیارہ لوگوں کی موت

مدھیہ پردیش کے اجین سے ایک دل دہلانے والی خبر سامنے آئی ہے ۔ زہریلی شراب پینے سے 14 افراد کی موت سے ہنگامہ مچ گیا ہے ۔ وہیں اجین کے ایس پی نے تصدیق کی ہے کہ سبھی مہلوکین کے بدن میں زہریلی جنجر پائی گئی ہے ۔ اس واقعہ کے بعد شہر کے کھارا کنواں تھانہ انچارج سمیت چار پولیس اہلکاروں کو معطل کردیا گیا ہے ۔ علاوہ ازیں ضلع بھر میں غیر قانونی شراب کے خلاف کارروائی میں اب تک 10 ملزمین کو گرفتار کیا جاچکا ہے ۔


مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان نے اس معاملہ کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے جمعرات کو اس واقعہ کی ایس آئی ٹی سے جانچ کی ہدایت دی ۔ چوہان نے کہا کہ نہ صرف اجین بلکہ پوری ریاست میں اس طرح کے معاملات پر نظر رکھی جائے ، جہاں کہیں بھی ایسے ملاوٹی اور زہریلے مادے کو بیچے جانے کا شک ہو ، سخت سے سخت کارروائی کی جائے ۔


وہیں دوسری طرف ریاست کے سابق وزیر اعلی اور کانگریس کے ریاستی صدر کملناتھ نے اس واقعہ کو لے کر ریاست کی بی جے پی حکومت پر نشانہ سادھا ہے ۔ کملناتھ نے کہا کہ ریاست کے کئی اضلاع سے شراب مافیا اور غیر قانونی شراب کے کاروبار کی مسلسل شکایتیں مل رہی ہیں ۔ ہماری سرکار جاتے ہی یہ مافیا واپس بے خوف ہوکر سرگرم ہوگئے ہیں ۔ ہماری حکومت نے انہیں کچلا تھا اور بی جے پی حکومت ان کو تحفظ فراہم کررہی ہے ۔


پولیس نے کہی یہ بات

ادھر اجین ضلع کے ایڈیشنل سپرنٹنڈنٹ آف پولیس نے بتایا کہ بدھ سے جمعرات تک اجین کے تین تھانہ علاقوں کھارا کنواں تھانہ ، جیوجی گنج تھانہ اور مہاکال تھانہ میں کسی طرح کے زہریلے مادے کے پینے سے 14 لوگوں کی موت ہوگئی ہے ۔ یہ سبھی یا تو بھکاری ہیں یا غریب مزدور ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اب یہ مادہ کیا ہے اور کس کے ذریعہ فروخت کیا گیا ، اس کی جانچ کی جارہی ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Oct 15, 2020 10:01 PM IST