ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

مدھیہ پردیش: لو جہاد پر قانون بنانے کو لیکر ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ کا انعقاد، 10سال کی سزا کی تجویز

اتر پردیش حکومت کے ذریعہ لو جہاد پر جب قانون بنانے کی بات کہی جا رہی تھی تبھی مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ نے واضح کردیا تھا کہ مدھیہ پردیش میں لو کے نام پر کوئی جہاد نہیں ہونے دیا جائے گا۔ اتر پردیش نے لو جہاد پر ٖآرڈیننس پاس کردیا ہے وہیں مدھیہ پردیش حکومت کے ذریعہ لو جہاد کے قانون کو لیکر ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ کا انعقاد کیا گیا۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش: لو جہاد پر قانون بنانے کو لیکر ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ کا انعقاد، 10سال کی سزا کی تجویز
لو جہاد پر قانون بنانے کو لیکر ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ کا انعقاد، 10سال کی سزا کی تجویز

بھوپال۔ لو جہاد کو لیکر مدھیہ پردیش حکومت کا موقف سخت سے سخت ہوتا جارہا ہے۔ ایم پی حکومت کے ذریعہ لو جہاد کرنے والوں کے خلاف جہاں پہلے پانچ سال کی سزا کی بات کہی جا رہی تھی وہیں آج وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا کی سربراہی میں منعقدہ ڈرافٹ کمیٹی نے لو جہاد کرنے والوں کے خلاف دس سال کی سزا کی تجویز پیش کی ہے۔


اتر پردیش حکومت کے ذریعہ لو جہاد پر جب قانون بنانے کی بات کہی جا رہی تھی تبھی مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ نے واضح کردیا تھا کہ مدھیہ پردیش میں لو کے نام پر کوئی جہاد نہیں ہونے دیا جائے گا۔ اتر پردیش نے لو جہاد پر ٖآرڈیننس پاس کردیا ہے وہیں مدھیہ پردیش حکومت کے ذریعہ لو جہاد کے قانون کو لیکر ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ کا انعقاد کیا گیا۔ بھوپال منترالیہ میں وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا کی سربراہی میں ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ منعقدکی گئی۔ میٹنگ میں لو جہاد کو انجام دینے والوں کو سخت سٓزا دینے  کی جہاں بات کہی گئی وہیں کمیٹی نے سزا کو پانچ سال سے دس سال کرنے کی بھی تجویز پیش کی۔


لو جہاد کو لیکر ڈرافٹ کمیٹی نے مسودہ تیار کر لیا ہے۔ مسودہ کو سی ایم شیوراج سنگھ کے سامنے پیش کیا جائے گا ۔ وزیر اعلی شیوراج سنگھ کی منظوری کے بعد  ڈرافٹ کو قانون بنانے کو لیکر اسمبلی سیشن میں پیش کیا جائے گا۔ مدھیہ پردیش اسمبلی کا سرمائی اجلاس 28 دسمبر سے شروع ہوگا۔


مدھیہ پردیش کے وزیر داخلہ ڈاکٹر نروتم مشرا کہتے ہیں کہ لو جہاد کی مدھیہ پردیش میں کوئی جگہ نہیں ہے۔ ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ میں اس پر سخت سزا کی تجویز پیش کی گئی ہے۔ جو لوگ بھی لالچ دیکر تبدیلی مذہب کا کام کرتے ہیں قانون کے تحت ان کے خلاف کاروائی کی جائے گی۔ ایسے لوگوں کے خلاف غیر ضمانتی دفعات کے تحت کاروائی ہوگی۔ آج ڈرافٹ کمیٹی کی میٹنگ میں سبھی پہلوؤں پر غور کیاگیا ہے۔ دسمبر میں ہونے والے اسمبلی سیشن میں اسے پیش کیا جائے گا اور اسمبلی میں پاس ہونے کے بعد یہ قانونی شکل لے لے گا۔

وہیں مدھیہ پردیش کانگریس میڈیا سیل کے نائب صدر بھوپیندر گپتا کہتے ہیں کہ حکومت اپنی ناکامی کو چھپانے اور عوامی مسائل سے عوام کی توجہ ہٹانے کے لئے یہ سب کر رہی ہے۔ جہاں تک تبدیلی مدہب اور لالچ دیکر شادی کرنے کا سوال ہے اس پر قانون 1968 میں بن چکا ہے۔ سرکار کے پاکھنڈ کو عوام بہتر ڈھنگ سے جاتنے ہیں۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Nov 25, 2020 03:10 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading