உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اسلاف کو فراموش کرنے والی قوم کبھی نہیں کر سکتی ہے ترقی

     بھوپال کے مشہور سیفیہ کالج کی بنیاد ملا سجاد نے رکھی مگر اسے ترقی کی منزل ملا سجاد نے عطا کی۔ کہنے کو یہ کالج آج بھی قائم ہے لیکن موجودہ سو سائٹی کے ذمہ داران کی عدم توجہی اور نا اہل کے سبب نہ صرف اس عظیم ادارے کا دائرہ سمٹتا جا رہا ہے بلکہ خستہ حالی کا بھی شکار ہے۔

    بھوپال کے مشہور سیفیہ کالج کی بنیاد ملا سجاد نے رکھی مگر اسے ترقی کی منزل ملا سجاد نے عطا کی۔ کہنے کو یہ کالج آج بھی قائم ہے لیکن موجودہ سو سائٹی کے ذمہ داران کی عدم توجہی اور نا اہل کے سبب نہ صرف اس عظیم ادارے کا دائرہ سمٹتا جا رہا ہے بلکہ خستہ حالی کا بھی شکار ہے۔

    بھوپال کے مشہور سیفیہ کالج کی بنیاد ملا سجاد نے رکھی مگر اسے ترقی کی منزل ملا سجاد نے عطا کی۔ کہنے کو یہ کالج آج بھی قائم ہے لیکن موجودہ سو سائٹی کے ذمہ داران کی عدم توجہی اور نا اہل کے سبب نہ صرف اس عظیم ادارے کا دائرہ سمٹتا جا رہا ہے بلکہ خستہ حالی کا بھی شکار ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Madhya Pradesh | Bhopal
    • Share this:
    بھوپال میں عوامی سطح پر تعلیم کو عام کرنے کی جب بھی بات کی جاتی ہے تو ملا سجاد حسین اور ان کے فرزند فخر الدین شاہ کا نام سر فہرست ہوتا ہے ۔ بھوپال کے مشہور سیفیہ کالج کی بنیاد ملا سجاد نے رکھی مگر اسے ترقی کی منزل ملا سجاد نے عطا کی۔ کہنے کو یہ کالج آج بھی قائم ہے لیکن موجودہ سو سائٹی کے ذمہ داران کی عدم توجہی اور نا اہل کے سبب نہ صرف اس عظیم ادارے کا دائرہ سمٹتا جا رہا ہے بلکہ خستہ حالی کا بھی شکار ہے۔ بینظیر انصار ایجوکیشن سو سائٹی کے زیر اہتمام بھوپال کوہ فضا میں منعقدہ ممتاز ماہرین تعلیم کی میٹنگ میں سیفہ کالج کے بانی ملا سجاد حسین اور فخر الدین شاہ کی تعلیمی خدمات و مشن کو عام کرنے اور اسے نئی جہت سے روشناس کرانے کا فیصلہ کیا گیا۔
    چھتیس گڑھ کے سابق ڈی جی پی و بینظیر انصار ایجوکیشن سو سائٹی کے صدر ایم ڈبلیو انصاری نے نیوز ایٹین اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ سیفیہ کالج نے بھوپال میں تعلیم کے میدان میں جو عظیم خدمات انجام دی ہیں ایسی مثال کسی دوسرے ادارے کی بھوپال میں  نہیں ملتی ہے ۔ زندگی کا کوئی شعبہ ایسانہیں ہے جس میں سیفیہ کے فارغین نے اپنی خدمات سے بھوپال اور ملک کا نام روشن نہ کیا ہو۔ اس کالج نے ہاکی اولمپیئن کے ساتھ ،ماہرین تعلیم اور اردو کے نباض پیدا کئے ہیں جن کے ذکر کے بغیر اردو ادب کی بیسویں صدی کی تاریخ کو نہیں لکھا جا سکتا ہے۔ جس کالج کی عظیم تاریخ ہے وہ آج عدم توجہی کے سبب خستہ حالی کا شکار ہے ۔

    ہماری کوشش یہ ہے کہ سیفیہ کالج کی عظمت رفتہ کو بحال کیا جائے اور نئی نسل سے ملا سجاد حسین اور فخر الدین شاہ کی خدمات سے روشنا س کرایا جائے ۔آج کور کمیٹی کی میٹنگ میں کئی اہم فیصلے ہوئے ہیں جس پر عمل کرتے ہوئے ان دونوں کی خدمات پر سمینار اور سمپوزیم کا انعقاد ہوگا۔

    امت شاہ نے لالو یادو کو پورنیہ سے کیا خبردار، بولے۔ نتیش آپ کو بھی دھوکہ دیں گے

    پی ایف آئی کے دہشت گرد تنظیموں سے روابط، ISIS، سمی اور اے بی ٹی کیلئے کام کرنے کا انکشاف

    اے ایم یو اولڈ بوائز ایسو سی ایشن بھوپال کے صدر قاضی اقبال نے نیوز ایٹین اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ سیفیہ اور بھوپال ایک دوسرے کے لئے لازم و ملزوم ہیں۔ ایک کے ذکر کے ساتھ دوسرے کا ذکر ضروری ہے لیکن عدم توجہی کے سبب یہ ادارہ اپنا وجود کھوتا جا رہا ہے ۔ ہماری کوشش صرف اپنی وراثت کو محفوظ  کرنے اور اسلاف کی عظیم تاریخ سے نئی نسل سے واقف کرانے کی ہے ۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: