ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

رانچی میں سی اے اے مخالف احتجاج: 100میں 14ہو ں لیکن 14 یہ کم نہیں پڑتے،حسین حیدری کا کلام

رانچی کے شاہین باغ میں خواتین کا ہجوم مختلف مذاہب کے لوگ دھرنا میں شرکت کر خواتین کا حوصلہ بڑھا رہے ہیں

  • Share this:
رانچی میں سی اے اے مخالف احتجاج: 100میں 14ہو ں لیکن  14 یہ کم نہیں پڑتے،حسین حیدری کا کلام
رانچی کے شاہین باغ میں خواتین کا ہجوم مختلف مذاہب کے لوگ دھرنا میں شرکت کر خواتین کا حوصلہ بڑھا رہے ہیں

سی اے اے ۔ این آر سی اور این پی آر کے خلاف رانچی میں احتجاجی دھرنا جاری ہے ۔حج ہاؤس کے باہر گزشتہ 20 جنوری سے دہلی کے شاہین باغ کے طرز پر جاری اس دھرنا میں مختلف مذاہب کے لوگ شرکت کر رہے ہیں اور دھرنا میں شامل خواتین کا حوصلہ بڑھارہے ہیں ۔اس دھرنا میں شہر رانچی اور اسکے آس پاس کے علاقوں سے کثیر تعداد میں خواتین شرکت کر رہی ہیں ۔ رانچی کے کڈرو نامی علاقہ میں منعقد اس دھرنا کی وجہ سے پورے علاقے کی رونق دیکھتے بن رہی ہے ۔ یہاں پہنچنے والے نوجوان ۔ خواتین حب الوطنی سے سرشار نظر آتے ہیں ۔ قافلہ کی شکل میں پہنچنے والے نوجوان اور خواتین ہاتھوں میں قومی پرچم لئے ہندو مسلم ۔ سکھ عیسائی ۔ آپس میں ہیں بھائی بھائی اور ہندوستان زندہ باد کے نعرے لگاتے نظر آتے ہیں ۔


سی اے اے ۔ این آر سی اور این پی آر کے خلاف رانچی میں احتجاجی دھرنا جاری ہے
سی اے اے ۔ این آر سی اور این پی آر کے خلاف رانچی میں احتجاجی دھرنا جاری ہے


دھرنا میں مجاہدین آزادی کے تصاویر لگائے گئے ہیں ۔ ان میں بابائے قوم آنجہانی مہاتما گاندھی ۔ ڈاکٹر بھیم راؤ امبیڈکر ۔ مولانا ابوالکلام آزاد ۔ سوامی ویویکا نند جیسی شخصیات کی تصاویر قابل ذکر ہیں ۔ اس علاقہ میں لوگوں کے سیلاب کے باوجود ٹریفک نظام کی بہتری میں نوجوان طبقہ پیش پیش رہتے ہیں ۔


نوجوان ۔ خواتین حب الوطنی سے سرشار نظر آتے ہیں ۔
نوجوان ۔ خواتین حب الوطنی سے سرشار نظر آتے ہیں ۔


معروف شاعر حسین حیدری اور سماجی کارکن ادیتی نارائن دھرنا میں شریک ہوئے اور خواتین کو خطاب کیا ۔ شاعر حسین حیدری نے اپنے کلام کے ذریعہ خواتین کو پیغام دیا ۔ انکے شعر کچھ اس طرح تھے ۔
مندر کے چوکھٹ میرے ہیں
مسجد کے قبلے میرے ہیں
گرودوارے کے دربار میرے
یسوع کے گرجے میرے ہیں
سو میں سے چودہ ہو لیکن چودہ یہ کم نہیں پڑتے ہیں
میں پورے سو میں بستا ہوں
پورے سو مجھ میں بستے ہیں
مجھے ایک نظر سے دیکھنا تو
میرے ایک نہیں سو چہرے ہیں
سو رنگ کے ہیں کردار میرے
سو قلم سے لکھی کہانی ہوں
میں جتنا مسلماں ہوں بھائی
میں اتنا ہندوستانی ہوں
میں ہندوستانی مسلماں
میں ہندوستانی مسلماں ہوں

ساتھ ہی حسین حیدری نے مرکزی حکومت سے سوال کرتے ہوئے کہا کہ آپ ملک کے غریب ۔ پسماندہ ۔ مسلمان و دیگر طبقات سے ووٹ دینے کا حق کیسے لے سکتے ہیں ۔ اس موقع پر سماجی کارکن ادیتی نارائن نے کہا کہ سی اے اے ۔ این آر سی اور این پی آر ملک کے آئین کے خلاف ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس ملک میں مذہبی بنیاد پر لوگوں کو تقسیم نہیں کیا جاسکتا ہے ۔ ادیتی نے کہا کہ اس قانون سے صرف مسلمانوں کا نقصان نہیں بلکہ نقصان سب کا ہوگا ۔ ادیتی نے کہا کہ یہ قانون کو واپس لیا جانا چاہیے۔گذشتہ دنوں کانگریس کی رکن اسمبلی دیپاکا پانڈے سنگھ ۔ جے ایم ایم لیڈر مہوآ ماجی اور کانگریس لیڈر اجئے ناتھ شہدیو کے علاوہ دیگر سماجی کارکنان نے شرکت کی ۔
First published: Feb 03, 2020 03:24 PM IST