ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

بڑی خبر: مدھیہ پردیش میں ضمنی الیکشن سے پہلے کانگریس کو بڑا جھٹکا، رکن اسمبلی راہل سنگھ نے دیا استعفیٰ

مدھیہ پردیش میں جن 28 اسمبلی حلقوں میں ضمنی انتخابات ہو رہے ہیں ان میں سے 25 سیٹوں پر یہ صورت حال کانگریس کے اراکین اسمبلی کے استعفی کی وجہ سے پیدا ہوئی ہے۔ ان میں سے 22 اراکین اسمبلی نے اسی سال مارچ میں استعفی دیا تھا، جس کے وجہ سے اس وقت کی کمل ناتھ حکومت اقلیت میں آگئی تھی اور 20 مارچ کو کمل ناتھ کو وزیر اعلی کے عہدے سے استعفی دینا پڑا تھا۔

  • UNI
  • Last Updated: Oct 25, 2020 03:43 PM IST
  • Share this:
بڑی خبر: مدھیہ پردیش میں ضمنی الیکشن سے پہلے کانگریس کو بڑا جھٹکا، رکن اسمبلی راہل سنگھ نے دیا استعفیٰ
کانگریس رکن اسمبلی راہل سنگھ بی جے پی میں شامل ہوگئے

بھوپال۔ مدھیہ پردیش میں 28 اسمبلی حلقوں میں ضمنی انتخابات کے لئے ووٹنگ کے ٹھیک نو دن پہلے آج برسراقتدار پارٹی بھارتیہ جنتا پارٹی نے اہم اپوزیشن پارٹی کانگریس کو سخت جھٹکا دیتے ہوئے اس کے ایک رکن اسمبلی راہل سنگھ کو اسمبلی کی رکنیت سے ’استعفی‘ کے بعد بی جے پی میں شامل کرلیا۔ ریاستی بی جے پی دفتر میں وزیراعلی شیوراج سنگھ چوہان، ریاستی صدر وشنو دت شرما اور شہری ڈیولپمنٹ اور رہائش کے وزیر بھوپندر سنگھ کی موجودگی میں  راہل سنگھ نے بی جے پی کی رکنیت حاصل کی۔ اس سے پہلے انہوں نے اسمبلی کے پروٹیم اسپیکر رامیشور شرما کو رکن اسمبلی کے عہدے سے استعفی نامہ حوالے کیا، جسے قبول کرلیا گیا۔


راہل سنگھ نومبر۔دسمبر 2018 کے اسمبلی انتخابات میں کانگریس کے ٹکٹ پر دموہ سے پہلی مرتبہ رکن اسمبلی منتخب ہوئے تھے اور انہوں نے تب بی جے پی کے امیدوار اور ریاست کے اس وقت کے وزیر خزانہ جینت ملیا کو شکست سے دوچار کیا تھا۔ سنگھ نے بی جے پی کی رکنیت لینے کے دوران میڈیا سے بات چیت کے دوران ملیا کو والد جیسا قرار دیا اور کہا کہ وہ بھوپندر سنگھ کی رہنمائی میں مستقبل کی سیاست کریں گے۔



راہل سنگھ نے اس بات سے انکار کیا کہ اس کام کے لئے انہیں کسی طرح کا لالچ دیا گیا ہے۔ سابق رکن اسمبلی نے کہا کہ ان کی اصل مانگ دموہ میں میڈیکل کالج کھولنے کی تھی اور یہ مطالبہ کانگریس کے پندرہ ماہ کے دور حکومت میں مکمل نہیں ہوا۔ موجودہ حکومت نے یقین دلایا ہے کہ میڈیکل کالج کھولنے کا مطالبہ پورا کیا جائے گا۔

مدھیہ پردیش میں جن 28 اسمبلی حلقوں میں ضمنی انتخابات ہو رہے ہیں ان میں سے 25 سیٹوں پر یہ صورت حال کانگریس کے اراکین اسمبلی کے استعفی کی وجہ سے پیدا ہوئی ہے۔ ان میں سے 22 اراکین اسمبلی نے اسی سال مارچ میں استعفی دیا تھا، جس کے وجہ سے اس وقت کی کمل ناتھ حکومت اقلیت میں آگئی تھی اور 20 مارچ کو کمل ناتھ کو وزیر اعلی کے عہدے سے استعفی دینا پڑا تھا۔ اس کے بعد شیوراج سنگھ چوہان نے 23 مارچ کو وزیراعلی کے طور پر حلف لیا تھا۔ باقی تین سیٹوں پر ضمنی انتخابات اس وقت کے اراکین اسمبلی کے انتقال کی وجہ سے ہو رہے ہیں۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Oct 25, 2020 03:42 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading