உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نیوز18 اردو کی خبر کا اثر، مدھیہ پردیش وقف بورڈ نے اپنے ریکارڈ کو درست کرنے کا شروع کیا کام

    نیوز18 اردو کی خبر کا اثر، مدھیہ پردیش وقف بورڈ نے اپنے ریکارڈ کو درست کرنے کا شروع کیا کام

    نیوز18 اردو کی خبر کا اثر، مدھیہ پردیش وقف بورڈ نے اپنے ریکارڈ کو درست کرنے کا شروع کیا کام

    Bhopal News: نیوز18 اردو کے ذریعہ خبر نشر کئے جانے کے بعد ایم پی وقف بورڈ کے ذمہ داران نہ صرف خواب غفلت سے بیدار ہوئے بلکہ انہوں نے وقف بورڈ املاک کے ریکارڈ کو درست کرنے کے لئے بھی عملی اقدام شروع کردیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Madhya Pradesh | Bhopal | Bhopal
    • Share this:
    بھوپال : مدھیہ پردیش وقف بورڈ کے پاس کہنے کو ہزاروں املاک ہیں، مگر سرکاری ریکارڈ میں یہ املاک وقف بورڈ کی نہیں بلکہ سرکاری املاک کے طور پر درج ہیں۔ نیوز18 اردو کے ذریعہ خبر نشر کئے جانے کے بعد ایم پی وقف بورڈ کے ذمہ داران نہ صرف خواب غفلت سے بیدار ہوئے بلکہ انہوں نے وقف بورڈ املاک کے ریکارڈ کو درست کرنے کے لئے بھی عملی اقدام شروع کردیا ہے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: آزاد اور ان کی سیاسی پارٹی جموں و کشمیر کے سیاسی منظر نامہ پر کتنا ہوسکتی ہے اثر انداز؟


    بورڈ ذمہ داران کے ذریعہ اس تعلق سے صوبہ کے سبھی اضلاع کے کلکٹروں کو خط لکھا گیا، جس کا نتیجہ یہ ہوا کہ سولہ اضلاع نے وقف بورڈ املاک کے ریکارڈ کو درست کرنے کو لیکر نہ صرف کام شروع کردیا ہے بلکہ اس تعلق سے مدھیہ پردیش وقف بورڈ کو لیٹر بھیج کر اس کی آفیشیل انفارمیشن بھی دی ہے ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: غیر مردوں کے ساتھ جسمانی تعلقات بنانے سے انکار پر شوہر نے بیوی کو دیا تین طلاق


    نیوز18 اردو سے بات چیت کرتے ہوئے مدھیہ پردیش وقف بورڈ کے سی ای او سید شاکر علی جعفری نے کہا کہ حکومت اقلیتوں اور اقلیتوں سے وابستہ اداروں کے فروغ کے لئے بہت سنجیدہ ہے ۔ وقف بورڈ کی املاک کے ریکارڈ کو درست کرنے کا جو معاملہ تھا اسے درست کرنے کا عملی اقدام شروع کردیا گیا ہے۔ اس تعلق سے صوبہ کے سبھی اضلاع کے کلکٹروں کو خط لکھ کر وقف بورڈ  املاک کے ریکارڈ کو درست کرنے کی گزارش کی گئی تھی ۔

    اب تک سولہ اضلاع سے ریکارڈ درست کرنے کو لیکر وہاں کے انتظامیہ کے ذریعہ خبر آچکی ہے اور ہمیں امید ہے کہ جلد ہی ہم مدھیہ پردیش کے سبھی اضلاع میں وقف املاک کے ریکارڈ کو درست کرنے کام مکمل کر لیں گے۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: