ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

بھوپال متنازعہ زمین معاملے میں عدالت نے فیصلہ کیا ملتوی، 19 فروری کو ہو گی معاملے کی سماعت

واضح رہے کہ بھوپال کباڑخانہ علاقہ کے خسرہ نمبر دو سو اڑسٹھ کی سینتس ہزار اسکوائر فٹ متنازعہ زمین پر تعمیر کرنے کے لئے سترہ جنوری کو بھوپال ضلع انتظامیہ نے شہر کے تین تھانوں میں کرفیو اور باقی تھانوں میں دفعہ ایک سو چوالیس کا نفاذ کرتے ہوئے ایک فریق کو تعمیری کام شروع کرنے کی اجازت دی تھی۔ ضلع انتظامیہ کے موقف کو چیلنج کرتے ہوئے محمد سلیمان نے ایم پی اسٹیٹ وقف ٹریبونل میں فوری سماعت کی عرضی دائر کی تھی۔

  • Share this:
بھوپال متنازعہ زمین معاملے میں عدالت نے فیصلہ کیا ملتوی، 19 فروری کو ہو گی معاملے کی سماعت
بھوپال متنازعہ زمین معاملے میں عدالت نے فیصلہ کیا ملتوی

بھوپال کباڑ خانہ علاقہ میں متنازعہ زمین پر تعمیری کام روکنےکو لیکر محمد سلیمان کے ذریعہ فوری سماعت کو لیکر داخل کی گئی عرضی پر ایم پی وقف ٹریبونل نے انیس فروری تک فیصلہ کو ملتوی کردیا ہے۔ تیئس جنوری کی سماعت میں عدالت نے سبھی فریقین کو سننے کے بعد فیصلہ کو محفوظ کرتے ہوئے ستائیس جنوری کو فیصلہ سنانے کا اعلان کیاتھا۔


واضح رہے کہ بھوپال کباڑخانہ علاقہ کے خسرہ نمبر دو سو اڑسٹھ کی سینتس ہزار اسکوائر فٹ متنازعہ زمین پر تعمیر کرنے کے لئے سترہ جنوری کو بھوپال ضلع انتظامیہ نے شہر کے تین تھانوں میں کرفیو اور باقی تھانوں میں دفعہ ایک سو چوالیس کا نفاذ کرتے ہوئے ایک فریق کو تعمیری کام شروع کرنے کی اجازت دی تھی۔ ضلع انتظامیہ کے موقف کو چیلنج کرتے ہوئے محمد سلیمان نے ایم پی اسٹیٹ وقف ٹریبونل میں فوری سماعت کی عرضی دائر کی تھی۔ وقف ٹریبونل میں فوری سماعت کے لئے انیس جنوری کو داخل عرضی پر سماعت کے لئے وقف ٹریبونل نے اکیس جنوری کی تاریخ مقرر کی تھی ۔ اکیس جنوری کی سماعت میں  راج دیو ٹرسٹ نے دستاویز پیش کرنے کے لئے مزید وقت مانگا تو عدالت نے سماعت کے لئے تیئس جنوری کی تاریخ مقررکی تھی ۔تیئس جنوری کی سماعت کے بعد عدالت نے فیصلہ محفوظ کرتے ہوئے ستائیس جنوری کی تاریخ مقرر کی تھی۔ متنازعہ زمین پر آج لوگوں کی فیصلہ کی امید تھی مگر چونکہ اس معاملہ  میں عرضی گزار نے جبلپورہائی کورٹ میں بھی ایک عرضی داخل کررکھی ہے اس لئے عدالت نے سماعت کرتے ہوئے جبلپور ہائی کورٹ سے فیصلہ آنے تک اپنے فیصلے کو انیس فروری تک کے لئے ملتوی کردیاہے۔جبلپور ہائی کورٹ میں بارہ فروری کو سماعت ہوگی۔


محمد سلیمان کے وکیل رفیع زبیری کہتے ہیں کہ آج عدالت میں نگر نگم نے سیکشن  ایک سو اکیاون کے تحت اپنے دعوی پیش کیا ہے۔ جس پر عدالت میں سماعت کی گئی اور فوری سماعت کے لئے ہماری جو عرضی تھی اس پر عدالت نے فیصلہ ہولڈ کرلیا ہے۔ چونکہ اسی معاملے میں ہماری ایک عرضی جبلپور ہائی کورٹ میں لگی ہوئی ہے جس پر بارہ فروری کو ہائی کورٹ میں سماعت ہوگی ۔ہائی کورٹ کے فیصلہ آنے تک اس فیصلہ کو ہولڈ پر رکھا گیا ہے۔اب اس معاملے انیس فروری کو سماعت ہوگی۔


وہیں راج دیو ٹرسٹ کے وکیل جگدیش چھاوانی کہتے ہیں کہ آج کی سماعت میں کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔ عرضی گزارکی جانب سے جبلپور ہائی کورٹ میں اسٹے آرڈر خارج کئے جانے کو لیکر معاملہ زیر سماعت ہے ۔چونکہ ہائی کورٹ میں معاملہ زیر سماعت ہوتے ہوئے ٹریبونل کوئی فیصلہ نہیں دے سکتا ہے اس بنیاد پر وقف ٹریبونل نے اس معاملے کو اس امید پر ہولڈ پر رکھا ہے کہ جب تک اس معاملے میں جبلپور ہائی کورٹ کا فیصلہ نہیں آجاتا ہے تب تک یہاں کوئی فیصلہ نہیں ہوگا۔اس لئے عدالت نے انیس فروری تک کے لئے اپنے فیصلہ کو ملتوی کردیا ہے۔

ایم پی وقف ٹریبونل میں محمد سلیمان نے فوری سماعت کے لئے عرضی اس لئے دائر کی تھی کہ متنازعہ زمین پر جو تعمیر کام جاری ہے اس پر اسٹے لگاکر کام روکا جائے۔ایم پی اسٹیٹ وقف ٹریبونل نے تعمیری کام کو روکنے سے منع کردیا ہے ۔ہائی کورٹ میں بھی عرضی گزارنے اسٹے خارج کرنے کو لیکر عرضی دائر کر رکھی ہے جس پر بارہ فروری کو سماعت ہوگی ۔ بارہ فروری کو جبلپور ہائی کورٹ کے فیصلہ کے بعد انیس فروری کواسٹیٹ وقف ٹریبونل میں معاملے کو لیکر سماعت ہوگی ۔ جبلپور ہائی کورٹ اور اسٹیٹ وقف ٹریبونل کے فیصلہ پر سبھی کی نگاہیں لگی ہوئی ہیں ۔کمیٹی اوقاف عامہ نے متعلقہ زمین پر اپنا جو دعوی پیش کیا ہے اس میں چھ ایکڑ اکیاون ڈسمل زمین بتائی گئی ہے اور اوقاف عامہ نے پوری زمین پر اپنے مالکانہ حق کا دعوی کیا ہے۔وہیں مسلم سماجی تنظیموں کے ذریعہ متنازعہ زمین پر ضلع انتظامیہ کے ذریعہ کرفیو کا نفاذ کر کے ایک فریق کو تعمیر کی اجازت دینے کے خلاف عوامی تحریک شروع کرنے کی تیاری کی جا رہی ہے ۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Jan 27, 2021 09:54 PM IST