ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

نسرگ طوفان نے مدھیہ پردیش میں مچائی بھاری تباہی: یہاں دیکھیں تصویریں

نسرگ نامی گردابی طوفان سے صرف ممبئی کے ساحلی علاقوں میں ہی نقصان نہیں ہوا ہے بلکہ نسرگ سے ہونے والی بارش سے مدھیہ پردیش کے سولہ ضلع میں الرٹ جاری کردیا گیا ہے اور راجدھانی بھوپال سے مالوہ کے بڑے حصے میں دیر رات سے ہونے والی بارش سے کسانوں کا بڑا نقصان پہنچا ہے۔

  • Share this:
نسرگ طوفان نے مدھیہ پردیش میں مچائی بھاری تباہی: یہاں دیکھیں تصویریں
نسرگ نامی گردابی طوفان سے صرف ممبئی کے ساحلی علاقوں میں ہی نقصان نہیں ہوا ہے بلکہ نسرگ سے ہونے والی بارش سے مدھیہ پردیش کے سولہ ضلع میں الرٹ جاری کردیا گیا ہے اور راجدھانی بھوپال سے مالوہ کے بڑے حصے میں دیر رات سے ہونے والی بارش سے کسانوں کا بڑا نقصان پہنچا ہے۔

نسرگ نامی گردابی طوفان سے صرف ممبئی کے ساحلی علاقوں میں ہی نقصان نہیں ہوا ہے بلکہ نسرگ سے ہونے والی بارش سے مدھیہ پردیش کے سولہ ضلع میں الرٹ جاری کردیا گیا ہے اور راجدھانی بھوپال سے مالوہ کے بڑے حصے میں دیر رات سے ہونے والی بارش سے کسانوں کا بڑا نقصان پہنچا ہے۔

مدھیہ پردیش میں سرکاری شرح پر گیہوں کی خریداری اکتیس مئی کو بند کردی گئی تھی۔

بھوپال ،اندور ،اجین سمیت ضلع اضلاع میں جہاں کورونا وائرس کے مریض زیادہ تھے یہاں پر گیہوں کی خریداری کو پانچ جون تک کرنے کا سرکار نے اعلان کیا تھا۔ جن اضلاع میں گیہوں کی خریداری کی جا چکی تھی وہاں پر سرکار گیہوں کا ویئر ہاؤس میں اسٹوریج نہیں کر سکی۔ نتیجہ کے طور پر نسرگ سے ہونے والی بارش سے ویئر ہاؤس کے باہر رکھا ہزاروں ٹن گیہوں بارش میں بھیگ گیا اور کروڑوں کا نقصان سب کی آنکھوں کے سامنے دیکھتے ہی دیکھتے ہوگیا۔ یہی نہیں جن اضلاع میں گیہوں کی خریداری جاری تھی ان اضلاع میں اچانک بارش آنے کے سبب کھلے آسمان کے نیچے کسان کھلے آسمان کے نیچے اپنا گیہوں میں ٹریکٹر ٹرالی میں لئے کھڑے ہیں۔


مدھیہ پردیش کے وزیر داخلہ ڈاکٹرنروتم مشرا کہتے ہیں کہ سرکار ایک کروڑ کنٹل سے زیادہ گیہوں کی خریداری کر چکی ہے اور مدھیہ پردیش کے کسانوں سے چھیانوے فیصد گیہوں کی خریداری مکمل ہو چکی ہے۔ جن اضلاع میں کورونا مہاماری کےچلتے دیر سے گیہوں کی خریداری شروع ہوئی تھی وہاں پر ضرور کچھ پریشانی ہے۔ نسرگ قدرتی آفت سے ہونے والے نقصان کو سرکار دیکھ رہی ہے ۔ بارش سے کسانوں کا نقصان نہیں ہوا ہے بلکہ نقصان سرکار کاہواہے ۔ کسانوں کو ان کی فصل کا پیمنٹ کیا جا چکا ہے اور جن کا رہ گیا ہے ان کا پیمنٹ کرنے کا سلسلہ جاری ہے۔


وہیں مدھیہ پردیش کے سابق وزیر اور کانگریس میڈیا سیل کے انچارج جیتو پٹواری کہتے ہیں کہ وزیر داخلہ کا بیان شرمناک ہے۔ اگر بارش سے سرکار کا نقصان ہواہے تو کیا سرکار کے نقصان کی بھر پائی بی جے پی اپنے فنڈ سے کریگی۔یہ جنتا کی گاڑھی کمائی کا پیسے ہے جو وہ ٹیکس کے روپ میں سرکار کو دیتی ہے۔ سرکار ستا کے نشے میں چور ہے ۔ کانگریس کے بار بار کہنے کے بعد بھی اس طرف دھیان نہیں دیاگیا ۔ اگر وقت رہتےسرکار نے قدم اٹھایا ہوتا تو آج بارش میں کسانوں کا اتنا بھاری نقصان نہیں ہوتا اور ہزاروں کنٹل گیہوں پانی میں نہیں بھیگتا۔


وہیں بھوپال کانگریس ایم ایل اے عارف مسعود کہتے ہیں کہ اندور،اجین ،بھوپال سمیت دوسرے اضلاع میں جہاں کورونا بڑی تعداد میں موجود ہے وہاں کے کسان تو ابھی اپنی باری کا انتظار کررہے ہیں۔ جن کسانوں کو میسیج کے ذریعہ بلایا گیا تھا وہ ہفتے بھر سے اپنے اناج کے ساتھ کھلے آسمان کے نیچے بیٹھے ہیں اور بارش کے چلتے ان کا ستم کا عذاب ٹوٹا ہے۔پہلے کورونا،پھر ٹڈی اور اب بارش کے ستم نے کسانوں سے انکے منھ کا نوالہ چھین لیا ہے

سرکاری کی عدم توجہی کے سبب  کروڑوں کے گیہوں بارش میں بھیگ کر خراب ہورہا ہے اور کسان بارش میں اپنے اناج کے ساتھ بھیگنے کو مجبور ہیں۔ سرکار کو چاہیئے کہ وہ کسانوں کو ان کے نقصان کا معاوضہ دے تاکہ کسانوں کے زخموں پر مرحم لگ سکے۔
First published: Jun 04, 2020 09:04 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading