ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

ممبران اسمبلی کو یرغمال بنایا جانا جمہوری نظام پر ڈاکہ ڈالنے کے مترادف: ڈاکٹر عزیز قریشی

ڈاکٹر عزیز قریشی گورنر لال جی ٹنڈن کے اخلاق کی جہاں تعریف کرتے ہوئے انہیں اٹل بہاری واجپئی کا سچا جانشین قرار دیتے ہیں وہیں مدھیہ پردیش کے سیاسی گھمسان کو ملک کے آئینی نظام پر بی جے پی کے ڈاکہ سے تعبیر کرتے ہیں ۔

  • Share this:
ممبران اسمبلی کو یرغمال بنایا جانا جمہوری نظام پر ڈاکہ ڈالنے کے مترادف: ڈاکٹر عزیز قریشی
سابق گورنر اترپردیش و اتراکھنڈ ڈاکٹر عزیز قریشی

بھوپال۔ مدھیہ پردیش میں اقتدار کے لئے سیاسی گھمسان اپنے عروج پر ہے۔ گورنر لال جی ٹنڈن، سی ایم کمل ناتھ اور اسمبلی اسپیکر این پی پرجا پتی کے بیچ سیاسی گھمسان کو لیکرجہاں لیٹر پالیٹکس شباب پر ہے وہیں مدھیہ پردیش کی سیاست اور فلور ٹیسٹ کے مطالبہ کو لیکر سپریم کورٹ میں سماعت بھی جاری ہے۔ سابق سی ایم دگ وجے سنگھ کی قیادت میں چھ ممبران پر متشمل کانگریس کا وفد بنگلورو بھی گیا۔ بنگلورو گئے کانگریس کے وفد کو باغی ممبران اسمبلی سے ملنے نہیں دیا گیا اور کانگریس وفد کی گرفتاری کے بعد انہیں رہا بھی کیا گیا۔


مدھیہ پردیش کے سیاسی گھمسان کو سینئر لیڈر و سابق گورنر اترپردیش و اتراکھنڈ ڈاکٹر عزیز قریشی نے بی جے پی کی سازش سے تعبیر کیا ہے۔


بھوپال میں بھی بی جے پی اور کانگریس کے ممبران اسمبلی اپنے اپنے طریقے سے گورنر پر دباؤ بنانے کا کام کر رہے ہیں۔ کانگریس کے ممبران اسمبلی نے دو بسوں میں سوار ہوکر گورنر لال جی ٹنڈن سے ملاقات کی اور بنگلورو میں قید کانگریس کے ارکان اسمبلی کو واپس لانے کا مطالبہ کیا۔ وہیں دوسری جانب کانگریس کارکنان نے بنگلورو میں قید کانگریس کے ممبران اسمبلی کی رہائی کے لئے بھوپال میں گورنر ہاؤس کے سامنے گاندھی مجسمے پر دھرنا بھی دیا۔ گورنر ہاؤس کے سامنے دھرنا دینے اور نعرہ بازی کرنے والے کانگریس کارکنان کو پولیس نے گرفتار کر لیا ہے۔


مدھیہ پردیش کے سیاسی گھمسان کو سینئر لیڈر و سابق گورنر اترپردیش و اتراکھنڈ ڈاکٹر عزیز قریشی نے بی جے پی کی سازش سے تعبیر کیا ہے۔ ڈاکٹر عزیز قریشی گورنر لال جی ٹنڈن کے اخلاق کی جہاں تعریف کرتے ہوئے انہیں اٹل بہاری واجپئی کا سچا جانشین قرار دیتے ہیں وہیں مدھیہ پردیش کے سیاسی گھمسان کو ملک کے آئینی نظام پر بی جے پی کے ڈاکہ سے تعبیر کرتے ہیں ۔مدھیہ پردیش میں جاری  لیٹر پالیٹکس پر ڈاکٹر عزیز قریشی  گورنر لال جی ٹنڈن  کے ذریعہ جاری کئے گئے لیٹر کو ان کی سیاسی مجبوری قرار دیتے ہیں۔ ڈاکٹر عزیز قریشی یہی نہیں رکتے بلکہ وہ کہتے ہیں کہ پہلے چمبل میں جس طرح سے ڈاکو لوگوں کو یرغمال بنا کر رقم وصول کرتے ہیں وہی سب کچھ امت شاہ کی نگرانی میں بی جے پی کر رہی ہے اور ایسے اقدام کو نہ کبھی قبول کیا جا سکتا ہے اور نہ ہی ملک کے عوام ایسی سازش کرنے والوں کو کبھی قبول کریں گے۔کانگریس سے سندھیا کے جانے کو وہ کانگریس کے بڑے نقصان سے تعبیر کرتے ہیں۔
First published: Mar 19, 2020 11:01 AM IST