உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    عظیم بیگ نے ہنومان مندر کے بھنڈارے و ڈیکوریشن کا کام مفت میں کیا ، Hanuman Jayanti کے موقع پربھوپال میں بکھرے محبت کے رنگ

     Hanuman Jayanti: بھوپال ہنومان مندر کے ذمہ دار اور ممتاز شاعر پنڈت وجے تیواری نے نیوز ایٹین اردو سے خاص بات چیت میں کہا کہ یہ کوئی نئی بات نہیں ہے بلکہ ہم لوگ پچھلے پینتس سالوں سے زیادہ ہوگیا ہے یہ سب مل کر کرتے ہوئے اور اب تک ہنومان جی کا ایسا کوئی بھنڈارا نہیں ہوا جس میں مسلم بھائیوں نے بڑھ چڑھ کر تعاون نہ کیا ہو۔

    Hanuman Jayanti: بھوپال ہنومان مندر کے ذمہ دار اور ممتاز شاعر پنڈت وجے تیواری نے نیوز ایٹین اردو سے خاص بات چیت میں کہا کہ یہ کوئی نئی بات نہیں ہے بلکہ ہم لوگ پچھلے پینتس سالوں سے زیادہ ہوگیا ہے یہ سب مل کر کرتے ہوئے اور اب تک ہنومان جی کا ایسا کوئی بھنڈارا نہیں ہوا جس میں مسلم بھائیوں نے بڑھ چڑھ کر تعاون نہ کیا ہو۔

    Hanuman Jayanti: بھوپال ہنومان مندر کے ذمہ دار اور ممتاز شاعر پنڈت وجے تیواری نے نیوز ایٹین اردو سے خاص بات چیت میں کہا کہ یہ کوئی نئی بات نہیں ہے بلکہ ہم لوگ پچھلے پینتس سالوں سے زیادہ ہوگیا ہے یہ سب مل کر کرتے ہوئے اور اب تک ہنومان جی کا ایسا کوئی بھنڈارا نہیں ہوا جس میں مسلم بھائیوں نے بڑھ چڑھ کر تعاون نہ کیا ہو۔

    • Share this:
    ملک میں مذہب کے نام پر سیاسی پارٹیوں کے ذریعہ جہاں نفرت کو عام کیا جا رہا ہے وہیں راجدھانی بھوپال میں ہنومان جینتی Hanuman Jayanti کے موقع پر محبت کے رنگ بکھیرے جا رہے ہیں ۔ ہنومان جینتی کے موقع پر بھوپال جواہر چوک پر واقع ہنومان مندر میں ہونے والے بھنڈارے کا انتظام ہندو مسلمان نہ صرف مل کر کرتے ہیں بلکہ سب کو اس دن کا شدت سے انتظار رہتا ہے ۔ خاص بات یہ ہے کہ ہنومان مندر کے خاص بھنڈارے میں ڈیکوریشن اور سیلفی پوائنٹ جس میں مورتیاں بنائی گئی ہیں اس کا کام عظیم بیگ کے ِِذریعہ کیا گیا ہے ۔ہنومان مندر کا بھنڈارا دو حصوں میں ہوتا ہے ۔پہلا بھنڈارا صبح چار بجے خصوصی آرتی کے ساتھ ہوتا ہے اور دوسرا بھنڈارا شام چھ بجے کی آرتی کے بعد شروع ہوتا ۔ماہ رمضان کے اس خاص موقع پر مسلم بھائی اپنے ہندو بھائیوں کے ساتھ مل کر ہنومان بھکتوں کو کھانہ کھلاتے ہیں ۔
    بھوپال ہنومان مندر کے ذمہ دار اور ممتاز شاعر پنڈت وجے تیواری نے نیوز ایٹین اردو سے خاص بات چیت میں کہا کہ یہ کوئی نئی بات نہیں ہے بلکہ ہم لوگ پچھلے پینتس سالوں سے زیادہ ہوگیا ہے یہ سب مل کر کرتے ہوئے اور اب تک ہنومان جی کا ایسا کوئی بھنڈارا نہیں ہوا جس میں مسلم بھائیوں نے بڑھ چڑھ کر تعاون نہ کیا ہو۔ انہوں نے بتایا کہ اس بھنڈارے کی خاص بات یہ ہے کہ اس کے لئے ہمیں کسی سے کہنے یا بلانے کی ضرورت نہیں پڑتی بلکہ مسلم سماج کے لوگ خود آتے ہیں اور خود ہی سارے کام کو انجام دیتے ہیں ۔ہ

    نومان مندر پر سارا ڈیکوریشن اور جو بھگوا مے سب کچھ بنا ہوا آپ دیکھ رہے ہیں جھنڈے جھنڈیا اور سیلفی پوائنٹ اور دنیا بھر کے تمام گیٹ وغیرہ یہ سب میرے بھائی نما دوست عظیم بیگ نے کیا ہے ۔صبح چار بجے سے ہمارے مہا پرشادی شروع ہے ۔دوپہر میں شام کے بھنڈارے کے لئے تیاری جاری ہے اور شام کے بھنڈراے میں بھی سبھی کا تعاون ہے ۔یہ بھوپال کا سب سے بڑا بھنڈارا ہوتا ہے اور سب سے بڑی بات یہ ہے کہ اس میں ہندو اور مسلم کی کوئی قید نہیں ہے ۔یہ کوئی پہلی بار نہیں ہے بلکہ یہ ہماری روایت کا حصہ ہے ۔نفرت پھیلانے والے اپنا کام کررہے ہیں اور ہم محبت کے شیدائی اپنا کام کر رہے ہیں ۔

    مزید پڑھئے: Pakistan دورے پر آسٹریلیائی ٹیم کو دہشت گردانہ حملے کی دھمکی دینے والا مشتبہ گرفتار

    وہیں عظیم بیگ کہتے ہیں کہ ماہ رمضان کا مبارک مہینہ ہے اور ہنومان جی کا بھنڈارا ۔ہمارے لئے دونوں جانب جشن کا ماحول ہے ۔بھوپال نے تو ہمیشہ ایکتا کی مثال پیش کی ہے اور میں تو یہ کہنا چاہتا ہوں کے جس طرح سے ہم لوگ دونوں دوست ملکر اس طرح سے محبت کے کام کرتے ہیں ہندستان میں اسی طرح کا بھائی چارا چاہتے ہیں ۔ہنومان جینتی کے موقع پر جواہر چوک پر بھوپال کا سب سے بڑا بھنڈارا ہوتا ہے اور ہم اس کی تیاری پندرہ دن پہلے سے شروع کردیتے ہیں ۔سیتا رسوئی ،سیلفی پوائنٹ اور جو دوسرا ڈیکوریشن میرے ذریعہ کیا گیا ہے اس کو لوگ پسند کررہے ہیں اور خوش ہو رہے ہیں ۔ اور ہم یہ چاہتے ہیں کہ لوگوں کے چہرے پر مسکراہٹ یوں ہی کھلتی ہے اور ہم مل کر محبت کے رنگ بکھیرتے رہیں ۔محبت ایسا رنگ جس پر نفرت کا رنگ کبھی غالب نہیں آسکتا ہے ۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: