ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

ناراض بیوی کو انگلینڈ سے لینے کیلئے آیا ڈاکٹر شوہر ، مگر کورونا بن گیا 'کباب میں ہڈی' ، جانئے کیسے

Interesting News: گوالیار کے ڈاکٹر اور جالندھر کی لڑکی کے رشتے میں درار آگئی ۔ بیوی نے ناراض ہوکر گھر چھوڑ دیا ۔ شوہر انگلینڈ چلا گیا ، اس کے بعد شوہر بیوی کو واپس لینے آیا ، لیکن کورونا نے ملنے نہیں دیا ۔

  • Share this:
ناراض بیوی کو انگلینڈ سے لینے کیلئے آیا ڈاکٹر شوہر ، مگر کورونا بن گیا 'کباب میں ہڈی' ، جانئے کیسے
ناراض بیوی کو انگلینڈ سے لینے کیلئے آیا ڈاکٹر شوہر ، مگر کورونا بن گیا 'کباب میں ہڈی' ، جانئے کیسے

گوالیار : کورونا نے رشتوں پر بھی کس قدر قہر برپا کیا ہے ، اس کا اندازہ اس خبر سے ہوجائے گا ۔ ایک ڈاکٹر شوہر اپنی ناراض بیوی کو لینے کیلئے انگلینڈ سےا ٓیا ، لیکن وبا کی وجہ سے اب اس کو بیوی کو لئے بغیر ہی واپس جانا ہوگا ۔ دراصل فیملی کورٹ نے نوجوان کو حکم دیا تھا کہ وہ بیوی کے ساتھ آکر کاونسلنگ کرائے ۔ شوہر آیا بھی ، لیکن کورونا درمیان میں آگیا ۔ شہر میں کورونا کرفیو لگا ہوا ہے ، جس وجہ سے عدالت بند ہے اور میاں بیوی کی کاونسلنگ نہیں ہوسکی ۔ ڈاکٹر شوہر کو اب تین دن بعد لوٹنا ہے ، مگر بیوی ساتھ نہیں جاسکے گی ۔ اب فیملی کورٹ میں اگلی تاریخ ملے گی ، لیکن ڈاکٹر کب آئے گا یہ کہا نہیں جاسکتا ۔


دراصل گوالیار کے تھاٹی پور کے رہنے والے ایک ڈاکٹر کی شادی پنجاب کے جالندھر میں رہنے والی لڑکی سے ہوئی ۔ دونوں میٹرومونیل سائٹ سے ایک دوسرے کے رابطے میں آئے ۔ اہل خانہ نے دونوں کی 12 نومبر 2018 کو شادی کرادی ۔ اس کے بعد لڑکی نے ساس اور پھوپھی ساس پر استحصال کا الزام لگا کر 2019 میں سسرال چھوڑ دیا اور مائیکہ چلی گئی ۔ ادھر ڈاکٹر شوہر بھی انگلینڈ چلا گیا ۔


بیوی کے جانے کے بعد ڈاکٹر نے گوالیار فیملی کورٹ میں عرضی داخل کی کہ وہ بیوی کو شادی شدہ زندگی کی خوشی دینا چاہتا ہے ، اس کو اپنے ساتھ رکھنے کیلئے تیار ہے ۔ حالانکہ اس عرضی کے بارے میں جب لڑکی کوپتہ چلا تو اس نے اس کی مخالفت کی ۔ اس نے کہا کہ شوہر اس کو انگلینڈ میں ساتھ نہیں رکھنا چاہتا ۔ وہ چاہتا ہے کہ میں گوالیار میں سسرال میں ہی رہوں ۔


فیملی کورٹ نے پچھلی سماعت پر ڈاکٹر کے وکیل کو واضح الفاظ میں کہا تھا کہ وہ ڈاکٹر کو اگلی تاریخ پر کورٹ میں پیش کرے ، جس کے بعد ڈاکٹر بیوی کو لینے کیلئے انگلینڈ سے گوالیار آگیا ۔ منگل کو عدالت میں پیشی تھی ، لیکن کرفیو کی وجہ سے عدالت بند تھی اور کاونسلنگ نہیں ہوسکی ۔

ڈاکٹر کے وکیل نے بتایا کہ اس وقت انگلینڈ میں بھی کورونا کو لے کر ماحول کافی خراب ہے ، وہاں ڈاکٹروں کو چھٹی نہیں مل رہی ہے ، اب جب ڈاکٹر ہندوستان سے واپس انگلینڈ جائے گا تو ریڈ لسٹ میں آجائے گا ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Apr 22, 2021 04:44 PM IST