ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

جھارکھنڈ : تبلیغی جماعت سے وابستہ 11 غیر ملکی شہریوں کو عدالت نے ثبوت کے فقدان میں کیا بری

تبلیغی جماعت سے وابستہ 11 غیر ملکی شہریوں کو رانچی کے تماڑ تھانہ علاقہ کے رڑگاوں سے 24 مارچ 2020 کو پولیس نے گرفتار کیا تھا ۔ سات اپریل کو لاک ڈاون اور ویزا قوانین کی خلاف وزری کے الزام میں ان سبھی کو جیل بھیج دیا گیا تھا ۔

  • Share this:
جھارکھنڈ : تبلیغی جماعت سے وابستہ 11 غیر ملکی شہریوں کو عدالت نے ثبوت کے فقدان میں کیا بری
جھارکھنڈ : تبلیغی جماعت سے وابستہ 11 غیر ملکی شہریوں کو عدالت نے ثبوت کے فقدان میں کیا بری

جھارکھنڈ کے مشرقی سنگھ بھوم میں تبلیغی جماعت سے وابستہ 11 غیر ملکی شہریوں کو عدالت نے ثبوت کے فقدان میں بری کردیا ہے ۔ گھاٹ شیلا کی ایڈیشنل چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ سشیلا سورینگ کی عدالت نے انہیں بری کیا ۔ ان سبھی کو رانچی کے تماڑ تھانہ علاقہ کے رڑگاوں سے 24 مارچ 2020 کو پولیس نے گرفتار کیا تھا ۔ سات اپریل کو لاک ڈاون اور ویزا قوانین کی خلاف وزری کے الزام میں ان سبھی کو جیل بھیج دیا گیا تھا ۔ پولیس نے سبھی کے خلاف عدالت میں چارج شیٹ داخل کی تھی ۔


اس معاملہ میں پراسیکیوٹر کی جانب سے آٹھ لوگوں کی گواہی ہوئی تھی ، لیک ثبوت کے فقدان میں سبھی گیارہ غیر ملکی شہریوں کو بری کردیا گیا ۔ تبلیغی جماعت کے ان گیارہ افراد کو رڑگاوں سے لاک ڈاون کے دوران گرفتار کیا گیا تھا ۔ مشرقی سنگھ بھوم ضلع کے مسابنی کے سوانس پور کوارنٹائن سینٹر میں سبھی کو رکھا گیا تھا ۔ جادوگوڑا تھانہ میں ان کے خلاف لاک ڈاون کی خلاف ورزی اور غیر ملکی ویزا کے غلط استعمال کا معاملہ درج کیا گیا تھا ۔ جھارکھنڈ ہائی کورٹ سے انہیں گیارہ اگست 2020 کو ضمانت ملی تھی ۔


بچاو فریق کے وکیل ویریندر سنگھ نے بتایا کہ ایف آئی آر میں جائے واقعہ مسابنی بتایا گیا تھا ، لیکن پولیس کے ذریعہ عدالت میں گرفتاری رڑگاوں میں ہونے کا ثبوت پیش کیا گیا ۔ ایسے میں جب جائے واقعہ مسابنی نہیں تھا تو عدالت نے پورے معاملہ میں ثبوت کے فقدان میں بری کرنے کا فیصلہ کیا ۔


عدالت سے بری ہونے کے بعد سبھی غیر ملکی شہری اپنے ملک لوٹیں گے ۔ ان غیر ملکی شہریوں میں کرغستان کے غلام الدین ، رستم نور کورس ، جھانربک چینالیو اور اسلیبنک نورگازیو اور قزاقستان کے شاکر شاہ ، ذاکر ، اسماعیل مشانلو ، الیاس میانو اور چین کے یے دیہہ ای ، منائس اور مرللی شامل ہیں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Feb 06, 2021 05:13 PM IST