ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

جھارکھنڈ : خالد رشید سول جج کے عہدہ پر ہوئے فائز ، اہل خانہ میں خوشی کی لہر

خالد رشید نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ایل ایل بی کرنے کے بعد رانچی کے نیشنل لا یونیورسٹی سے ایل ایل ایم کیا تھا ۔ خالد رشید نے گزشتہ سال جھارکھنڈ جوڈیشیری کے امتحان میں کامیابی حاصل کی تھی ، لیکن کورونا اور لاک ڈاؤن کی وجہ سے تمام 86 کامیاب امیدواروں کو تقررنامہ کی فراہمی میں تاخیر ہوئی ہے ۔

  • Share this:
جھارکھنڈ : خالد رشید سول جج کے عہدہ پر ہوئے فائز ، اہل خانہ میں خوشی کی لہر
جھارکھنڈ : خالد رشید سول جج کے عہدہ پر ہوئے فائز ، اہل خانہ میں خوشی کی لہر

رانچی میں ڈورنڈہ کے باشندہ خالد رشید علی احمد کی سول جج کے عہدے پر بحالی ہوئی ہے ۔ جھارکھنڈ پبلک سروس کمیشن کی سفارش پر خالد کے ساتھ جملہ 86 سول جج کی تقرری کی گئی ہے ۔ خالد رشید کی اس نمایاں کامیابی سے ان کے گھر والے کافی خوش ہیں ۔ خالد رشید نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ایل ایل بی کرنے کے بعد رانچی کے نیشنل لا یونیورسٹی سے ایل ایل ایم کیا تھا ۔ خالد رشید نے گزشتہ سال جھارکھنڈ جوڈیشیری کے امتحان میں کامیابی حاصل کی تھی ، لیکن کورونا اور لاک ڈاؤن کی وجہ سے  تمام 86 کامیاب امیدواروں کو تقررنامہ کی فراہمی میں تاخیر ہوئی ہے ۔


گزشتہ جمعرات کو جھارکھنڈ ہائی کورٹ میں ان تمام کامیاب امیدواروں کو تقررنامہ فراہم کیا گیا ۔ کامیاب ہونے والے 86 امیدواروں میں 8 مسلم امیدواروں کے نام شامل ہیں ۔ بتایا جاتا ہے خالد کو چھوڑ بقیہ تمام کامیاب مسلم امیدواروں کا تعلق ریاست اترپردیش سے ہے۔


جوڈیشیری امتحانات میں کامیابی اور سول جج کے عہدے پر فائز ہونے پر خالد رشید علی احمد اور ان کے گھر والے کافی خوش ہیں ۔ خالد رشید کہتے ہیں کہ وہ اس کامیابی سے کافی خوش ہیں ، کیونکہ وہ اپنے ملک اور اپنے اہل خانہ کے لئے کچھ کرنے جا رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ جوڈیشیری پر آج بھی لوگوں کا یقین برقرار ہے ۔ خالد نے کہا کہ اس کے بغیر ڈیموکریسی نہیں چل سکتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ چیک اینڈ بیلنس کے لئے جوڈیشیری کا بڑا ہاتھ رہا ہے ۔


خالد رشید علی احمد اور ان کے گھر والے کافی خوش ہیں ۔
خالد رشید علی احمد اور ان کے گھر والے کافی خوش ہیں ۔


خالد رشید نے عوام کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جب بھی لوگوں کے ساتھ ناانصافی ہوتی ہے ، تو عدالت کا دروازہ کھٹکھٹاتے ہیں ۔ خالد رشید نے کہا کہ اسی سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ عوام کو عدالت پر کتنا بھروسہ ہے ۔ جسٹس خالد رشید نے واضح کیا کہ وہ عوام کی امیدوں پر کھرا اترنے کی کوشش کریں گے ۔ تاکہ ملک کو آگے لے جانے میں مدد مل سکے ۔

وہیں خالد رشید علی احمد کے والد ایڈوکیٹ مختار احمد نے اپنے لخت جگر کی کامیابی پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اپنے چھوٹے بیٹے خالد کی اس کامیابی پر انہیں فخر ہے ۔ انہوں نے خالد رشید سے مزید ترقی کی امیدوں کا اظہار کیا ۔ جسٹس خالد رشید کی بڑی بہن ایڈوکیٹ خالیدہ حیا رشید نے بھی خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بچپن سے ذہین اور مطالعہ میں غرق رہنے والے خالد رشید کی اس کامیابی سے کچھ بہتر کرنے کا جذبہ پیدا ہوا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قوم کے دیگر بچوں کے لئے بھی خالد رشید کی یہ کامیابی مشعل راہ ہے۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Sep 18, 2020 08:23 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading