ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

مدھیہ پردیش : تنخواہ بڑھانے کے مطالبہ کو لے کر ڈاکٹروں نے شیوراج حکومت کو دیا الٹی میٹم

آیورویدک ڈاکٹرس وفد کے ڈاکٹر روہت کہتے ہیں کہ محکمہ صحت نے جب ان کا تقرر کیا تھا ، تب انہیں ان کے کام کے ساتھ ان کی تنخواہ میں اضافہ کا یقین دلایا گیا تھا ۔ لیکن کورونا لاک ڈاون میں کورونا مریضوں کے سیمپل لینے کا کام ستر فیصد آیورویدک ڈاکٹرس کرتے ہیں ، اس کے باوجود تین مہینے میں ان کی تنخواہ میں کوئی اضافہ نہیں کیا گیا ہے ۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش : تنخواہ بڑھانے کے مطالبہ کو  لے کر ڈاکٹروں  نے شیوراج حکومت کو دیا الٹی میٹم
مدھیہ پردیش : تنخواہ بڑھانے کے مطالبہ کو لے کر ڈاکٹروں نے شیوراج حکومت کو دیا الٹی میٹم

مدھیہ پردیش میں کورونا کے قہر کے بیچ حکومت کی وعدہ خلافی اس کے لئے سردرد بنتی جا رہی ہے۔ دو روز قبل اپنے مطالبات کو لے کر کورونا جانباز این ایم ، اسٹاف نرس ، پیرامیڈیکل اسٹاف اور ڈاکٹروں نے حکومت کے خلاف اپنا محاذ کھولتے ہوئے دو مہینے سے تنخواہ نہ ملنے کو لے کر احتجاج شروع کیا تھا اور ابھی احتجاج کے وہ گھنے بادل ہٹے بھی نہیں تھے کہ آج آیوروید ڈاکٹروں نے بھی اپنے مطالبات کو لے کر محکمہ صحت کو الٹی میٹم دیدیا ہے ۔


اس سے قبل محکمہ آیوش کے ڈاکٹر بھی وزیر صحت سے مل کر اپنی شکایت درج کراچکے ہیں ، لیکن جس طرح سے آیورویدک ڈاکٹروں نے اپنے اعلی سطحی وفد کے ساتھ سی ایم ایچ او سے ملاقات کر کے انہیں اپنے سات رکنی مطالبات کا میمورنڈم پیش کیا ہے ۔ اس سے محکمہ صحت کی مشکلات میں اضافہ ہوگیا ہے۔


آیورویدک ڈاکٹرس وفد کے ڈاکٹر روہت کہتے ہیں کہ محکمہ صحت نے جب ان کا تقرر کیا تھا ، تب انہیں ان کے کام کے ساتھ  ان کی تنخواہ میں اضافہ کا یقین دلایا گیا تھا ۔ لیکن کورونا لاک ڈاون میں کورونا مریضوں کے سیمپل لینے کا کام ستر فیصد آیورویدک ڈاکٹرس کرتے ہیں ، اس کے باوجود تین مہینے میں ان کی تنخواہ میں کوئی اضافہ نہیں کیا گیا ہے ۔ جب محکمہ صحت ڈینٹل ڈاکٹروں کو فی سیمپل سو روپے کی اضافی ادائیگی کر رہا ہے ، تو وہی کام تو آیورویدک ڈاکٹرس بھی کر رہے ہیں تو ان کے ساتھ دوہرا رویہ کیوں اپنایا جا رہا ہے ۔ ہم نے اپنا میمورینڈم سی ایم ایچ او کو دیدیا ہے ۔ اگر ہماری مانگیں فورا نہیں مانی جاتی ہیں اور ہماری تنخواہ میں اضافہ کے ساتھ فی سیمپل جانچ کے لئے سو روپے اضافی نہیں دئے جاتے ہیں ، تو ہم لوگ کام بند کردیں گے ۔ کورونا مریضوں کے سیمپل لینے کا کام ستر فیصد ہم ہی لوگ کرتے ہیں ۔


وہیں کانگریس کے سینئر لیڈر و سابق وزیر قانون پی سی شرما نے آیورویدک ڈاکٹروں کے مطالبہ کو جائز ٹھہرایا ہے ۔ پی سی شرما کہتے ہیں کہ جو لوگ کورونا وبا میں اپنی جان پر کھیل کر لوگوں کی صحت کی جانچ کر رہے ہیں ، سرکار کے پاس ان کی بات سننے کیلئے وقت نہیں ہے ، اس سے زیادہ شرمناک کچھ نہیں ہو سکتا ہے ۔ سرکار کو چاہئے کہ اقتدار کے نشے سے باہر نکلے اور آیورویدک ڈاکٹروں کے ساتھ دو دن پہلے کورونا واریئرس نے جو مطالبہ کیا تھا ، اسے پورا کرے ۔

وہیں مدھیہ پردیش کے وزیر صحت ڈاکٹر نروتم مشرا کہتے ہیں کہ آیورویدک ڈاکٹروں کا میمورنڈم آج سامنے آیا ہے ۔ ان کی مانگ پر جو بھی قانون کے مطابق ہوگا ، کیا جائے گا ۔ ہم کانگریس کی طرح وعدہ نہیں کرتے ہیں ، بلکہ کام کرنے پر یقین کرتے ہیں اور کام کر رہے ہیں ، تبھی کورونا کی گروتھ ریٹ بڑھ کر بہتر فیصد ہوگئی ہے۔

واضح رہے کہ بھوپال انتظامیہ نے کورونا کی چین توڑنے کے لئے بیس اور اکیس جون کو شہر کی گھنی بستی کے ساتھ جھگی جھونپڑیوں میں ایک لاکھ لوگوں کی ہیلتھ کا سروے کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ آیورویدک ڈاکٹروں اور آیوش ڈاکٹروں کی پانچ لوگوں کی ٹیم کے ساتھ  محکمہ صحت نے فیلڈ میں اترنے کا اعلان کیا تھا ۔ اگر محکمہ صحت نے ان کے مطالبات پورے نہیں کئے ، تو نہ صرف سروے اثر انداز ہوگا ، بلکہ کورونا مریضوں کے سیمپل کا کام بھی متاثر ہوگا اور حکومت کی کوششوں کو بڑا نقصان پہنچے گا ۔
First published: Jun 18, 2020 11:39 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading