ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

مدھیہ پردیش : اردو اساتذہ کی تقرری تک تحریک رہے گی جاری، بزم ضیا کے اراکین نے وزیر اعلی کو بھیجا میمورنڈم

بزم ضیا کے صدر فرمان اللہ فرمان ضیائی کہتے ہیں کہ حکومت کے ذریعہ محکمہ اعلی تعلیم کے کالجوں میں ساڑھے چار اساتذہ کے لئے جو نئی اسامیوں کو نوٹیفکیشن جاری کیا گیا ہے ، اس کا ہم خیر مقدم کرتے ہیں اور اسی کے ساتھ ہم اس میں اردو اساتذہ کی تقرری کو شامل کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں ۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش : اردو اساتذہ کی تقرری تک تحریک رہے گی جاری، بزم ضیا کے اراکین نے وزیر اعلی کو بھیجا میمورنڈم
مدھیہ پردیش : اردو اساتذہ کی تقرری تک تحریک رہے گی جاری، بزم ضیا کے اراکین نے وزیر اعلی کو بھیجا میمورنڈم

بھوپال : مدھیہ پردیش میں بی جے پی حکومت کے ذریعہ سب کا ساتھ سب کا وکاس کی باتیں بھلے ہی کی جاتی ہو ، مگر عملی طور پر اس کا فقدان ہے ۔ مدھیہ پردیش محکمہ اعلی تعلیم کے ذریعہ ریاست کے کالجوں میں اساتذہ کی تقرری کے لئے ساڑھے چار سونئی اسامیوں کا اعلان کیا ، جس میں اردو کو چھوڑکر سبھی مضامین کے اساتذہ کا عہدہ شامل ہے ۔ بزم ضیا نے محکمہ اعلی تعلیم کے نوٹیفکیشن کو غیر آئینی قرار دیتے ہوئے وزیر اعلی شیوراج سنگھ کو میمورنڈم بھیج کر محکمہ اعلی تعلیم کے لئے ذریعہ اساتذہ کی تقرری کو لے کر جاری کئے گئے نوٹیفکیشن میں اردو اساتذۃ کو بھی شامل کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔


بزم ضیا کے صدر فرمان اللہ  فرمان ضیائی کہتے ہیں کہ حکومت کے ذریعہ محکمہ اعلی تعلیم کے کالجوں میں ساڑھے چار اساتذہ کے لئے جو نئی اسامیوں کو نوٹیفکیشن جاری کیا گیا ہے ، اس کا ہم خیر مقدم کرتے ہیں اور اسی کے ساتھ ہم اس میں اردو اساتذہ کی تقرری کو شامل کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں ۔ ہم لوگ وزیر اعلی شیوراج سنگھ سے ملاقات کرنا چاہتے تھے ، مگر وزیر اعلی کے دہلی میں ہونے کے سبب ہماری ملاقات نہیں ہو سکی ہے اور بزم ضیا کے اراکین نے اردو اساتذہ کی تقرری کے مطالبہ کا میمورنڈم وزیر اعلی کو بھیجا ہے ۔ اسی کے ساتھ ہم گورنر سے بھی ملاقات کر کے اردو اساتذہ کی تقرری کا مطالبہ کریں گے ۔ ہماری یہ تحریک تب تک جاری رہے گی ، جب تک مدھیہ پردیش میں اردو اساتذہ کی تقرری اور اسکولوں میں اردو تدریس کو یقینی نہیں بنایا جاتا ہے ۔


وہیں مدھیہ پردیش مسلم ایجوکیشن سوسائٹی کے صدر عارف عزیز کہتے ہیں کہ اردو کے ساتھ حکومتوں کا سوتیلا سلوک سمجھ سے باہر ہے ۔ اردو اسی سر زمین کی زبان ہے اور اس زبان نے تحریک آزادی میں جو کردار ادا کیا ہے ، وہ کسی سے پوشیدہ نہیں ہے ، اس کے باؤجود اردو کے ساتھ امتیازی سلوک جاری ہے ۔ مسلم ایجوکیشن سوسائٹی بھی اردو اساتذہ کی اسکولوں میں تقرری کو لے کر وزیر اعلی اور وزیر برائے اسکول ایجوکیشن اندر سنگھ پرمار کو خط لکھ چکی ہے ۔ آج ہم لوگوں نے بزم ضیا کے بینرتلے میٹنگ کر کے مشترکہ طور پر تحریک چلانے کا فیصلہ کیا ہے ۔


بزم ضیا کے سینئر رکن کلیم اختر کہتے ہیں کہ کورونا کے قہر میں اردو کو لے کر ہماری تحریک سرد ضرور پڑ گئی تھی ، مگر اب حالات سازگار ہو رہے ہیں اور ہم اردو کو لے کر حکومت سے مطالبہ کرنے کے ساتھ اردو کے تئیں عوامی بیداری کو لے کر بھی تحریک چلائیں گے ۔ عوام بیدار ہوں گے تو زبان کے لئے ماحول خود بخود سازگار ہوگا ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 30, 2021 10:52 PM IST