உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    MP News: تحریک آزادی میں علما کی قربانیوں کو نئی نسل تک پہنچانے کیلئے چلائی جائے گی مہم

    MP News: تحریک آزادی میں علما کی قربانیوں کو نئی نسل تک پہنچانے کیلئے چلائی جائے گی مہم

    MP News: تحریک آزادی میں علما کی قربانیوں کو نئی نسل تک پہنچانے کیلئے چلائی جائے گی مہم

    Bhopal News: عارف مسعود فینس کلب کے ذریعہ تحریک آزادی میں علمائے دین کی قربانیاں کے عنوان سے منعقدہ ہفت روزہ تقریب میں جب نئی نسل کے طلبا نے اپنی تحقیق کے بعد بڑی تعداد میں گمنام مجاہدین آزادی کے نام پیش کئے تو سننے والے انگشت بدنداں رہ گئے ۔

    • Share this:
    بھوپال : ملک گیر سطح پر آزادی کا امرت مہوتسو منانے کے ساتھ گھر گھر ترنگا لگانے کی مہم اور پھر جشن آزادی تقریب کا ملک گیر سطح پر پر جوش انداز میں انعقاد تو کیا گیا لیکن ملک کی بڑی آبادی تحریک آزادی میں علمائے دین کی عظیم قربانیوں سے واقف نہیں ہے ۔ علمائے دین کی قربانیوں کے نام پر ہمارے قائدین اور دانشور چند لوگوں کے نام لیکر اپنا فرض پورا کر لیتے ہیں، جب کہ حقیقت یہ ہے کہ ملک کی آزادی کے لئے سترہ سو ستاون سراج الدولہ کے ذریعہ شروع کی گئی آزادی کی تحریک سے انیس سو سینتالیس ملک کی آزادی تک لاکھ سے زیادہ علمائے دین نے اپنی قربانیاں دیکر ملک کو آزاد کرایا ہے۔

    عارف مسعود فینس کلب کے ذریعہ تحریک آزادی میں علمائے دین کی قربانیاں کے عنوان سے منعقدہ ہفت روزہ تقریب میں جب نئی نسل کے طلبا نے اپنی تحقیق کے بعد بڑی تعداد میں گمنام مجاہدین آزادی کے نام پیش کئے تو سننے والے انگشت بدنداں رہ گئے ۔ عارف مسعود فینس کلب نے پروگرام کی کامیابی سرشار ہوکر اس تحریک کو اب بھوپال سے آگے نکل کر مدھیہ پردیش کی سطح پر شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ زیادہ سے زیادہ طلبا اس  تحریک کا حصہ بن کر علمائے دین تحریک آزادی میں پیش کی گئی قربانیوں کو نئی نسل تک پہنچانے کا حصہ بن سکیں ۔

    عارف مسعود فینس کلب کے صدر و بھوپال وسط حلقہ سے کانگریس ایم ایل اے عارف مسعود نے نیوز 18 اردو سے خاص بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں خوشی ہے کہ ہم نے تحریک آزادی میں علمائے دین کی قربانیاں کے عنوان سے جو ہفت روزہ پروگرام کا انعقاد کیا تھا، اس میں بڑی تعداد میں طلبا وطالبات نے شرکت کی۔ طلبا نے اپنے مطالعہ سے  تحریک آزادی میں علمائے دین کے حوالے سے ابتک پیش کئے جانے والے چند ناموں سے آگے نکل کر نئے نام تاریخ کی کتابوں کے حوالے سے پیش کئے ہیں جو خوش آئند ہیں۔ ہم نے یہاں کامیاب طلبا کو سرٹیفکیٹ کے ساتھ انعام بھی دیا ہے اور آگے بھی ان شااللہ یہ سلسلہ جاری رہے گا۔

     

    یہ بھی پڑھئے: کئی ریاستوں میں پھر گہرا سکتا ہے بجلی بحران، IEX نے 13 ریاستوں کو پاور ایکسینچ سے روکا


    ابھی تک ہفت روزہ پروگرام کا انعقاد صرف بھوپال کی سطح پر کیا جاتا تھا مگر اب اسے صوبائی سطح پر کیا جائے گا تاکہ اس تحریک سے زیادہ سے زیادہ طلبا جڑسکیں اور تحریک آزادی میں علمائے دین کی عظیم قربانی کا سچ سب کے سامنے آسکے۔ تحریک آزادی سے ایک خاص ذہن کے ساتھ علمائے دین کے نام کو مٹانے کی کوشش کی گئی اور ہمارے لوگوں کی خاموشی بھی معنی خیز رہی ہے ۔ میں چاہتا ہوں کہ جو غلطیاں ہوگئیں ہیں، اسے درست کیا جائے اور سچ کو سامنے لایا جائے ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: بیوی نے جسمانی تعلقات بنانے سے کیا منع تو شوہر نے اٹھایا اتنا خوفناک قدم


    تحریک آزادی میں علمائے دین کی قربانیاں پروگرام میں شرکت کرنے والی مسکان  کہتی ہیں کہ جب اس موضوع کو سنا تو شوق ہوا کہ اس پروگرام میں شرکت کی جائے لیکن جب کتاب تلاش شروع کی تو بڑی مشکل پیش آئی ۔ بیشتر کتابوں میں علمائے دین کی قربانیوں کے نام پر چند نام کو پیش کرکے اکتفا کر لیا گیا ہے۔ ہم نے منتظمین سے بھی رابطہ کیا تو انہوں نے اپنا بک لیٹ دیا جس میں سو سے زیادہ علمائے دین کے نام تھے ۔ پھر ہم نے سر سید احمد خان کی کتاب اسباب بغاوت ہند و دوسری کتابوں کا مطالبہ کیا تو کچھ اور نئے نام سامنے آئے ۔

    ڈاکٹر مہتاب عالم کا مضمون مسلم مجاہدین آزادی سے بھی استفادہ کیا ۔ پہلے جہاں میں چند ناموں کو جانتی تھی اب میرے کلکشن میں تین سو سے زیادہ مسلم مجاہدین آزادی کے نام شامل ہوگئے ہیں ۔ میں تو چاہوں گی کہ یہ پروگرام جارہی رہنا چاہیئے تاکہ تحریک آزادی کے حوالے سے بڑا سچ عوام کے سامنے آسکے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: