உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مدھیہ پردیش : اقلیتوں کے مسائل کو لے کر کانگریس نے لوک آیکت میں کی شکایت

    مدھیہ پردیش : اقلیتوں کے مسائل کو لے کر کانگریس نے لوک آیکت میں کی شکایت

    مساجد کمیٹی کے سابق سکریٹری اور بھوپال ضلع کانگریس کمیٹی کے سابق صدر ایس ایم سلمان کہتے ہیں کہ شیوراج سنگھ کہ سابق حکومت اور اب سولہ ماہ کی حکومت میں اقلیتی اداروں کو ایک سازش کے تحت تباہ کیا گیا ہے ۔

    • Share this:
    بھوپال : مدھیہ پردیش میں دوہزار اٹھارہ سے اب تک دو حکومتیں بدل چکی ہیں ، لیکن اقلیتوں کے مسائل حل ہونے کا نام نہیں لے رہے ہیں ۔ دسمبر دوہزار اٹھارہ سے مارچ دوہزار بیس تک پندرہ ماہ کی کمل ناتھ حکومت اس کے بعد اب تک کی سولہ ماہ کی شیوراج سنگھ حکومت نہ صرف اقلیتی ادارے بلکہ اقلیتوں کو حاشیہ پر ہی رکھنے کا کام کیا گیا ہے ۔ کمل ناتھ حکومت میں حج کمیٹی ، مساجد کمیٹی اور اردو اکادمی کی تشکیل تو ہوئی ، لیکن مدرسہ بورڈ، اقلیتی مالیاتی کارپوریشن اور وقت بورڈ کی جانب توجہ نہیں دی گئی ۔ جبکہ شیوراج سنگھ حکومت کے سولہ مہینے میں حج کمیٹی ، مساجد کمیٹی ، وقف بورڈ، مدرسہ بورڈ، اقلیتی کمیشن ، اقلیتی ترقیاتی مالیاتی کارپوریشن جیسے اہم اداروں کی تشکیل ہی نہیں کی گئی ہے۔ ان اداروں میں کمیٹی اور سربراہ کا تقرر نہیں ہونے کے سبب افسران کا تقرر کر کے کام چلایا جا رہا ہے ، لیکن کانگریس نے حکومت پر ضابطہ کی خلاف ورزی کرکے نا اہل افسران کے تقرر کا الزام لگایا ہے ۔ وہیں حکومت نے کانگریس نے اپنے داغدار دامن کو آئینے میں دیکھنے کا مشورہ دیا ہے ۔

    مساجد کمیٹی کے سابق سکریٹری اور بھوپال ضلع کانگریس کمیٹی کے سابق صدر ایس ایم سلمان کہتے ہیں کہ شیوراج سنگھ کہ سابق حکومت اور اب سولہ ماہ کی حکومت میں اقلیتی اداروں کو ایک سازش کے تحت تباہ کیا گیا ہے ۔ اقلیتی ادارے وقف بورڈ، مدرسہ بورڈ، مساجد کمیٹی ، حج کمیٹی اور اقلیتی کمیشن کی اب تک تشکیل نہیں کئے جانے سے اقلیتوں کے مسائل میں اضافہ ہو گیا ہے ۔ وہیں حکومت نے اقلیتی اداروں میں بالخصوص حج کمیٹی ، مساجد کمیٹی ، وقف بورڈ میں جن لوگوں کا تقرر کیا ہے وہ اس کی اہلیت نہیں رکھتے ہیں ۔ وقف رولس اور حج کمیٹی کے سینٹرل رولس میں افسران کے تقرر کو لیکر جو ضابطہ بیان کیا گیا ہے ، حکومت نے ان سب کو نظر انداز کرتے ہوئے نا اہل لوگوں کا تقرر کیا ہے ۔ ہم نے اس معاملے کو لیکر اقلیتی وزیر رام کھلاون پٹیل اور محکمہ اقلیتی فلاح وبہبود کے پرنسپل سکریٹری کے خلاف لوک آیکت میں شکایت کی ہے ۔ اگر پندرہ دن میں اس معاملے میں کوئی کارروائی نہیں ہوتی ہے ، تو اس کے خلاف عدالت سے رجوع کریں گے اور سڑک سے اسمبلی تک اقلیتوں کے حقوق کو لیکر تحریک چلائیں گے ۔

    وہیں مدھیہ پردیش کے اقلیتی وزیر رام کھلاون پٹیل کا کہنا ہے مدھیہ پردیش میں اقلیتیوں کی پسماندگی کے لئے کانگریس ہی ذمہ دار ہے ۔ کانگریس نے اقلیتوں کو صرف ووٹ بینک کے لئے استعمال کیا اور ان کی ترقی کےلئے کچھ نہیں کیا ۔ پندرہ ماہ کی کمل ناتھ کی حکومت میں کچھ کیا گیا ہو تو بتا دیا جائے ۔ ہماری سرکار سبھی کو ترقی کو کے یکساں مواقع فراہم کرتی ہے ۔ اور جو صاحب تحریک چلا رہے ہیں ان کا دامن خود داغدار ہے ۔

    انہوں نے مساجد کمیٹی میں سکریٹری رہتے ہوئے جو غیر قانونی کام کیا ہے اور اس کی جانچ کی جا رہی ہے ۔ جانچ رپورٹ آنے کے بعد ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: