ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

مدھیہ پردیش : بھوپال کی تاریخی مساجدکی تزئین کاری کی مہم ، محبان بھارت کے وفد نے شاہی اوقاف کے ذمہ داران سے کی ملاقات

محبان بھارت کے نمائندہ وفد نے تاریخی مساجد اور دیگر تاریخی عمارات کی تزئین کاری کو لیکر بھوپال شاہی اوقاف کے ذمہ داران سے ملاقات کی اور تاریخی مساجد کی تزئین کاری میں اپنے ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا ۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش : بھوپال کی تاریخی مساجدکی تزئین کاری کی مہم ، محبان بھارت کے وفد نے شاہی اوقاف کے ذمہ داران سے کی ملاقات
مدھیہ پردیش : بھوپال کی تاریخی مساجدکی تزئین کاری کی مہم ، محبان بھارت کے وفد نے شاہی اوقاف کے ذمہ داران سے کی ملاقات

بھوپال : بھوپال کو نوابوں کی نگری جھیلوں اور تالابوں کے شہر کے نام سے جانا جاتا ہے ۔ اس کے امتیازات میں جہاں قدرت کا حسن شامل ہے تو وہیں اسے مساجد کا بھی شہر کہا جاتا ہے۔ اس شہر کی بیشتر تاریخی مساجد کی تعمیر بیگمات بھوپال کے ذریعہ کی گئی ہے ۔ لیکن وہی تاریخی مساجد جوبھوپال کے حسن کی ضامن ہوا کرتی تھی وہیں اب عدم توجہی کے سبب خستہ حالی کا شکار ہو رہی ہیں ۔ محبان بھارت کے نمائندہ وفد نے تاریخی مساجد  اور دیگر تاریخی عمارات کی تزئین کاری کو لیکر بھوپال شاہی اوقاف کے ذمہ داران سے ملاقات کی اور تاریخی مساجد کی تزئین کاری میں اپنے ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا ۔


محبان بھارت کے قومی صدر جاوید بیگ کہتے ہیں کہ بھوپال اقبال میدان سے دو سو کلومیٹر کے اطراف میں محلات شاہی کے علاوہ تاریخی مساجد بھی ہیں ، لیکن یہ سب کے سب خستہ حالی کا شکار ہیں ۔ بھوپال کی تاریخی موتی مسجد جو سنگ سرخ سے تعمیر ہوئی تھی اب عدم توجہی کے سبب  اس کے پتھر کالے پڑگئے ہیں ۔ ہم نے شاہی اوقاف کے سکریٹری اعظم ترمذی سے ملاقات کی ہے اور ان سے تاریخی موتی مسجد کے ساتھ دوسری مساجد اور تاریخی عمارات کی تزئین کاری کا نہ صرف مطالبہ کیا ہے بلکہ ہر ممکن تعاون دینے کا بھی عہد کیا ہے ۔ شاہی اوقاف نے آئندہ دیڑھ ماہ میں موتی مسجد کی تزئین کاری شروع کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔ ہم سے جوبھی تعاون ہوگا وہ ہم لوگ کریں گے ۔ ہماری تظیم چاہتی ہے کہ تاریخی مساجد اور تاریخی عمارات کی خستہ حالی کو درو کیا جائے ۔ یہ قیمتی ورثہ ہے اگر یہ آج نہیں سنبھالا گیا تو آنے والی نسلیں ہمیں معاف نہیں کریں گی۔


وہیں شاہی اوقاف کے سکریٹری اعظم ترمذی کہتے ہیں کہ محبان بھارت کے وفد نے ملاقات کی ہے اور موتی مسجد کی تزئین کاری میں تعاون کا یقین دلایا ہے ۔ شاہی اوقاف کے ذریعہ یہ کام اب تک شروع ہوچکا ہوتا ، مگر کورونا قہر کے سبب اس میں تاخیر ہوئی ہے ۔ ان شا اللہ دیڑھ ماہ کے اندر ہم لوگ موتی مسجد کی تزئین کاری کا کام شروع کردیں گے ۔ ہماری بھی کوشش ہے کہ قیمتی تاریخی سرمایہ کا تحفظ ہو ۔


موتی مسجد کی تعمیر بھوپال کی دوسری خاتون نواب سکندر جہاں بیگم کے ذریعہ کی گئی تھی ۔ یہ مسجد دہلی جامعہ مسجد کی طرز پر بنائی گئی ہے ۔ مسجد میں سنگ سرخ کا کام نواب سکندر جہاں بیگم کے ذریعہ کروایا گیا تھا ۔ نواب سکندر جہاں بیگم کے انتقال کے بعد مسجد کے اندر سنگ مرمر سے ان کی بیٹی نواب شاہجہاں بیگم نے ادھورے کام کو پورا کروایا تھا۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jun 11, 2021 08:43 PM IST