உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Bhopal News : کورونا قہر میں مسلم ایجوکیشن اینڈ کیریر پروموشن سو سائٹی کا بڑا قدم

    Bhopal News : کورونا قہر میں مسلم ایجوکیشن اینڈ کیریر پروموشن سو سائٹی کا بڑا قدم

    Bhopal News : کورونا قہر میں مسلم ایجوکیشن اینڈ کیریر پروموشن سو سائٹی کا بڑا قدم

    Madhya Pradesh News : کورونا قہر میں طلبہ کو مشکلات سے بچانے کے لئے مسلم ایجوکیشن اینڈ کیریر پروموشن سوسائٹی نے ضرورتمند طلبہ کو مفت کتابیں فراہم کرنے کا اہم سلسلہ شروع کیا ہے۔

    • Share this:
    بھوپال : کورونا قہر میں طلبہ کو مشکلات سے بچانے کے لئے مسلم ایجوکیشن اینڈ کیریر پروموشن سوسائٹی نے ضرورتمند طلبہ کو مفت کتابیں فراہم کرنے کا اہم سلسلہ شروع کیا ہے۔ مفت کتابیں فراہم کرنے کا سلسلہ کسی ایک مخصوص طبقہ کے لئے نہیں بلکہ بلا لحاظ قوم و ملت سبھی کے لئے سوسائٹی نے اپنے دروازے کھول رکھے ہیں۔ سوسائٹی کا ماننا ہے کہ کورونا قہر میں ایسے بہت سے طلبہ ہیں ، جنہوں نے مالی مشکلات اور مہنگی کتابوں کے دستیا ب نہیں ہونے سے اپنی تعلیم کو ترک کردیا تھا اب کتابوں کی فراہمی کے بعد ان کی تعلیم کا سلسلہ دوبارہ شروع ہو سکا ہے ۔

    مسلم ایجوکیشن اینڈ کیریر پروموشن سوسائٹی کے سکریٹری ڈاکٹر ظفر حسن کہتے ہیں کہ ایک بار ہمیں اپنی بچیوں کے لئے کتاب کی ضرورت ہوئی اور ہم پرانی کتاب خریدنے گئے تو ہم نے دیکھا کہ وہاں کتاب بیچنے والے کتنی مہنگی کتابیں بیچتے ہیں ۔ وہیں سے خیال آیا کہ کیوں نہ ہم بھی سوسائٹی میں بک بینک بنائیں اور یہاں سے بچوں کو مفت کتابیں فراہم کی جائیں ۔ ابتدا میں اس کی اتنی مقبولیت نہیں تھی لیکن کورونا قہر میں اس کی اہمیت اور افادیت دونوں میں اضافہ ہوگیا ہے ۔ لائبریری سے صرف مسلمان ہی نہیں بلا لحاظ قوم و ملت سبھی لوگ اپنے سبجیکٹ کتابیں لے جاسکتے ہیں ۔ طلبہ کی بڑی تعداد آتی ہے اور اپنی ضرورت کے مطابق کتابیں لے جاتی ہے ۔ لائبریری میں کے جی سے پی ایچ ڈی تک کے طلبہ کے لئے کتابیں موجود ہیں۔

    ممتاز شاعر منطر بھوپالی کہتے ہیں کہ دنیا کے مختلف ممالک میں جانا ہوا ، لیکن کتابوں کو مفت فراہم کرنے کا ایسا سلسلہ کہیں نہیں دیکھا۔ آپ کو کتابوں کا شوق ہے ۔ آپ مطالعہ کرنا چاہتے ہیں تو کتابیں موجود ہیں ۔ کتابوں سے دوستی کیجئے اور منزل کے حصول کیلئے سرگرداں ہو جائیے ۔ مسلم ایجوکیشن اینڈکیریر پروموشن سوسائٹی نے جس طرح سے اس لائبریری کو شروع کیا ہے ، اسی لائبریری ہر شہر میں قائم کی جانا چاہئے ۔ تاکہ غریب و مجبور طلبہ بھی خود کو زیور تعلیم سے آراستہ کر سکیں۔

    ممتاز سماجی کارکن ڈاکٹر وسیم اختر کہتے ہیں کہ کتابوں کو حاصل کرنے کی مشکلات کیا ہوتی ہیں ، اس کے بارے میں بہت اچھی طرح سے جانتا ہوں۔ میں بھی ایسے دور سے گزر چکا ہوں ۔ بچے کی تعلیم میں کتابوں کا خرچہ بہت ہوتا ہے اور اس کے مصارف کو برداشت کرنا متوسط طبقے کے لئے آسان نہیں ہوتا ہے۔ اس لائبریری میں کے جی ون سے لیکر میڈیکل انجینئرنگ تک کی کتابیں موجود ہیں ۔ اب آپ یہ بہانہ نہیں کرسکتے ہیں کہ کتابیں نہیں ہیں تو کیسے پڑھائی کریں۔ سو سائٹی نے ایک بڑا قدم اٹھایا ہے اب طلبہ کو اپنے مطالعہ کے شوق کو بڑھانا ہے اور منزل حاصل کرنا ہے ۔

    وہیں طالبہ انعمت عثمانی کہتی ہیں کہ اس لائبریری نے میری زندگی میں کتنی روشنی پیدا کی ہے اس کو بیان کرنے کے لئے میرے پاس لفظ نہیں ہیں۔ لائبریری میں نہ صرف کتابیں مفت دی جاتی ہیں بلکہ طلبہ کو ہی اس کا مالک بنادیا جاتا ہے۔ جتنے وقت تک ہم چاہیں کتاب رکھ سکتے ہیں ۔ لائبریری کو کتاب پڑھنے کے بعد واپس بھی کرسکتے ہیں یا کسی ضرورتمند کو دے بھی سکتے ہیں ۔ میں اس لائبریری سے جڑی ہوں اور میں نے آئی آئی ٹی کی تیاری بھی اس لائبریری کی مدد سے کی ہے ۔ یہ وقت کی بڑی ضرورت ہے اور اسے قائم رہنا چاہیے۔

    وہیں طالب مزمل خان کہتے ہیں کہ یہ ایسی لائبریری ہے جہاں پر طالب علم کو صرف اپنا ایڈریس اور فون نمبر رجسٹر کرنا ہوتا ہے اس کے بعد لائبریری کے ذمہ داران تمام مطلوبہ کتابیں فراہم کر دیتے ہیں ۔ملک میں گزشتہ تین سالوں سے جو حالات ہیں ایسے میں ہمیں امید نہیں تھی کہ ہماری تعلیم کا سلسلہ جاری رہے گا لیکن کورونا کے مشکل حالات میں اس لائبریری کے ذمہ داران ہماری کتابوں کی ضرورت کا ایسے ہی خیال رکھا جیسے ایک ماں اپنے بچوں کا رکھتی  ہے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: