உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    MP News: بھوپال اقبال میدان کا نام بدلنے کو لے کر بی جے پی لیڈر نے شیوراج سنگھ کو لکھا خط

    MP News: اقبال میدان کے تحفظ کو لے کر مدھیہ پردیش جمعیت علما نے کھولا مورچہ

    MP News: اقبال میدان کے تحفظ کو لے کر مدھیہ پردیش جمعیت علما نے کھولا مورچہ

    Bhopal News: مدھیہ پردیش کے تاریخی مقامات اور شہروں کا نام بدلنے کی سیاست رکنے کا نام نہیں لے رہی ہے ۔ بھوپال حبیب گنج اسٹیشن اور ہوشنگ آباد کا نام بدلنے کے بعد اب راجدھانی بھوپال کے تاریخی اقبال میدان کا نام بدلنے کا بھی بی جے پی لیڈر کے ذریعہ مطالبہ شروع ہوگیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Madhya Pradesh | Bhopal | Bhopal
    • Share this:
    بھوپال : مدھیہ پردیش کے تاریخی مقامات اور شہروں کا نام بدلنے کی سیاست رکنے کا نام نہیں لے رہی ہے ۔ بھوپال حبیب گنج اسٹیشن اور ہوشنگ آباد کا نام بدلنے کے بعد اب راجدھانی بھوپال کے تاریخی اقبال میدان کا نام بدلنے کا بھی بی جے پی لیڈر کے ذریعہ مطالبہ شروع ہوگیا ہے۔ ایم پی بی جے پی ایگزیکٹوکمیٹی کے رکن نے سی ایم شیوراج سنگھ کو خط لکھ کر شاعر مشرق علامہ اقبال کو پاکستانی شاعر بتاتے ہوئے جہاں اقبال میدان کا نام بدلنے کر کسی مجاہد آزادی کے نام پر رکھنے کا مطالبہ کیا ہے۔ وہیں مدھیہ پردیش اردو انجمنوں اور مسلم تنظیموں نے بی جے پی لیڈر کے قدم کو تنگ نظری سے تعبیر کرتے ہوئے علامہ اقبال کو محب وطن شاعر قرار دیتے ہوئے بی جے پی لیڈر سے اقبال کے کلام کو باریک بینی سے پڑھنے کا مطالبہ کیا ہے۔

    واضح رہے کہ بھوپال سے اقبال کا گہرا رشتہ رہا ہے ۔ علامہ اقبال نے بھوپال کی راحت منزل، شیش محل، شوکت محل اور ریاض منزل میں قیام کے دوران چودہ نظمیں بھی لکھی تھیں ۔ نواب بھوپال حمید اللہ خان نے اقبال کو پانچ سو روپے کا وظیفہ بھی جاری کیا تھا۔ اقبال سے بھوپال کی خاص نسبت کے سبب بھوپال کو دارالاقبال بھی کہا جاتا ہے ۔ بھوپال میں اقبال لائبریری بھی قائم کی گئی ۔ اقبال مرکز اور کل ہند اقبال ایوارڈ بھی حکومت مدھیہ پردیش کی جانب سے قائم کیا گیا۔ اقبال نے اپنے وطن کے بعد سب سے زیادہ بھوپال میں قیام کیا تھا اور یہاں کے لوگوں کو بھوپال سے اقبال کی خاص نسبت پر فخر بھی تھا۔ انیس سو چوراسی میں شیش محل جس میں علامہ اقبال نے قیام کیا تھا، اس کے سامنے واقع کھرنی والے میدان کو اقبال میدان کے نام سے منسوب کیا گیا، مگر اب یہی اقبال میدان سیاسی گھمسان کا سبب بنا ہوا ہے ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: ایل اے سی پر نگرانی کیلئے HAL تیار کررہا ہے 'ریٹری ونگ' ڈرون، چین کی ہر حرکت پر ہوگی نظر


    مدھیہ پردیش بی جے پی ایگزیکٹو کمیٹی  کے رکن سریندر شرما نے نیوز 18 اردو سے خاص بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت پورا ملک آزادی کا امرت مہوتسو منا رہا ہے ۔ ملک کی آزادی کے لئے لاکھوں لوگوں نے اپنی قربانیاں دیں ہیں، لیکن بد قسمتی سے بھوپال کے ایک میدان کا نام ایک پاکستانی شاعر علامہ اقبال کے نام پر آج بھی ہے ۔ جسے اقبال میدان کے نام پر بھی جانا جاتا ہے ۔ یہ وہی علامہ اقبال ہے جس نے پاکستان کی تجویز پر پیش کیا تھا۔ یہ وہی علامہ اقبال ہے، جس نے مسلم لیگ کی صدارت کی اور یہ وہی اقبال ہے جو پاکستان کا قومی شاعر جانا جاتا ہے ۔ میں نے سی ایم شیوراج سنگھ کو خط لکھ کر بھوپال کے اقبال میدان کا نام  مدھیہ پردیش یا دیش کے کسی شہید کے نام پر رکھا جائے، جنہوں نے ملک کی آزادی کی لڑائی لڑی۔ مجھے امید ہے کہ آزادی کے امرت مہوتسو کے موقع پر وزیر اعلی شیوراج سنگھ میری اس مانگ کو ضرور پوری کریں گے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: نکہت زین نے لگایا گولڈن پنچ، کامن ویلتھ گیمز میں لہرایا ترنگا


    وہیں مدھیہ پردیش بینظیر انصار ایجوکیشن سوسائٹی کے صدر وسابق ڈی جے پی چھتیس گڑھ ایم ڈبلیوانصاری نے بی جے پی لیڈر کے بیان کو تنگ نطری تعبیر کیا ہے ۔ ایم ڈبلیو انصاری نے نیوز 18 اردو سے خاص بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اقبال وہ شاعر ہے جس نے بھگوان رام کو امام الہند کہا ہے ۔ اقبال نے جب سارے جہاں سے اچھا ہندوستان ہمارا لکھا تو منشی پریم چند نے کانپور سے لاہور جاکر ان سے ملاقات کی تھی۔ بی جے پی لیڈر کو نفرت کی سیاست چھوڑکر اقبال کے کلام کو پڑھنا چاہئے اور دیکھنا چاہئے کہ اقبال کے بارے میں ٹیگور اور گاندھی جی و دیگر لوگوں نے کیا لکھا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ اقبال پاکستان کے شاعر تھے، انہیں معلوم کہ اقبال کا انتقال اکیس اپریل انیس سو اڑتیس کو ہوگیا تھا، جب کہ ملک کی تقسیم انہیں سو سینتالیس میں ہوئی ہے۔

    وہیں مدھیہ پردیش جمیعت علما، مدھیہ پردیش علما بورڈ، محبان بھارت نے بھی بی جے پی لیڈر کی مذمت کی ہے ۔اردو انجمنوں نے اقبال میدان کا نام بدلنے کی مانگ کرنے والے لیڈر سے اقبال میدان کی خستہ حالی کو دور کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: