உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    درگاہ کے پاس ہنومان جی کی مورتی لگانے پر ہنگامہ، شرپسندوں نے کیا پتھراؤ، دفعہ 144 نافذ

    Neemuch Controversy:  معلومات کے مطابق جھگڑے کے دوران شرپسندوں نے پتھراؤ کرکے ایک بائک کو آگ لگا دی اور ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی۔ اس واقعہ کے بعد علاقے میں کشیدگی پھیل گئی۔ 
 

    Neemuch Controversy: معلومات کے مطابق جھگڑے کے دوران شرپسندوں نے پتھراؤ کرکے ایک بائک کو آگ لگا دی اور ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی۔ اس واقعہ کے بعد علاقے میں کشیدگی پھیل گئی۔  

    Neemuch Controversy: معلومات کے مطابق جھگڑے کے دوران شرپسندوں نے پتھراؤ کرکے ایک بائک کو آگ لگا دی اور ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی۔ اس واقعہ کے بعد علاقے میں کشیدگی پھیل گئی۔  

    • Share this:
      Neemuch Controversy: مدھیہ پردیش کے نیمچ میں درگاہ کے قریب ہنومان جی کی مورتی کی تنصیب کو لے کر دو برادریوں کے درمیان جھگڑا ہوگیا۔ معاملہ ضلع کے پرانے کورٹ ایریا کا بتایا جا رہا ہے۔ معلومات کے مطابق جھگڑے کے دوران شرپسندوں نے پتھراؤ کرکے ایک بائک کو آگ لگا دی اور ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی۔ اس واقعہ کے بعد علاقے میں کشیدگی پھیل گئی۔ صورتحال پر قابو پانے کے لیے پولیس نے دکانیں بند کروا دیں اور آنسو گیس کے گولے چھوڑ کر کر کے حالات پر قابو پانے کی کوشش کی، پولیس کو لاٹھی چارج بھی کرنا پڑا۔ فی الحال صورتحال قابو میں ہے۔ ضلع انتظامیہ نے نیمچ شہر کے علاقے میں دفعہ 144 نافذ کر دی ہے۔ پتھر بازی میں نیمچ ٹی آئی کے زخمی ہونے کی خبر ہے۔ موقع پر پولیس کی بھاری نفری تعینات ہے۔

      بتایا جا رہا ہے کہ ضلع کے پرانی کچہری علاقے میں تقریباً پانچ ہزار فٹ کی سرکاری زمین پر ایک درگاہ ہے۔ پیر کی شام تقریباً 5 بجے کچھ لوگوں نے درگاہ کے قریب ہنومان جی کی مورتی نصب کرنے کی کوشش کی۔ اس دوران درگاہ میں موجود لوگوں نے اعتراض درج کرایا۔ اس معاملے کو لے کر دونوں برادریوں کے لوگوں میں جھگڑا شروع ہو گیا۔ رات 8 بجے کے بعد جھگڑا بڑھ گیا۔ دونوں برادریوں کے لوگ بڑی تعداد میں جمع تھے۔ کچھ دیر بعد شرپسندوں نے پتھراؤ شروع کر دیا اور ایک بائک کو آگ لگا دی۔

      جھگڑے کی اطلاع ملنے کے بعد پولس نے دونوں فریق کو سمجھانے کے لیے کنٹرول روم بلایا تھا۔ اس دوران کچھ لوگوں نے موقع پر پتھراؤ شروع کر دیا اور ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی۔ اطلاع ملتے ہی پولیس کی نفری بھی موقع پر پہنچ گئی۔


      مزید پڑھئے: J&K: کشمیری پنڈتوں میں پھیلے ڈر کے درمیان پلوامہ میں دہشت گردانہ دھمکی، وادی چھوڑ دیں ورنہ

      ایس پی سورج ورما نے بتایا کہ اطلاع ملنے پر پولیس فورس کے ساتھ پہنچی، صورتحال پر قابو پانے کے لیے آنسو گیس کے گولے داغے۔ ہجوم کو منتشر کرنے کے لیے لاٹھیوں کا بھی استعمال کیا گیا۔ پولیس نے دکانیں بند کرا دیں۔ تمام دکانداروں کو گھر بھیج دیا۔ یہاں غیر اعلانیہ کرفیو جیسی صورتحال ہے۔ فی الحال صورتحال قابو میں ہے۔ احتیاطی اقدام کے طور پر علاقے میں 5 تھانوں کی پولیس فورس کو تعینات کیا گیا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ریزرو پولیس فورس کو بھی تعینات کیا گیا ہے۔ وجرا گاڑی بھی تعینات کر دی گئی ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: