ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

اعلی قیادت کی ناکامی ہے مدھیہ پردیش کا سیاسی گھماسان: ڈاکٹر عزیز قریشی

مدھیہ پردیش کی سیاست میں گزشتہ دو دنوں سے گھمسان مچا ہوا ہے۔ سیاسی گھماسان اس وقت جب شروع ہوا جب جیوترادتیہ سندھیا کے وفادار کانگریس لیڈران نے بغاوتی تیور اختیار کرتے ہوئے اپنا استعفی اسمبلی اسپیکر اور گورنر کو ارسال کیا۔

  • Share this:
اعلی قیادت کی ناکامی ہے مدھیہ پردیش کا سیاسی گھماسان: ڈاکٹر عزیز قریشی
مدھیہ پردیش کی سیاست میں گزشتہ دو دنوں سے گھمسان مچا ہوا ہے۔ سیاسی گھماسان اس وقت جب شروع ہوا جب جیوترادتیہ سندھیا کے وفادار کانگریس لیڈران نے بغاوتی تیور اختیار کرتے ہوئے اپنا استعفی اسمبلی اسپیکر اور گورنر کو ارسال کیا۔

مدھیہ پردیش کی سیاست میں گزشتہ دو دنوں سے گھمسان مچا ہوا ہے۔ سیاسی گھماسان اس وقت جب شروع ہوا جب جیوترادتیہ سندھیا  کے وفادار کانگریس لیڈران نے بغاوتی تیور اختیار کرتے ہوئے اپنا استعفی اسمبلی اسپیکر اور گورنر کو ارسال کیا۔ یہی نہیں خود جیوترادتیہ سندھیا نے کانگریس کا دامن چھوڑ کربی جے پی میں شمولیت اختیار کر لی۔ دو دن سے جاری سیاسی گھماسان کے بیچ جہاں بی بی جے پی نے اپنے ممبران اسمبلی کو گروگرام میں شفٹ کردیا تاکہ ان کی خریدو فروحت نہ کی جاسکے اور کانگریس نے اپنے ممبران اسمبلی کو یکجا رکھنے کے لئے انہیں راجستھان منتقل کردیا۔

بی جے پی  سیاسی گھماسان کو جہاں پہلے کانگریس کا اندرونی معاملہ قرار دے رہی تھی اب اس نے اس معاملے میں اس نے فلور ٹیسٹ کی بات  شروع کردی ہے۔ وہیں کانگریس نے بھی بنگلور میں مقیم انیس ممبران اسمبلی سے رابطہ قائم کرنے اور ناراض ممبران اسمبلی کو واپس لانے کے لئے تین کمیٹی تشکیل دی ہے۔ ایک کمیٹی دہلی میں تو دوسری بنگلور میں اور تیسری کمیٹی جے پور میں اپنا کام کر رہی ہے اور خود سی ایم کمل ناتھ کی قیادت میں سینئر کابینہ وزرا بھوپال میں مورچہ سنبھالے ہوئے ہیں۔

مدھیہ پردیش اسمبلی بجٹ سیشن کا آغاز سولہ مارچ سے کرنے کا اعلان پہلے ہے کیا جا چکا ہے۔ اسمبلی سیشن مقررہ وقت پر ہوگا یا خصوصی سیشن کا انعقاد ہوگا یہاں بھی واضح نہیں ہے۔ لیکن پورے سیاسی گھمسان سے کانگریس قیادت کی ناکامی پر ہر طرف سے سوال اٹھائے جا رہے ہیں ۔

سینئر کانگریس لیڈر سابق گورنر و مدھیہ پردیش اردو اکادمی کے چیئرمین ڈاکٹر عزیز قریشی موجودہ سیاسی بحران کو اعلی قیادت کی ناکامی سے تعبیر کرتے ہیں۔ ڈاکٹر عزیز قریشی کہتے ہیں کہ کانگریس ایک تحریک کا نام ہے اور کسی کے آنے جانے سے پارٹی پر کوئی اثر نہیں پڑتا ہے لیکن اگر اعلی قیادت نے اس جانب وقت پر توجہ دی ہوتی تو اس سے بچا جا سکتا تھا۔ ڈاکٹر عزیز قریشی کانگریس میں مسلم اور دلت قیادت کے فقدان کو بھی کانگریس اعلی قیادت کی ناکامی سے تعبیر کرتے ہیں ۔

First published: Mar 12, 2020 11:07 PM IST