உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مدھیہ پریش : اوبی سی ریزرویشن کو لے کر کانگریس اور بی جے پی آمنے سامنے ، جانئے کیا ہے پورا معاملہ

    مدھیہ پریش : اوبی سی ریزرویشن کو لے کر کانگریس اور بی جے پی آمنے سامنے ، جانئے کیا ہے پورا معاملہ

    مدھیہ پریش : اوبی سی ریزرویشن کو لے کر کانگریس اور بی جے پی آمنے سامنے ، جانئے کیا ہے پورا معاملہ

    مرکزی حکومت کے ذریعہ ملک کی ریاستوں کو اوبی سی کی فہرست بنانے کا اختیار دئے جانے کے بعد جہاں وزیر اعلی شیوراج سنگھ منترالیہ میں اوبی سی وزرا، اراکین اسمبلی ، اٹارنی جرنل اورماہرین قانون کے ساتھ ریاست میں اوبی سی کو ستائیس فیصد ریزرویشن دینے کے مختلف پہلوؤں پر غور کیا ۔ وہیں کانگریس نے بی جے پی کی میٹنگ کو سیاسی ڈھونگ سے تعبیر کیا ہے ۔

    • Share this:
    بھوپال : مدھیہ پردیش میں ستائیس فیصد اوبی سی ریزرویشن کو لے کر بی جے پی اور کانگریس کے درمیان سیاسی گھمسان اپنے شباب پر ہے ۔ مرکزی حکومت کے ذریعہ ملک کی ریاستوں کو اوبی سی کی فہرست بنانے کا اختیار دئے جانے کے بعد جہاں وزیر اعلی شیوراج سنگھ منترالیہ میں اوبی سی وزرا، اراکین اسمبلی ، اٹارنی جرنل اورماہرین قانون کے ساتھ ریاست میں اوبی سی کو ستائیس فیصد ریزرویشن دینے کے مختلف پہلوؤں پر غور کیا ۔ وہیں کانگریس نے بی جے پی کی میٹنگ کو سیاسی ڈھونگ سے تعبیر کیا ہے ۔ کانگریس کا الزام ہے کہ یہ لوگ ہیں جنہوں نے کمل ناتھ حکومت کے ذریعہ دئے گئے ستائیس فیصد اوبی سی ریزرویشن کی نہ صرف مخالفت کی تھی ، بلکہ عدالت میں بھی اس کی مخالفت کرتے ہوئے دوہزار بیس میں تحریری حلف نامہ دیا تھا ۔

    مدھیہ پردیش کے وزیر برائے شہری ترقیات بھوپیندر سنگھ کہتے ہیں کہ اوبی سی ریزرویشن کانگریس کا صرف پالیٹکل ایجنڈا ہے ، مگر بی جے پی اسے سماجی سروکار کے طوپر دیکھتی ہے ۔ ملک میں اوبی سی کی جو پسماندگی ہے ، اس کے لئے نہرو سے لے کر ابتک کی جو کانگریسی حکومتیں ہیں وہ ذمہ دار ہیں ۔ کانگریس نے ستائیس فیصد اوبی سی ریزرویشن کا اعلان ضرور کیا تھا ، مگر اس کا خاکہ اس طرح تیار کیا تھا کہ اوبی سی کو اس کا فائدہ نہ مل سکے ۔

    انہوں نے کہا کہ آج تک کانگریس نے مدھیہ پردیش میں کبھی او بی سی وزیر اعلی نہیں بنایا ۔ ہماری سرکار اپنے وعدے پر کام کر رہی ہے ۔ آج منترالیہ میں بھی او بی سی وزرا ، او بی سی کے ممبران اسمبلی جو بھوپال میں تھے اور ماہرین قانون کے ساتھ وزیر اعلی نے میٹنگ کی ہے ۔ اسی کے ساتھ سرکار نے ودھان سبھا میں او بی سی ریزرویشن کو لے کر اسٹینڈنگ کمیٹی بھی بنانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ تاکہ جلد سے جلد اوبی سی ریزرویشن کا ایم پی میں نفاذ ہو سکے ۔

    مدھیہ پردیش کانگریس کمیٹی کے ترجمان بھوپیندر گپتا کہتے ہیں کہ بی جے پی کے دوغلے پن پر حیرت ہوتی ہے ۔ یہ وہی لوگ ہیں جنہوں نے جب کمل ناتھ حکومت نے ریاست میں او بی سی کو ستائیس فیصد ریزرویشن دینے کا فیصلہ کیا تھا تو اسے آئین کے مخالف بتاتے ہوئے احتجاج کیا تھا ۔ یہی نہیں کمل ناتھ حکومت کے جانے کے بعد اسی حکومت نے جبلپور ہائی کورٹ میں ستائیس فیصد ریزرویشن کے خلاف تحریری حلف نامہ بھی دیا اور چودہ فیصد اوبی سی ریزرویشن کو جاری رکھنے کی وکالت کی تھی ۔

    انہوں نے کہا کہ انیس سو تیرانوے میں جب نرسمہا راؤ نے مرکز میں اوبی سی حکومت کے لئے قانون بنایا تھا ، تب یہی لوگ سڑک پر تھے ۔ منڈل کمیشن کی سفارشات کے خلاف بھی یہی لوگ کمنڈل لے کر سڑک پر اترے تھے ۔ اب انہیں معلوم ہوگیا کہ حقیقت سب کو معلوم ہوگئی ہے تو عوام کو گمراہ کرنے کا ڈھونگ کر رہے ہیں ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: