உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مدھیہ پردیش : بھوپال کملا نہرو اسپتال آتشزدگی کو لے کر شروع ہوئی سیاست

    مدھیہ پردیش : بھوپال کملا نہرو اسپتال آتشزدگی کو لے کر شروع ہوئی سیاست

    مدھیہ پردیش : بھوپال کملا نہرو اسپتال آتشزدگی کو لے کر شروع ہوئی سیاست

    مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ کہتے ہیں کہ حادثہ افسوسناک ہے اوراس کی جانچ کے احکامات جاری کردئے گئے ہیں ۔ اے سی ایس ہیلتھ میڈیکل ایجوکیشن جانچ کرکے رپورٹ پیش کریں گے ۔

    • Share this:
    بھوپال : بھوپال کے کملا نہرو اسپتال میں کل شب شارٹ سرکٹ سے ہوئے حادثہ کو لے کر سیاست شروع ہوگئی ہے ۔ حادثہ کے بعد اسپتال کا دورہ کرنے کے لئے بی جے پی اور کانگریس کے لیڈران کی قطار لگ گئی ہے اور ایک دوسرے پر الزام لگانے کی سیاست بھی شروع ہوگئی ہے ۔ سیاست شروع ہونے کی بڑی وجہ بچوں کی لاش کی تعداد کو لیکر ہے ۔ حکومت کے ذریعہ حادثہ میں چار بچوں کی موت کی بات کہی جا رہی ہے ، جبکہ اسپتال ذرائع اور اپوزیشن کے ذریعہ سات بچوں کا پوسٹ مارٹم ہونا بتایا جا رہا ہے ۔ وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن وشواس سارنگ کے ذریعہ جہاں اسپتال کا دورہ کرنے کے بعد حالات کو قابو میں ہونا بتایا جا رہا ہے۔ تو وہیں سابق سی ایم کمل ناتھ نے کملا نہرو اسپتال کا دورہ کرنے کے بعد حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے جہاں چھپانے اور دبانے کا الزام لگایا تو وہیں پورے معاملے کی ہائی کورٹ کے سیٹنگ جج سے جانچ کرانے کا مطالبہ کیا ۔ وہیں وزیر اعلی شیوراج سنگھ نے حادثہ پر اپنے رنج کا اظہار کرتے ہوئے معاملہ کی جانچ کرانے اور خاطیوں کو سزا دینے کا بھی اعلان کیا ہے ۔

    مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ کہتے ہیں کہ حادثہ افسوسناک ہے اوراس کی جانچ کے احکامات جاری کردئے گئے ہیں ۔ اے سی ایس ہیلتھ میڈیکل ایجوکیشن جانچ کرکے رپورٹ پیش کریں گے ۔ اس میں جو بھی ذمہ دار ہوگا اس کے خلاف کاروائی ہوگی۔ ہم اس کو آسانی سے قبول نہیں کرسکتے ہیں ۔ آخر بچے ہمارے نگرانی میں تھے۔ ان کی جان بچانے کی ذمہ داری ہماری تھی۔ بہت تکلیف دینے والا حادثہ ہے ۔ لیکن اس کا ایک پہلو اور بھی ہے کہ اپنی جان کو خطرے میں ڈال کر کچھ لوگوں نے چھتیس بچے محفوظ نکالے ہیں ، جس میں ڈاکٹر ، نرس، وارڈ بوائے نے اپنی جان کو جوکھم میں ڈال کر بچانے کا کام کیا ہے اور ایسے لوگ جنہوں نے سماج کے لئے مارگ درشن کا کام کیا ہے ان کا اعزاز ہوگا ۔ میں اپنے وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن کی کارکردگی کا ستائش کرتاہوں ۔ اسی کے ساتھ  ایسے حادثات دوبارہ نہ ہوں اس پر ہمیں مل کر کام کرنا ہے۔

    وہیں مدھیہ پردیش کے سابق سی ایم کمل ناتھ کہتے ہیں کہ گزشتہ چھ ماہ میں تیسری مرتبہ یہاں حادثہ ہوا تھا۔ یہ دبانے اور چھپانے کی سیاست سے مدھیہ پردیش کے عوام پریشان ہیں ۔ کووڈ میں بھی ڈھائی لاکھ لوگوں کی موت ہوئی اور سرکار نے دبانے و چھپانے کا کام کیا اور تب بھی سرکار نے ایکشن نہیں لیا جب ریاست میں آکسیجن اور انجیکشن نہیں تھے اور یہی حال اب ہوا ہے۔ اسپتال میں آگ بجھانے کا کیا انتظام تھا ، ایک شارٹ سرکٹ سے اتنی بڑی آگ سمجھ سے باہر ہے۔ اسپتال کے اندر جاکر دیکھا ، منظر بڑا ڈراونا ہے اور اس کی ذمہ داری طے کی جانا چاہئے۔

    انہوں نے کہا کہ معاملہ کی انکوائری وہ کر رہے ہیں ، جوخود اس معاملے میں کہیں نہ کہیں ذمہ دار ہوں گے ۔ ہائی کورٹ کے سیٹنگ جج سے جانچ کروائی جانی چاہئے تاکہ ان کے دبانے اور چھپانے کی بات نہ ہو۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: