உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    MP News: راجدھانی بھوپال کی سیکڑوں مساجد کے ریکارڈ نہیں درست، جانئے کیا ہے اس کی وجہ

    MP News: راجدھانی بھوپال کی سیکڑوں مساجد کے ریکارڈ نہیں درست، جانئے کیا ہے اس کی وجہ

    MP News: راجدھانی بھوپال کی سیکڑوں مساجد کے ریکارڈ نہیں درست، جانئے کیا ہے اس کی وجہ

    Bhopal News : راجدھانی بھوپال کو مساجد کا شہر کہا جاتا ہے ۔ اس شہر میں اقلیتوں سے وابستہ سبھی بڑے ادارے بھی موجود ہیں، اس کے باوجود راجدھانی کی سیکڑوں مساجد کا ریکارڈ درست نہیں کیا جا سکا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Madhya Pradesh | Bhopal | Indore | Jabalpur
    • Share this:
    بھوپال : راجدھانی بھوپال کو مساجد کا شہر کہا جاتا ہے ۔ اس شہر میں اقلیتوں سے وابستہ سبھی بڑے ادارے بھی موجود ہیں، اس کے باوجود راجدھانی کی سیکڑوں مساجد کا ریکارڈ درست نہیں کیا جا سکا۔ ایسا نہیں ہے کہ مساجد کے ریکارڈ کو درست کرنے کو لے کر سماجی تنظیموں کے ذریعہ آواز نہیں اٹھائی گئی ہو۔ آواز اٹھائی گئی اور دو ہزار اکیس سے اس تعلق سے بار بار آواز اٹھائی جا رہی ہے، لیکن وقف بورڈ خواب غفلت سے بیدار ہونے کو تیار نہیں ہے۔

    سماجی کارکن و مسجد نواب دوست محمد خاں کمیٹی کے سکریٹری  ڈاکٹر تزئین احمد کہتے ہیں کہ مساجد کے ریکارڈ کو درست کرنے کو لے کر وقف بورڈ سی ای او، بھوپال ایم ایل اے عارف عقیل اور بھوپال کلکٹر کو بھی لکھا گیا ہے۔ ہماری تحریک پر بھوپال ایم ایل اے عارف عقیل نے کلکٹر اور دوسرے اداروں کو بھی خط لکھا اور خود ہم مساجد کے ریکارڈ کو درست کرنے کو لیکر وقف بورڈ سی ای او سے کئی بار ملاقات کر چکے ہیں، لیکن آج تک ریکارڈ درست نہیں کیاجا سکا۔

     

    یہ بھی پڑھئے: بنگلورو میں عیدگاہ میدان میں نہیں ہوگا گنیش اتسو، سپریم کورٹ نے کہا : اسٹیٹس کو برقرار رہے گا


    شہر میں سولہ تاریخی مساجد ایسی ہیں، جن کے رقبہ کا ذکر نہیں ہے۔ پچاسی مساجد ہیں جن کے نام کا ذکر نہیں ہے اور ایک سو سترہ مساجد ایسی ہیں، جن کا نام تو وقف بورڈ کے ریکارڈ میں درج ہے، لیکن یہ مساجد کہاں ہیں ، کن محلوں میں ہیں اس کا کوئی ذکر نہیں کیا گیا ہے۔ کچھ ایسی بھی مساجد ہیں جن کا حقیقی رقبہ کچھ اور ہے مگر وقف بورڈ کے ریکارڈ میں اس کا رقبہ کچھ اور درج کیا گیا ہے۔ اگر وقت رہتے مساجد کے ان ریکارڈ کو درست نہیں کیا گیا تو مستقبل میں انہیں لے کر نئی مشکلات پیدا ہوسکتی ہیں ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: شوپیاں میں دہشت گردوں اور فورسیز کے درمیان تصادم، 3 دہشت گرد ہلاک


    وہیں اس تعلق سے جب وقف بورڈ سی ای او سید شاکر جعفری سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ معاملہ ٹیکنکل ہے اور وقف بورڈ کی تشکیل کو لے کر مراحل جاری ہیں ۔ وقف بورڈ کی تشکیل ہونے کے بعد بورڈ کے ذریعہ اس کام کو انجام دیا جائے گا۔

    واضح رہے کہ مدھیہ پردیش میں 2018 سے وقف بورڈ کی تشکیل نہیں ہوئی ہے ۔ ہائی کورٹ کے احکام کے بعد تیس جولائی کو بورڈ کی تشکیل کو لے کر تاریخ کا اعلان کیا گیا تھا، مگر بورڈ اراکین کی تعداد اور دوسرے معاملہ کو لے کر وقف بورڈ کی تشکیل کا معاملہ ایک بار پھر عدالت پہنچ گیا ہے۔ دو ستمبر کو جبلپور ہائی کورٹ میں معاملہ پر سماعت ہوگی ۔ عدالت کا فیصلہ کیا ہوگا اس پر سبھی کی نگاہیں مرکوز ہیں ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: