ہوم » نیوز » No Category

مد ھیہ پردیش وقف بورڈ: ہزاروں کروڑ کا مالک ہونے کے باوجود کنگال

بھوپال۔ مدھیہ پردیش وقف بورڈ ہزاروں کروڑ کا مالک ہونے کے باوجود کنگال ہے ۔

  • ETV
  • Last Updated: Mar 15, 2016 04:20 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
مد ھیہ پردیش وقف بورڈ: ہزاروں کروڑ کا مالک ہونے کے باوجود کنگال
بھوپال۔ مدھیہ پردیش وقف بورڈ ہزاروں کروڑ کا مالک ہونے کے باوجود کنگال ہے ۔

بھوپال۔ مدھیہ پردیش وقف بورڈ ہزاروں کروڑ کا مالک ہونے کے باوجود کنگال ہے ۔ بورڈ میں نہ صرف اسٹاف کی کمی ہے بلکہ سالوں سے اس کی ز مینوں کا سروے بھی نہیں ہو سکا ہے۔ مدھیہ پردیش ملک کے ان صوبوں میں سے ایک ایسا صوبہ ہے جہاں وقف املاک ہزاروں کی تعداد میں موجود ہیں ۔ 2001 کے ایک سروے کے مطابق صوبہ میں بورڈ کے پاس75 ہزار کروڑ کی وقف املاک ہے ۔ ہزاروں کروڑ کی وقف املاک ہونے کے باوجود مد ھیہ پردیش وقف بورڈ کنگال ہے ۔ صورت حال اتنی  مضحکہ خیز ہے کہ سالوں سے بورڈ کی زمینوں کا سروے بھی نہیں ہوسکا ہے۔


مد ھیہ پردیش حکومت نےعمر فاروق کھٹانی کو اوقاف کےسروے کی ذمہ داری سپرد کی تھی۔ انہوں نے کچھ اضلاع میں وقف املاک کے سروے کا کام بھی شروع کیا لیکن حکومت اور انتظامیہ کے عدم تعاون کے سبب وہ بھی مجبور ہو کر بیٹھ گئے اور پھر ان کا ریٹائرمنٹ ہوگیا۔


عمر فاروق کھٹانی کے ریٹائرمنٹ کو کئی سال بیت چکے ہیں لیکن مدھیہ پردیش حکومت نے بورڈ کی درخواست کے بعد بھی وقف سروے کمشنر کی ابھی تک تقرری نہیں کی۔


shaukat mohammad khan


مد ھیہ پردیش وقف بورڈ کے مسائل یہیں پر ختم نہیں ہو تے ہیں ۔ صوبہ میں 51 اضلاع ہیں اور ہر ضلع میں وقف املاک موجود ہیں ۔ لیکن ان املاک کا رکھ رکھاؤ اور دوسرے کاموں کے لئے بورڈ میں دو درجن سے زیادہ اسٹاف کی کمی ہے ۔ گزشتہ سالوں میں جن ملازمین کا ریٹائرمنٹ ہوا آج تک ان کی جگہ ملا زمین کی تقرری نہیں ہو سکی ۔ بورڈ میں اسٹاف کی کمی کے سبب بورڈ کی آمدنی بھی متاثر ہو رہی ہے ۔ حالانکہ بورڈ کے چیرمین شوکت محمد خان اس بات کا دعوی تو کر رہے ہیں کہ جلد ہی تمام مسائل پر قابو پا لیا جائے گا ۔ اسٹاف کی تقرری بھی ہوگی اور وقف سروے کمشنر کا بھی حکومت کی جانب سے تقرر ہوگا لیکن یہ باتیں کسی دیوانے کے خواب سی لگتی ہیں۔

First published: Mar 15, 2016 03:04 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading