ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

حکومت کے موقف سے ایم پی اسکول ایسوسی ایشن ناراض، تعلیمی سلسلہ بند کرنے اور صوبائی سطح پر احتجاج کا اعلان

واضح رہے کہ مدھیہ پردیش میں کورونا قہر کے سبب مارچ سے اسکول بند ہیں۔ اسکول بند ہونے کے سبب اسکول انتظامیہ کو بہت سی مشکلات کا سامنا ہے۔

  • Share this:
حکومت کے موقف سے ایم پی اسکول ایسوسی ایشن ناراض، تعلیمی سلسلہ بند کرنے اور صوبائی سطح پر احتجاج کا اعلان
حکومت کے موقف سے ایم پی اسکول ایسوسی ایشن ناراض

بھوپال۔ کورونا قہر میں آٹھ ماہ سے بند اسکول کے مالکان نے حکومت کے موقف سے ناراض ہوکر پندرہ دسمبر کو آن لائن کلاس بند کرنے اور سولہ دسمبر کو صوبائی سطح پر احتجاج کا اعلان کیا ہے۔ واضح رہے کہ مدھیہ پردیش میں کورونا قہر کے سبب مارچ سے  اسکول بند ہیں۔ اسکول بند ہونے کے سبب اسکول انتظامیہ کو بہت سی مشکلات کا سامنا ہے۔ اپنے مطالبات کو لیکر ایم پی پرائیویٹ اسکول ایسو سی ایشن نے نو دسمبر کو مدھیہ پردیش حکومت کے سامنے دس نکاتی مانگیں پیش کی تھیں اور چودہ دسمبر تک فیصلہ لینے کا انتباہ دیا تھا۔ اسکول ایسو سی ایشن کے انتباہ پر ایم پی حکومت کے محکمہ تعلیم کے ذریعہ آج میٹنگ تو کی گئی مگر میٹنگ میں کوئی واضح فیصلہ نہیں ہونے کے سبب  پرائیویٹ اسکول ایسو سی ایشن نے پندرہ دسمبر کو صوبائی سطح پر نہ صرف آن لائن کلاسس کو بند کرنے کا اعلان کیا ہے بلکہ  سولہ دسمبر کو اپنی مانگوں کو لیکر صوبائی سطح پر احتجاج کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔


ایم پی پرائیویٹ اسکول ایسوسی ایشن کے سکریٹری ایس این اگروال کہتے ہیں کہ کورونا قہر میں حکومت اپنی من مانی سے باز نہیں آرہی ہے۔ ہم پر ہر طرح کی پابندیاں عائد کی گئی ہیں۔ بچے اسکول آنہیں رہے ہیں اور جب بچے اسکول نہیں آ رہے ہیں تو ان کے ذریعہ فیس جمع کرنے کا سوال ہی نہیں اٹھتا ہے۔ حکومت کے احکام پر ہم لوگ اپریل سے آن لائن کلاس چلا رہے ہیں۔ طلبا کے تعلیمی مفاد کو سامنے رکھ کر ہم لوگوں نے آن لائن کلاس کو جاری رکھا ہے ۔ آن لائن کلاس کے لئے جو اساتذہ آتے ہیں انہیں ہمیں تنخواہ دینا ہوتا ہے۔ حکومت خود بتائے کہ ایسے میں ہم اساتذہ کو تنخواہ کیسے دیں۔ ایسے میں اب ہمارے صبر کا پیمانہ لبریز ہوچکا ہے۔


ایم پی پرائیویٹ اسکول ایسوسی ایشن کے سکریٹری ایس این اگروال کہتے ہیں کہ کورونا قہر میں حکومت اپنی من مانی سے باز نہیں آرہی ہے۔ ہم پر ہر طرح کی پابندیاں عائد کی گئی ہیں۔


ایسو سی ایشن نے طے کیا ہے کہ کل یعنی پندرہ دسمبر کو کوئی آن لائن کلاس نہیں ہوگی اور سولہ دسمبر کو اپنی دس نکاتی مانگوں کو لیکر ہم لوگ صوبائی سطح پر احتجاج کریں گے۔ اگر اس کے باوجود بھی حکومت اپنی ضد سے باہر نہیں آتی ہے تو تعلیمی سلسلہ کو بند کرنے کے علاوہ ہمارے پاس کوئی راستہ نہیں ہے۔

وہیں مدھیہ پردیش کے وزیر برائے اسکول تعلیم اندر سنگھ پرمار نے نیوز ایٹین اردو کو فون پر بتایا کہ اسکول کھولنے کے معاملے پر سبھی پہلؤوں پر غور کیا جا رہا ہے۔ کورونا ابھی ختم نہیں ہوا ہے بلکہ کم ہوا ہے۔ ایسے میں بچوں کی زندگی سے کھلواڑ نہیں کیا جا سکتا ہے۔ اسکول ایسو سی ایشن کو صبر سے کام لینا چاہیئے۔ کرائسس مینجمنٹ کمیٹی اور دوسری رپورٹ پر سنجیدگی سے غور کرنے کے بعد ہی حکومت کوئی حتمی فیصلہ لے گی۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Dec 14, 2020 08:50 PM IST