உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کانگریس کے مسلم امیدوار نے کروایا ہنومان چالیسا تو بی جے پی کا مسلم امیدوار مندر سے ہوا دامن گیر

    بی جے پی کے ہارڈ ہندتو اور کانگریس کے سافٹ ہندتو کی راہ سے تو سبھی واقف ہیں لیکن اس بار بلدیاتی انتخابات میں مسلم امیدوار تو ہندو امیدواروں سے بھی دو قدم آگے نکل گئے۔

    بی جے پی کے ہارڈ ہندتو اور کانگریس کے سافٹ ہندتو کی راہ سے تو سبھی واقف ہیں لیکن اس بار بلدیاتی انتخابات میں مسلم امیدوار تو ہندو امیدواروں سے بھی دو قدم آگے نکل گئے۔

    بی جے پی کے ہارڈ ہندتو اور کانگریس کے سافٹ ہندتو کی راہ سے تو سبھی واقف ہیں لیکن اس بار بلدیاتی انتخابات میں مسلم امیدوار تو ہندو امیدواروں سے بھی دو قدم آگے نکل گئے۔

    • Share this:
    مدھیہ پردیش میں دو سال کی تاخیر سے سپریم کورٹ کے احکام سے ہونا والا بلدیاتی انتخابات دلچسپ موڑ میں داخل ہوگیا ہے۔ بی جے پی کے ہارڈ ہندتو اور کانگریس کے سافٹ ہندتو کی راہ سے تو سبھی واقف ہیں لیکن اس بار بلدیاتی انتخابات میں مسلم امیدوار تو ہندو امیدواروں سے بھی دو قدم آگے نکل گئے۔ قدیم بھوپال کے کونسلر عہدے کے کانگریس کے مسلم امیدوار نے انتخابات میں ووٹرس کو اپنی جانب راغب کرنے کے لئے ہنومان چالیسا تک کا انعقاد کرواڈالا۔

    وہیں بی جے پی کے مسلم امیدوار ہندتو کو روح کی غذا مانتے ہوئے مندر سے دامن گیر ہر جگہ نظر آتے ہیں ۔ بھوپال وارڈ انیس سے کانگریس کے امیدوار وسیم الدین پپو کہتے ہیں کہ لوگ ہماری نیکی کو دوسری طریقے سے پیش کرکے بدنام کر رہے ہیں۔ در اصل ہم نے کورونا قہر میں سبھی سماج کے لوگوں کے لئے کام کیاتھا۔ وارڈ کے ہندو بھائیوں کو جب معلوم ہوا کہ ہم الیکشن میں کھڑے ہیں تو وہ ہمارے یہاں آئے اور ہم نے ان کا استقبال کیا اور انہوں نے جیسے ہمارے یہاں قران حوانی ہوتی ہے اسی طرح انہوں نے ہمارے دفتر میں بیٹھ کر منتر پڑھے۔ مشترکہ تہذیب کے ملک میں یہ سب باتیں ہمارے رشتہ کو مضبوط بناتی ہیں ۔ ہمارے مخالفین کے پیروں سے زمین کھسک رہی ہے تو وہ مشترکہ تہذیب کی علامت کو دوسرے طریقے سے پیش کر رہے ہیں۔

    منی لانڈرنگ کیس میں Satyendra jain پر کسا شکنجہ، ED نے دو اور لوگوں کو کیا گرفتار



     

    Nupur Sharma کو سپریم کورٹ کی پھٹکار، کہا۔ ٹی وی پر پورے ملک سے معافی مانگنی چاہئے

    وہیں بی جے پی کے مسلم امیدوار محمد توفیق کہتے ہیں کہ ہندتو تو بی جے پی کی آئیڈیالوجی کا حصہ ہے ۔ ہمارے ورکر صبح اٹھ کر مندر جاتے ہیں اور پھر اپنا کام شروع کرتے ہیں ۔ہم بھی نماز پڑھتے ہیں ۔پارٹی نے ہمارے لئے انتخابات کی تشہیر کو لیکر کوئی حکم نامہ جاری نہیں کیا ہے بلکہ ہمیں پوری آزادی دی ہے کہ ہم ووٹرس کے بیچ اپنی بات پہنچائیں اور بتائیں کہ جس وارڈ سے ہم کھڑے ہوئے ہیں اس سولہ نمبر وارڈ میں جہاں پر کانگریس کا کونسلر پچیس سال سے ہے وہاں بنیادی ضرورت کے کام کیوں نہیں ہوئے۔ ہماری پارٹی کے ایجنڈے میں اتنی کشش ہے کہ اب کانگریس کے لوگ بھی اسے اپنی شان سمجھتے ہیں تبھی کانگریس کے لوگ ہنومان چالیسا کروانے لگے ہیں ۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: