ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

وزیر خارجہ سشما سوراج نے کہا : رمضان کی واپسی کے لئے پاکستان نے نہیں کی کوئی پہل

بھوپال : وزیر خارجہ سشما نے کہا ہے کہ ہم رمضان کی واپسی کے لئے کوشش کر رہے ہیں، لیکن پاکستان کی جانب سے اس مسئلے پر کوئی پہل نہیں کی جا رہی ہے۔

  • ETV
  • Last Updated: Nov 22, 2015 08:47 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
وزیر خارجہ سشما سوراج نے کہا : رمضان کی واپسی کے لئے پاکستان نے نہیں کی کوئی پہل
بھوپال : وزیر خارجہ سشما نے کہا ہے کہ ہم رمضان کی واپسی کے لئے کوشش کر رہے ہیں، لیکن پاکستان کی جانب سے اس مسئلے پر کوئی پہل نہیں کی جا رہی ہے۔

بھوپال : وزیر خارجہ سشما نے کہا ہے کہ  ہم رمضان کی واپسی کے لئے کوشش کر رہے ہیں، لیکن پاکستان کی جانب سے اس مسئلے پر کوئی پہل نہیں کی جا رہی ہے۔


سشما سوراج کا یہ بیان اس وقت آیا ، جب انہوں نے بھوپال کے ایودھیا شہر میں واقع چلڈرین ہوم میں رہ رہے پاکستانی نوجوانوں رمضان سے ملاقات کی۔ اس دوران رمضان نے اپنے گھر کراچی جانے کی فریاد بھی کی ۔


وزیر خارجہ سشما سوراج نے کہا کہ پاکستان میں ہندوستان کے ہائی کمشنر راگھون رمضان کی ماں سے بھی مل چکے ہیں، جس کے بعد رمضان کی ماں نے بھی اپنے بیٹے سے ملنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔


بتایا جاتا ہے کہ رمضان کی ماں رضیہ بیگم نے ہندوستان میں حالات کی وجہ سے یہاں آنے سے انکار کر دیا تھا۔ اس کے جواب میں سشما نے کہا کہ ہندوستان میں کیسا ماحول ہے، اس کے بارے میں خود رمضان سے پوچھ لیں۔ وہ یہاں خوش رہ رہا ہے۔ وہیں رمضان نے بھی میڈیا کے سامنے کہا کہ میں نے ماں کو کئی بار سمجھایا کہ یہاں سب بہت اچھے ہیں۔ یہاں کا ماحول بہت اچھا ہے۔ مجھے یہاں سب بہت محبت کرتے ہیں۔


وزیر خارجہ سشما سوراج نے کہا کہ بجرنگی بھائی جان فلم کے بعد گیتا کا معاملہ سامنے آیا، جس کے بعد ہم نے گیتا کی وطن واپسی کرائی۔ اس کے بعد ہم نے انسانی طور پر رمضان کو کراچی میں اس کی ماں کے پاس بھیجنے کی آگے بڑھ کر پہل کی، لیکن پاکستان کی جانب سے اس بارے میں کوئی جواب نہیں آیا۔ تاہم سشما نے کہا کہ وزارت خارجہ کے افسران دوبارہ اس بارے میں پاکستانی ہائی کمیشن کے افسروں سے بات کریں گے۔


وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم رمضان کی ماں کو ویزا دینے اور دہلی سے بھوپال آنے جانے اور یہاں رہنے کا انتظام کرنے کے لئے تیار ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ اگر پاکستان رمضان کو اپنے ملک کا شہری نہیں مانتا، تو رمضان اور اس کی ماں کا ڈی این اے ٹیسٹ بھی کروا سکتا ہے۔


ادھر  اتوار کو ایودھیا شہر میں واقع چلڈرین ہوم میں رہ رہے پاکستانی نوجوانوں رمضان سے ملنے ایک پاکستانی خاتون زبردستی اندر داخل ہوگئی۔ رمضان سے نہیں ملنے دینے پر اس نے وہاں جم کر ہنگامہ کیا۔ ارچنا سہائے کے مطابق خاتون نے خود کو پاکستانی اور رمضان کی خالہ بتایا تھا۔ تاہم کراچی سے آنے کا دعوی کرنے والی اس خاتون کا رمضان سے کوئی رشتہ نہیں تھا۔ یہاں تک کہ وہ رمضان کی ماں کو بھی نہیں جانتی تھی ، جس کی وجہ سے اس کو رمضان سے ملنے نہیں دیا گیا۔


خیال رہے کہ رمضان کی ماں رضیہ بیگم سے طلاق کے بعد اس کا باپ اس کو ماں سے الگ کر کے بنگلہ دیش لے گیا تھا ۔ وہاں اس کے باپ نے دوسری شادی کر لی تھی۔


دوسری شادی کے بعد باپ کے رویے میں یکسر تبدیلی آگئی اور سوتیلی ماں بھی تشدد کرنے لگی۔ ایسے میں رمضان کو اپنی ماں کی یاد ستانے لگی اور کراچی واپس جانے کے لئے رمضان بنگلہ دیش سے ہندوستان آیا اور پھر یہاں کئی شہروں میں بھٹكتا رہا۔


پانچ سال پہلے اس کو بھوپال ریلوے اسٹیشن پر پولیس نے گرفتار کیا تھا۔ کافی پوچھ گچھ کے بعد رمضان کو چائلڈ ہوم کے حوالے کر دیاگیا۔


گزشتہ دو سالوں سے گھر جانے کو بے تاب رمضان نے کبھی نہیں بتایا کہ وہ پاکستانی ہے۔ چائلڈ ہوم میں آدھار کارڈ بننے کے وقت ہی خود کے پاکستانی ہونے کی بات بتائی، جس کے بعد آئی بی کے حکام نے بھی رمضان سے پوچھ گچھ کی ۔

First published: Nov 22, 2015 08:47 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading