ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

رانچی میں سی اے اے، این آرسی اور این پی آر کے خلاف احتجاج جاری، وفد نے ریاستی وزیر سے کی ملاقات

وفد میں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے دانشوران اورسماجی کارکنان شامل تھے۔ اس موقع پر وفدکےرکن ڈاکٹرکرمااورائوں نےکہا کہ چند دنوں قبل مختلف سیاسی پارٹیوں اور سماجی تنظیموں سے جڑے لوگوں کی میٹنگ میں اس قانون کے تعلق سے قدم اٹھانےکا فیصلہ لیا گیا تھا۔

  • Share this:
رانچی میں سی اے اے، این آرسی اور این پی آر کے خلاف احتجاج جاری، وفد نے ریاستی وزیر سے کی ملاقات
وفد میں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے دانشوران اورسماجی کارکنان شامل تھے۔ اس موقع پر وفدکےرکن ڈاکٹرکرمااورائوں نےکہا کہ چند دنوں قبل مختلف سیاسی پارٹیوں اور سماجی تنظیموں سے جڑے لوگوں کی میٹنگ میں اس قانون کے تعلق سے قدم اٹھانےکا فیصلہ لیا گیا تھا۔

رانچی: جھارکھنڈ میں سی اے اے، این أر سی اور این پی آرکے خلاف لوگوں کے احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔ آج اس موضوع کو لےکر ایک وفد نے ریاستی وزیر و ریاستی کانگریس صدر ڈاکٹر رامیشور اورائوں سے ملاقات کی۔ اس وفد میں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے دانشوران اور سماجی کارکنان شامل تھے۔ اس موقع پر وفد کے رکن ڈاکٹرکرما اورائوں نےکہا کہ چند دنوں قبل مختلف سیاسی پارٹیوں اور سماجی تنظیموں سے جڑے لوگوں کی میٹنگ میں اس قانون کے تعلق سے قدم اٹھانے کا فیصلہ لیا گیا تھا۔


کرما اورائوں نےکہا کہ سابق مرکزی وزیر وکانگریس کے قدآور لیڈر سبودھ کانت سہائےکی قیادت میں ہوئی اس میٹنگ میں لئےگئےفیصلے کے تحت وزیر رامیشور اورائوں سے ملاقات کرکے اس قانون پر نظر ثانی کرنےکا مطالبہ کر رہے ہیں۔ انہوں نےکہا کہ سی اے اے، این آر سی اور این پی آرکے خلاف پورے ملک میں ماحول خراب ہوا ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ مرکزی حکومت اس قانون کے تحت آر ایس ایس کےخفیہ ایجنڈے کو نافذ کرنےکی کوشش کر رہی ہے۔ کرما اورائوں نےکہا کہ اس قانون کے ذریعہ دستور ہند پر حملہ کرنے کے جیسا احساس ہو رہا ہے ۔ ساتھ ہی انہوں نےیہ بھی کہا کہ سی اے اے کے نفاذ کے تعلق سے مرکزی حکومت جتنی کوششوں میں مصروف ہے، اس سے زیادہ ملک میں اس قانون کے خلاف لوگوں میں ناراضگی دیکھی جا رہی ہے۔


وفد نے ریاستی وزیر و ریاستی کانگریس صدر ڈاکٹر رامیشور اورائوں سے ملاقات کی۔


وہیں وزیرڈاکٹر رامیشور اورائوں نےکہاکہ ان کی پارٹی سی اے اے این پی آر اور این آر سی کےخلاف ہے۔ ساتھ ہی کہا کہ اس موضوع پرہم ریاست کے تمام وزراء کے ساتھ تبادلہ خیال کریں گے اور اس تعلق سے فیصلہلیں گے۔ پریم چند مورموکی قیادت والے اس وفد میں ندیم خان، فادر مہندر پیٹرتگا، سوسانتو مکھرجی، شارق احمد، محمد ببرودیگر افراد شامل تھے۔
First published: Jan 28, 2020 08:21 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading