உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہیلی کاپٹر کی خریداری پر رمن سنگھ کی وضاحت ، الزامات کو بتایا سیاسی ، قانونی کارروائی کی بھی تیاری

    چھتیس گڑھ کے وزیراعلیٰ رمن سنگھ: فائل فوٹو

    چھتیس گڑھ کے وزیراعلیٰ رمن سنگھ: فائل فوٹو

    رائے پور : چھتیس گڑھ کے وزیر اعلی رمن سنگھ نے ریاست میں ہیلی کاپٹر کی خریداری میں بدعنوانی کے الزامات کو مسترد کردیا ہے

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:
      رائے پور : چھتیس گڑھ کے وزیر اعلی رمن سنگھ نے ریاست میں ہیلی کاپٹر کی خریداری میں بدعنوانی کے الزامات کو مسترد کردیا ہے اور کہا ہے کہ یہ الزام سیاست پر منبی ہیں ۔ وزیر اعلی نے کہا کہ ریاستی حکومت پر ہیلی کاپٹر کی خریداری میں کرپشن کا الزام لگانا صرف سیاست پر مبنی ہے ۔.

      وزیر اعلی نے کہا کہ آگسٹا ویسٹ لینڈ معاملے میں کانگریس کے سینئر رہنماؤں کے پر مسلسل الزامات لگ رہے ہیں ۔ ایسے وقت میں بی جے پی حکومت پر بھی بدعنوانی کا الزام لگایا جا رہا ہے، جو صرف سیاست پر مبنی ہے ۔ اس معاملے میں پرشانت بھوشن پر کسی قسم کی قانونی کارروائی کے سوال پر رمن سنگھ نے کہا کہ اس سلسلے میں وہ وکلاء کی رائے لیں گے ۔

      سنگھ نے کہا کہ ریاستی حکومت نے پوری شفافیت کے ساتھ یہاں ہیلی کاپٹر کی خریداری کی ہے اور اس کے لئے یہاں بنی تکنیکی کمیٹی نے اپنی رائے دی تھی ۔ تکنیکی کمیٹی کی اجازت کے بعد ہی ہیلی کاپٹر کی خریداری کی گئی ۔ وزیر اعلی نے کہا کہ اس معاملے میں الزامات کے لئے سی اے جی  کی رپورٹ کو بنیاد بنایا جا رہا ہے ،  جبکہ سی اے جی نے ہیلی کاپٹر کی خریداری میں 65 لاکھ روپے اضافی اخراجات پر تبصرہ کیا ہے ۔

      خیال رہے کہ جھارکھنڈ حکومت نے ہیلی کاپٹر کی خریداری سال 2006 میں کی تھی اور چھتیس گڑھ حکومت نے یہ خریداری 2007 میں کی تھی ۔ ہیلی کاپٹر کمپنی نے چھتیس گڑھ حکومت کے لئے ہیلی کاپٹر کی قیمت میں اضافہ کردیا تھا۔  جس کے بعد شفاف طریقے سے ہیلی کاپٹر کی خریداری کی گئی ۔ رمن سنگھ نے کہا کہ ریاست میں ہیلی کاپٹر کی خریداری میں کسی بھی طرح کی بدعنوانی نہیں ہوئی ہے اور جب ریاستی اسمبلی میں یہ معاملہ آئے گا ، تب حکومت غور کرے گی ۔

      ادھر آج راج ممبر پارلیمنٹ اور وزیر اعلی رمن سنگھ کے بیٹے ابھیشیک سنگھ نے ایک بیان جاری کر کے کہا ہے کہ چھتیس گڑھ حکومت کے ہیلی کاپٹر کی خریداری سے ان کا کوئی تعلق نہیں ہے ۔ ابھیشیک سنگھ نے غیر ملکی بینکوں میں اکاؤنٹ ہونے کے الزامات کو بھی مسترد کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے پہلے بھی واضح کیا ہے کہ ان کا بیرون ملک کسی بھی بینک میں کوئی اکاؤنٹ نہیں ہے۔
      First published: