உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لاشوں کے ساتھ اس اسپتال میں ہوتا ہے بیحد انتہائی گھٹیا کام، درد بھری داستاں سن کر کانپ جائے گی آپ کی روح

    اندور کے ایم ٹی ایچ MTH اسپتال میں اس وقت زبردست ہنگامہ مچ گیا جب ایک خاتون کی لاش کے ساتھ یہ شرمناک واقعہ پیش آیا۔

    اندور کے ایم ٹی ایچ MTH اسپتال میں اس وقت زبردست ہنگامہ مچ گیا جب ایک خاتون کی لاش کے ساتھ یہ شرمناک واقعہ پیش آیا۔

    • Share this:
      اندور کے ایم ٹی ایچ MTH اسپتال میں اس وقت زبردست ہنگامہ مچ گیا جب ایک خاتون کی لاش سے زیور چوری ہو گئے۔ اسپتال اسٹاف پر ایک کے بعد ایک کئی الزام لگنا شروع ہو گئے۔ شور۔ہنگامہ اتنا بڑھ گیا کہ اسپتال کے اسٹاف نئ زیور یہ کہہ کر لوٹا دئے کہ یہ کہیں کونے میں پڑے تھے۔ ادھر معاملہ بگڑتا دیکھ کر اسپتال کے اسٹاف نے خاتون کی لاش کو مفت میں MY اسپتال پہنچایا۔ جانکاری کے مطابق دپیش ورما سکھلیا میں رہتے ہیں۔ ان کی ماں کو کچھ دن پہلے سانس لینے میں پریشانی ہو رہی تھی۔ ایک جگہ جانچ ہوئی تو وہاں سے انہیں MTH اسپتال لے جانے کو کہا گیا۔ دپیش کے مطابق یہاں بغیر کسی جانچ کے اسپتال اسٹاف نے ماں جو داخل کر لیا۔ ماں کل تک ٹھیک تھیں لیکن رات کو ان کی حالت خراب ہونے لگی۔

      CM ہیلپ لائن میں شکایت پر اسٹاف نے دھمکایا
      دپیشن نے بتایا کہ دو دن پہلے ایک ڈاکٹر نے ماں کو ریمڈیسیور انجیکشن لگنے کی بات کہی تھی۔ ڈاکٹر نے جب یہ بولا کہ یہ انجیکشن 5000 ہزار کا آئے گا تو میں نے انکار کر دیا۔ دپیش نے کہا کہ یہ انجیکشن مفت میں لگتے ہیں۔ ادھر معاملے کو لیکر دپیش کی بہن نے اسپتال انتظامیہ اور ڈاکٹروں کے خلاف CM ہیلپ لائن میں شکایت کردیْ اس کے بعد اسٹاف اور ڈاکٹروں نے اسے دھمکی دیکر شکایت واپس کرائی۔ اگلے ہی دن 12:30 بجے اسٹاف نے پھر کہا کہ انجیکشن چاہئے۔ کنبے نے پھر ایک انجیکشن کا انتظام کر دیا۔

      ڈاکٹر نے جب یہ بولا کہ یہ انجیکشن 5000 ہزار کا آئے گا تو میں نے انکار کر دیا۔ دپیش نے کہا کہ یہ انجیکشن مفت میں لگتے ہیں۔


      اچانک ہی ہو گئی ماں کی موت
      دپیش نے کہا کہ جمعرات کی رات 12:00 بجے ماں نے فون لگاکر کہا کہ ان کی حالت خراب ہے۔ یہاں سے نکلواؤ ورنہ مر جاؤں گی۔ اس کے باوجود ڈاکٹروں نے کچھ نہیں کیا اور صبح چھ بجے اسے بتایا گیا کہ ماں کی طبیعت خراب تھی اور وہ مر چکی ہیں۔ سات بجے دپیش اور اس کا کنبہ ماں کی لاش لینے MTH پہنچا تو وہاں سامان دے دیا۔ سامان میں فون بھی تھا لیکن زیور نہیں تھے۔ اس پر انہوں نے اعتراض ظاہر کیا تو اسٹاف نے کہا کہ مریض تو زیور لایا ہی نہیں تھا۔ اس پر غصے میں بھڑکے اہل خانہ بولے ہم لاش نہیں لے جائیں گے اور گھر پہنچ گئے۔ آدھے گھنٹے بعد اسپتال سے فون آیا کہ ان کے زیور مل گئے ہیں۔ کونے میں پڑے تھے، فورا انہیں زیور دے دئے اور ساتھ ہی ایم وائی ایچ سے ان کو MY اسپتال مفت ایمبولینس سے پہنچایا گیا۔

       
      Published by:Sana Naeem
      First published: