ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

حاملہ بیوی کی کووڈ رپورٹ پازیٹو آنے سے اڑے سب کے ہوش، لیکن محض 16 دن کی بچی نے جیتی کورونا سے جنگ

بھوپال کے پیوپلس اسپتال میں وہ اپنی بیوی کو علاج کے لئے داخل کرانے میں کامیاب تو ہو گئے تو ان کی جان میں جان آئی ۔ بھوپال کے پیوپلس اسپتال میں روحی خان نے ایک پیاری سی بچی کو جنم دیا مگر بچی کی صورت دیکھنے سے قبل ہی روحی خان کی روح پرواز کر گئی ۔

  • Share this:
حاملہ بیوی کی کووڈ رپورٹ پازیٹو آنے سے اڑے سب کے ہوش، لیکن محض 16 دن کی بچی نے جیتی کورونا سے جنگ
بھوپال کے پیوپلس اسپتال میں وہ اپنی بیوی کو علاج کے لئے داخل کرانے میں کامیاب تو ہو گئے تو ان کی جان میں جان آئی ۔ بھوپال کے پیوپلس اسپتال میں روحی خان نے ایک پیاری سی بچی کو جنم دیا مگر بچی کی صورت دیکھنے سے قبل ہی روحی خان کی روح پرواز کر گئی ۔

کورونا قہر میں زندگی کتنے عذابوں سے گزرے گی اس کا بیان مشکل ہے ۔ الہ آباد کے راشد خان اپنی بیوی روحی خان کے ساتھ خوشحال زندگی گزار رہے تھے ۔ جب ان کی بیوی حاملہ ہوئی تو انکی خوشیوں کا ٹھکانہ نہیں تھا۔ راشد خان کا یہ نہیں معلوم تھا کہ کورونا قہر میں ان کی خوشیوں کو گہن لگے گا اور ان کے گھر آنے والی نو زائیدہ بچی بھی کورونا کی وبائی بیماری کا شکار ہو گی اور اس کے سرسے ماں کا سایہ اٹھ جائے گا۔

الہ آباد کے راشد خان کی حاملہ بیوی روحی خان کی سترہ دن قبل جب آرٹی پی سی آر رپورٹ پازیٹو آئی تو ان کے ہوش اڑ گئے ۔ بیوی کے علاج کو لیکر راشد خان نے الہ آباد کے نہ جانے کتنے اسپتالوں کے چکر لگائے گئے اور جب انہیں وہاں کسی اسپتال میں بیوی کے علاج کے لئے علاج جگہ نہیں ملی تو انہوں نے مجبور ہوکر مدھیہ پردیش کا رخ کیا۔ راستے کی صعوبتوں کو برداشت کرتے ہوئے سات سو کلو میٹر کا سفر طے کرکے راشد خان بھوپال پہنچے اور جب بھوپال کے پیوپلس اسپتال میں وہ اپنی بیوی کو علاج کے لئے داخل کرانے میں کامیاب تو ہو گئے تو ان کی جان میں جان آئی ۔ بھوپال کے پیوپلس اسپتال میں روحی خان نے ایک پیاری سی بچی کو جنم دیا مگر بچی کی صورت دیکھنے سے قبل ہی روحی خان کی روح پرواز کر گئی ۔ راشد خان کو بیوی کے دنیا سے جانے کا غم تو اپنی جگہ تھا ہی اس پر جب ڈاکٹروں نے بتایا کہ نوزائیدہ بچی کورونا پازیٹو ہے تو ان کی رہی سہی خوشیاں بھی کافور ہوگئیں۔



بھوپال کے پیوپلس اسپتال میں راشد خان کی نوزئیدہ بچی کا کورونا علاج ڈاکٹرریچا راٹھی کی نگرانی میں شروع کیاگیا اور اس معصوم بچی نے سولہ دن میں کورونا سے جنگ جیت لی ۔جب بچی نے سولہ دن میں کوروناسے جنگ جیت لی تو راشد خان ہی نہیں اسپتال اسٹاف کی خوشیوں کا ٹھکانہ نہیں تھا۔ خود بچی اور اس کے والد سے ملنے کے لئے مدھیہ پردیش کے وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن وشواس سارنگ اسپتال پہنچے اور بچی کے صحت مند ہونے پر مبارک باد پیش کی۔مدھیہ پردیش کے وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن وشواس سارنگ کہتے ہیں کہ یہ ہمارے لئے بہت خوشی کی بات ہے کہ الہ آباد میں جسے علاج نہیں ملا تھا اس کا علاج بھوپال میں کیا گیا۔ہمیں افسو س ہے کہ اس کی ماں کی جان نہیں بچائی جا سکی مگر بچی اب صحت مند ہے اوراس کی کورونا رپورٹ نیگیٹو ہے اوروہ اپنے والد کے ساتھ الہ آباد اپنے گھر جا رہی ہے ۔ہمیں خوشی ہے کہ کورونا قہر ہماری حکومت نے صرف مدھیہ پردیش ہی نہیں بلکہ ریاست کے باہر کے لوگوں کو بھی کورونا کا علاج مہیا کرایا ہے ۔اس کا زندہ ثبوت یہ بچی ہے ۔میں اس کے روشن مستقبل کے لئے دعائیں کرتا ہوں۔



وہیں الہ آباد کے راشد خان کہتے ہیں کہ میری چھوٹی سے کائینات تو میری بیوی تک محدود تھی ۔ بیوی پینتس ہفتہ کی حاملہ تھی اور ہم نو زائیدہ بچے کی آمد کو لیکر تیاری کر رہے تھے کہ اسی بیچ میری بیوی روحی خان کورونا پازیٹو ہوگئی ۔ بیوی کے علاج کے لئے ہم الہ آباد میں کہاں کہاں نہیں بھٹکتے مگر کسی اسپتال نے داخلہ نہیں دیا۔ مجبور ہوکر الہ آباد سے بھوپال آئےاور یہاں کے پیوپلس اسپتال میں علاج شروع ہوا۔ ہمیں نہیں معلوم تھاکہ اوپر والا ہم سے ایک خوشی کو چھین کر دوسری خوشی دیگا۔اب اس بچی کی پرورش اور اس کی تربیت ہی میری زندگی کا مشن ہے ۔کیونکہ اس بچی میں ہی میری بیوی روحی کی روح ہے ۔
بھوپال سے مہتاب عالم کی رپورٹ
Published by: Sana Naeem
First published: May 20, 2021 07:11 PM IST