ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

آبی تنازع میں شدت ، مدھیہ پردیش نے گاندھی ساگر باندھ سے پانی کی سپلائی کی بند

مدھیہ پردیش اور راجستھان کے درمیان چمبل نہر سے پانی پر تنازعہ بڑھ جانے کے بعد مدھیہ پردیش نے گاندھی ساگر باندھ سے پانی کی سپلائی بند کردی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Nov 03, 2017 02:35 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
آبی تنازع میں شدت ، مدھیہ پردیش نے گاندھی ساگر باندھ سے پانی کی سپلائی کی بند
مدھیہ پردیش اور راجستھان کے درمیان چمبل نہر سے پانی پر تنازعہ بڑھ جانے کے بعد مدھیہ پردیش نے گاندھی ساگر باندھ سے پانی کی سپلائی بند کردی ہے۔

شیوپور: مدھیہ پردیش اور راجستھان کے درمیان چمبل نہر سے پانی پر تنازعہ بڑھ جانے کے بعد مدھیہ پردیش نے گاندھی ساگر باندھ سے پانی کی سپلائی بند کردی ہے۔پانی کے محکمہ وسائل کے اعلی افسران کے مطابق گزشتہ پندرہ روز سے راجستھان کے معاہدہ کے مطابق مدھیہ پردیش -راجستھان سرحد شیوپور ضلع میں 3900 کیوسک کے مقابلے 2500 کیوسک پانی سنچائی کے لئے دے رہا ہے۔ اس سے شیوپور ، مورینا ، بھنڈ میں کسان پانی کی پریشانیوں میں مبتلا ہیں ۔ یہی نہیں اس سے ربیع کی فصل کو بھی خطرہ لاحق ہے۔

راجستھان باقی پانی اپنے بارہ اور کوٹہ ضلع کے کسانوں کو فراہم کرارہا ہے۔ 30 اکتوبر سے آخری انتباہ کے بعد مدھیہ پردیش نے گاندھی ساگر باندھ سے پانی بندکردیا ہے۔ اس سے راجستھان میں بھی پانی کو لے کر بحران ہے۔ اس کے باندھوں میں 10 سے 12 باندھوں میں سنچائی کا پانی ہے۔ مدھیہ پردیش پانی کے وسائل کے انچارج پنکج اگروال اور وزیر نروتم مشرا بھی پانی کی فراہمی مدھیہ پردیش کو پوری کرنے کے مطالبہ پر بضد ہیں اور اس کا حل نکالنے کی کوشش کررہے ہیں۔

First published: Nov 03, 2017 02:35 PM IST