پیٹل واد دھماکہ کے ایک مہینے بعد بھی اہم ملزم پولیس کی گرفت سے باہر

جھابوا۔ مدھیہ پردیش کے جھابوا ضلع کی پیٹل واد تحصیل ہیڈکوارٹر پر 12ستمبر کی صبح ایک مکان میں جلاٹین دھماکہ کی وجہ سے 89افراد کی موت اور ایک سو سے زائد کے زخمی ہونے کے واقعہ کو ایک مہینہ گزر چکا ہے لیکن مذکورہ واقعہ کا اہم ملزم راجندر کاسوا آج تک پولیس کی گرفت میں نہیں آیا ہے۔

Oct 12, 2015 08:25 PM IST | Updated on: Oct 12, 2015 08:25 PM IST
پیٹل واد دھماکہ کے ایک مہینے بعد بھی اہم ملزم پولیس کی گرفت سے باہر

جھابوا۔ مدھیہ پردیش کے جھابوا ضلع کی پیٹل واد تحصیل ہیڈکوارٹر پر 12ستمبر کی صبح ایک مکان میں جلاٹین دھماکہ کی وجہ سے 89افراد کی موت اور ایک سو سے زائد کے زخمی ہونے کے واقعہ کو ایک مہینہ گزر چکا ہے لیکن مذکورہ واقعہ کا اہم ملزم راجندر کاسوا آج تک پولیس کی گرفت میں نہیں آیا ہے۔ کاسوا کو گرفتار کرنے کے لئے ایس آئی ٹی قائم کی گئی ہے لیکن کاسوا کہاں ہے اس کا اب تک پتہ نہیں چل سکا ہے۔

دوسری جانب آج بھی کئی لاشیں لاوارث ہونے کی صورت میں اندور کے سرکاری ایم وائی اسپتال میں پڑی ہیں جن کی شناخت نہیں ہوپارہی ہے۔ ان کا کوئی دعویدار نہیں پہنچا ہے ۔ پولیس کاسوا کے زندہ یا مردہ ہونے کے تعلق سے پش و پیش میں ہے۔ حالانکہ کاسوا کے رشتہ داروں کی جانب سے اس طرح کا کوئی اشارہ نہیں ملا ہے کہ اس کی موت ہوگئی ہے۔

پیٹل واد میں آج بھی غم کاماحول ہے۔ مرنے والوں کے لواحقین غمزد ہ ہیں تو زخمیوں کے رشتہ دار آج بھی ان کے علاج میں مصروف ہیں۔ گاوں والے مرنے والوں کی روح کے سکون کے لئے یگ اور پوجا پاٹھ کررہے ہیں۔

Loading...

اسی درمیان راجندرکاسوا موسٹ وانٹیڈ مجرم بن گیا ہے جسے پکڑنے کے لئے ریاستی حکومت نے ایک لاکھ روپے کے انعام کو بڑھا کر پانچ لاکھ روپے کردیا ہے۔

Loading...