ہوم » نیوز » Explained

Explained: حکومت نے تو موڈرنا (Moderna) کو دی منظوری، لیکن تاحال عوام کے لیے کیوں نہیں ہے دستیاب؟

نیتی آیوگ (NITI Aayog) کے ممبر اور ہندوستان کی کووڈ 19 ٹاسک فورس کے چیف ڈاکٹر وی کے پال نے گذشتہ ہفتے کہا تھا کہ مرکز موڈرنا کے ساتھ ملک میں اپنے mRNA ویکسین کے اجراء کے لئے سرگرم عمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ فی الحال انہیں کچھ نکات کا جواب دینا ہوگا جو ہم نے بنائے ہیں اور ہم اسے آگے لے جائیں گے۔

  • Share this:
Explained: حکومت نے تو موڈرنا (Moderna) کو دی منظوری، لیکن تاحال عوام کے لیے کیوں نہیں ہے دستیاب؟
موڈرنا ویکسین کی علامتی تصویر۔(shutterstock)۔

کوویکس پروگرام کے تحت موڈرنا (Moderna) ویکسین کی 35 لاکھ خوراکیں ہندوستان بھیجنے کے لئے تیار ہیں۔ تاہم ابھی تک بھی اس کی رسد معطل ہے کیونکہ معاوضے کی شق سے متعلقہ معاملات کو حل کرنے کے لئے بات چیت جاری ہے۔ یہاں آپ کو یہ سب جاننے کی ضرورت ہے۔


طبقاتی کلاس  کیا ہے؟


جب بات منشیات یا ویکسینوں کی ہو تو ایسا امکان ہے کہ سخت ٹیسٹوں کے باوجود وہ نایاب معاملات میں منفی واقعات کا باعث بن سکتے ہیں۔عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کا کہنا ہے کہ ان کی تیاری ، تقسیم اور انتظامیہ میں شامل افراد عام طور پر اس خطرے کو پورا کرنے کے لئے انشورنس حاصل کرسکتے ہیں۔


لیکن کوڈ 19 وبائی بیماری کے غیر معمولی پیمانے اور تیز رفتار ٹائم لائنز کو دیکھتے ہوئے جس کے تحت ناول کورونا وائرس کے خلاف ویکسین وضع کی گئی ہیں اور ان کو تعینات کیا گیا ہے ، ڈبلیو ایچ او کا کہنا ہے کہ عام بیمہ شروع سے دستیاب نہیں ہوگی۔ اس میں مزید کہا گیا ہے کہ اس طرح کی کوریج کی کمی زندگی کو بچانے والی ویکسین تک عالمی سطح پر رسائی کو محدود یا تاخیر کرسکتی ہے کیونکہ مینوفیکچر اگر (اس خطرہ پر توجہ نہ دیئے گئے تو) ان کی فراہمی سے گریزاں ہیں"۔

علامتی تصویر۔(ِShutterstock)-
علامتی تصویر۔(ِShutterstock)-


معاوضہ شق سے یہی مراد ہے۔ بنیادی طور پر مینوفیکچر اس بات پر زور دے رہے ہیں کہ جو ممالک ان کی ویکسینیں حاصل کر رہے ہیں وہ انہیں مصنوعات کی ذمہ داری کے دعووں کے خلاف معاوضہ دیں۔ ڈبلیو ایچ او نے نوٹ کیا ہے کہ 2009 میں H1N1 وبائی بیماری کے وقت بھی ایسی ہی صورتحال تھی۔

معاوضے کا مطلب قانونی چارہ جوئی سے تحفظ اور معاوضے کی ادائیگی کے لئے کسی بھی حاجت سے چھوٹ کی صورت میں اگر کوئی وصول کنندہ ٹیکے لگنے کے بعد کسی منفی واقعے کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

مرکز کا موقف کیا ہے؟

خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق ذرائع نے بتایا ہے کہ موڈرنا کے ساتھ مرکز کی بات چیت ابھی باقی ہے اور معاوضے کے معاملے پر اتفاق رائے ہونا ابھی باقی ہے ، جس کی ایم آر این اے ویکسین پہلے ہی ہندوستان میں ہنگامی استعمال کی منظوری دے چکی ہے۔

اپریل 2021 کے اوائل میں مرکز نے امریکہ ، برطانیہ ، یورپی یونین ، جاپان یا ڈبلیو ایچ او کے ذریعہ ہندوستان میں لگائی جانے والی ویکسینوں کے ٹیکوں کو صاف کردیا تھا۔ تاہم فائزر اور موڈرنہ جیسے مینوفیکچررز کو ہندستان کو فراہمی کے لئے حوصلہ افزائی کرنے کے اس اقدام کے نتائج برآمد نہیں ہوئے ہیں کیونکہ معاوضے کا سوال حل نہیں ہوا ہے۔

ہندوستان نے تینوں ویکسینوں کوویشیلڈ Covishield، کوواکسن Covaxin، اسپوٹنک وی Sputnik V سے کسی کو بھی معاوضہ نہیں دیا ہے جو اس وقت ملک کے کووڈ - 19 ویکسینیشن پروگرام کے حصے کے طور پر استعمال ہورہی ہیں۔

نیتی آیوگ (NITI Aayog) کے ممبر اور ہندوستان کی کووڈ 19 ٹاسک فورس کے چیف ڈاکٹر وی کے پال نے گذشتہ ہفتے کہا تھا کہ مرکز موڈرنا کے ساتھ ملک میں اپنے mRNA ویکسین کے اجراء کے لئے سرگرم عمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ فی الحال انہیں کچھ نکات کا جواب دینا ہوگا جو ہم نے بنائے ہیں اور ہم اسے آگے لے جائیں گے۔

کیا موڈرنا اور فائز کو استعمال کیا جا رہا ہے؟

اطلاعات سے پتہ چلتا ہے کہ فائزر ویکسین کو 96 ممالک میں ہنگامی استعمال کے لئے منظور کیا گیا ہے جبکہ موڈرنا شاٹ کو 63 ممالک میں نافذ کیا گیا ہے۔ ان تمام ممالک میں جہاں یہ ویکسین استعمال کی جارہی ہیں، اطلاعات ہیں کہ انھیں حکام کی طرف سے معاوضہ ملا ہے۔

اس وقت استعمال ہونے والی کسی بھی ویکسین کو ڈبلیو ایچ او کی جانب سے مکمل منظوری نہیں ملی ہے اور ہنگامی طور پر استعمال کی فہرست سازی کے طریقہ کار جس کے تحت یہ تیار کیا گیا ہے ان کو مینوفیکچروں کی ضرورت ہوتی ہے کہ وہ مکمل لائسنس کے قابل بنانے کے لئے اعداد و شمار تیار کرنا جاری رکھیں گے۔

علامتی تصویر۔(ِShutterstock)-
علامتی تصویر۔(ِShutterstock)-


اقوام متحدہ کی صحت کی ایجنسی کا کہنا ہے کہ ای یو ایل کے راستے میں مرحلہ II اور مرحلے III کے کلینیکل آزمائشی اعداد و شمار کے ساتھ ساتھ حفاظت ، افادیت ، معیار اور ایک رسک مینجمنٹ پلان کے بارے میں خاطر خواہ اضافی اعداد و شمار کا سخت جائزہ بھی شامل ہے‘‘۔

مبینہ طور پر ہندوستان کے لئے مختص موڈرنا ویکسین کوووکس اتحاد میں امریکی تعاون کے حصہ کے طور پر فراہم کی جارہی ہیں ، لیکن ملک نے کہا ہے کہ انہیں "زیر التوا قانونی اور ضابطے کی منظوری" کے تحت دستیاب کردیا جائے گا۔

کوویکس اسٹینڈ کیاہے؟
کوویکس کووڈ ۔19 ویکسین گلوبل رسس کا مخفف ہے ، جو ایک بین الاقوامی طریقہ کار ہے جو پوری دنیا میں ویکسین تک منصفانہ اور ضروری رسائ کو یقینی بنانے کے لئے تشکیل دیا گیا تھا۔ اس کی قیادت مشترکہ طور پر وبا سے متعلق تیاری انوویشنز (سی ای پی آئی) گیوی Gavi اور ڈبلیو ایچ او WHO کے ذریعہ کی گئی ہے۔ اس کا مقصد یہ یقینی بنانا ہے کہ تمام شریک ممالک آمدنی کی سطح سے قطع نظر ان ویکسینوں کی تیاری کے بعد ان تک یکساں رسائی حاصل کریں گے۔" کوویکس کا مقصد 2021 کے آخر تک 2 ارب خوراکیں دستیاب کرنا ہے۔

ڈبلیو ایچ او نے نوٹ کیا ہے کہ "کووایکس سہولت کے ذریعہ دستیاب یا خریدی جانے والی تمام ویکسینوں کو ریگولیٹری منظوری یا ہنگامی استعمال کی اجازت مل جائے گی۔ تاہم اس میں مزید کہا گیا ہے کہ COVAX سہولت کے ذریعے کووڈ 19 کی ویکسین وصول کرنے والے ہر ملک کو مینوفیکچررز ، ڈونرز ، تقسیم کاروں ، اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کو ان ویکسین کی تعیناتی اور استعمال سے ہونے والے نقصانات سے ہرجانہ دینا ہوگا۔

تاہم کوواکس اسکیم کے تحت معاوضے کی گنجائش موجود ہے۔ ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ ہنگامی طور پر کووڈ ۔19 ویکسین حاصل کرنے کے بعد ایسے افراد کے لئے جن کو سنگین مضر واقعات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ، ان کے لئے بلا معاوضہ کا میکانزم قائم کیا جائے گا۔ یعنی 92 ممالک میں سے کسی میں جو ایڈوانس مارکیٹ کمٹمنٹ (اے ایم سی) گروپ کا حصہ ہیں ، جو غیر متوقع SAE کا شکار ہیں، وہ کسی بھی شخص کی مکمل اور حتمی تصفیے میں اس واقعہ کے لئے بلا معاوضہ ، وصول کریں گے۔ ہندوستان کو ان 92 ممالک میں شامل کیا گیا ہے جو اے ایم سی کے ذریعہ تعاون کرنے کے اہل ہیں۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: Jul 21, 2021 08:08 PM IST