ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

غیرمسلم مہاجرین سےدرخواست طلب کرنےکانوٹیفکیشن سی اے اے سے متعلق نہیں:مرکزی وزارت داخلہ

مذکورہ نوٹیفکیشن میں غیر ملکیوں کو کسی طرح کی نرمی کی سہولت نہیں دی گئی ہے اور یہ صرف ان غیر ملکیوں پر ہی لاگو ہوتا ہے جو ملک میں قانونی طور پر داخل ہوئے ہیں کیونکہ مرکزی حکومت نے شہریت ایکٹ کی دفعہ 16 کے تحت اپنا اختیار استعمال کیا اور ضلع کو رجسٹریشن یا نیچرلائزیشن کے ذریعہ شہریت دینے کے لئے اپنے اختیارات تفویض کردیئے۔

  • Share this:

مرکز نے پیر کو سپریم کورٹ (Supreme Court) کو بتایا کہ اس نوٹیفکیشن میں گجرات ، راجستھان ، چھتیس گڑھ ، ہریانہ اور پنجاب کے 13 اضلاع میں مقیم غیر مسلموں کو ہندوستانی شہریت (Indian citizenship) کے لئے درخواست دینے کی دعوت دی گئی ہے جس کا تعلق شہریت (ترمیمی) ایکٹ 2019 (Citizenship (Amendment) Act, 2019 (CAA)) سے نہیں ہے۔


وزارت داخلہ امور (Ministry of Home Affairs) نے کہا کہ اسی طرح کے وفد کو مرکزی حکومت نے 2004 ، 2005 ، 2006 ، 2016 اور 2018 میں بھی اجازت دی ہے اور مختلف غیر ملکی شہریوں کے مابین اہلیت کے معیار کے سلسلے میں بھی نرمی کی گئی ہے۔ شہریت ایکٹ 1955 میں درج کیا گیا تھا اور ایم ایچ اے نے حلف نامے میں کہا کہ 28 مئی 2021 کو جاری کردہ نوٹیفکیشن کا تعلق سی اے اے سے نہیں ہے جو سیکشن بی 6 کے تحت دفعہ میں داخل کیا گیا ہے۔ ایم ایچ اے نے حلف نامے میں کہا اور مزید کہا کہ وہ محض مرکزی حکومت کا اختیار سونپنا چاہتا ہے۔


علامتی تصویر
علامتی تصویر


حلف نامے میں کہا گیا ہے کہ زیادہ سے زیادہ اضلاع کے کلکٹروں اور مزید سیٹوں کے ہوم سیکرٹریوں کو شہریت دینے کے لئےاس قانون کی توسیع کے بارے میں ہے۔ مذکورہ نوٹیفکیشن میں غیر ملکیوں کو کسی طرح کی نرمی کی سہولت نہیں دی گئی ہے اور یہ صرف ان غیر ملکیوں پر ہی لاگو ہوتا ہے جو ملک میں قانونی طور پر داخل ہوئے ہیں کیونکہ مرکزی حکومت نے شہریت ایکٹ کی دفعہ 16 کے تحت اپنا اختیار استعمال کیا اور ضلع کو رجسٹریشن یا نیچرلائزیشن کے ذریعہ شہریت دینے کے لئے اپنے اختیارات تفویض کردیئے۔

یہ بیان حلف نامہ جس میں انڈین یونین مسلم لیگ (IUML) کی طرف سے دائر کی گئی درخواست کے جواب میں دائر کیا گیا ہے ، کہا گیا ہے کہ نوٹیفکیشن محض اقتدار کا انتظامی وفد ہے جس میں کسی مخصوص درجہ بندی یا نرمی کے بغیر کام نہیں کیا گیا ہے۔

ایم ایچ اے نے کہا کہ 28 مئی 2021 کا نوٹیفکیشن محض ایسے غیر ملکیوں کی شہریت کی درخواستوں کو فوری طور پر ٹھکانے لگانے کے فیصلے کا ایک عمل ہے کیونکہ اب ہر معاملے کی جانچ پڑتال کے بعد فیصلہ ضلع یا ریاستی سطح پر ہی لیا جائے گا۔ یہ عرض کیا گیا ہے کہ مختلف غیر ملکی شہریوں کے درمیان اہلیت کے معیار کے سلسلے میں جو بھی رعایت نہیں کی گئی ہے جو شہریت ایکٹ 1955 اور اس کے تحت بنائے گئے قواعد کے تحت دی گئی ہے۔ لہذا مخصوص درجہ بندی کرنے میں دفعہ 14 کی خلاف ورزی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ہے۔ اس نے مزید پیش کیا کہ ہندوستان کی شہریت حاصل کرنے کے لئے موجودہ قانون اور طریقہ کار کو کسی بھی طرح سے نامعلوم نوٹیفکیشن کے ذریعے ترمیم کرنے کی کوشش نہیں کی جارہی ہے۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: Jun 15, 2021 11:05 AM IST